Zakham e ishq Novel By Zoya Liaqat – Episode 2

0
زخمِ عشق از زویا لیاقت – قسط نمبر 2

–**–**–

تم سے بات کر رہی ہوں میں کہا تھا کوئی شکایت نہیں ملنی چاہیے۔۔۔ ایک بار پھر وہ حور پر برس پڑی
وہ نظریں جھکائے سب سن رہی تھی
معاف کیجئے صاحب یہ لڑکی پاگل ہے نادانی میں کہہ گئی ہو گی انیلہ لے جائو اسے ڈال دو اسی کمرے میں ۔۔۔
مجھے نہیں جانا وہاں ۔۔۔ وہ یکدم بولی
ایک تو نقصان کر دیا اب مجھ سے زبان لڑا رہی ہو ۔۔۔ اتنے میں انیلہ آ گئی اور حور کو بازوں سے پکڑ کر جانے لگی ۔۔۔
رکیں۔۔۔ ہاشم بول پڑا
اگر وہ نہیں جانا چاہتی آپ کیوں زبردستی کر رہی ہیں ۔۔۔
چھوڑیں بھائی چلیں یہاں سے کوئی فائدہ نہیں ۔۔۔ وہ سب اٹھ کر جانے لگے اور ایک ہاشم سے مخاطب ہوا
لے جائو تم بھی اسے میں آ کر خود پوچھتی ہوں اس لڑکی سے ۔۔۔
ہاشم کچھ بولنے ہی والا تھا کہ فون کی رنگ ٹون بجنے لگی ۔۔۔
نجمہ نے انیلہ کو حور کو لے جانے کا اشارہ کیا
سر وہ فائنل نہیں مل رہی احد کے پاس تھی وہ آج آفس ہی نہیں آیا میٹنگ کنٹینیو کیسے کریں ۔۔۔ ہاشم نے فون کان سے لگایا ۔۔۔
میں آتا ہوں ۔۔۔ہاشم کہہ کر باہر نکل گیا
تم پر ترس کھا کر میں نے وہاں کمرے سے نکلوایا تمھیں مگر تم اسی کے لائق ہو جب بیٹھو گی ناں اندھیرے میں پھر پتا چلے گا کتنا بڑا نقصان کرا دیا تم نے میرا ۔۔۔۔
اب دو دن کھانا بھی نیں ملے گا تمھیں ۔۔۔ لے جائو اور وہیں پھینک دو اسے ۔۔۔
نجمہ بائی وہ صاحب جو ابھی باہر نکلے انہوں نے یہ دیا ہے اور کہا ہے کہ اس لڑکی کو کچھ نہ کہیں ۔۔۔ ایک لڑکی ہاتھ میں چیک لیے اندر آئی اور بولی ۔۔۔۔
چیک پر پانچ لاکھ لکھا دیکھ کر نجمہ کا منہ کھل گیا ۔۔۔ اس نے جلدی سے چیک کھینچا ۔۔۔
اسے اس کے کمرے میں واپس لے جائو کچھ مت کہنا اسے وہ چیک لیے باہر نکلتے ہوئے بولی ۔۔۔
انیلہ اسے لیے واپس کمرے میں چلی گئی اور اسے اندر چھوڑ کر دروازہ بند کر دیا ۔۔۔
حور وہیں بیٹھ گئی اور دل میں شکر ادا کرنے لگی
کیا ہوا تھا بی بی ۔۔۔ نائدہ نے اسے مطمئن دیکھا تو پوچھ لیا
شکر ہے ۔۔۔ وہ بس اتنا بولی ۔۔۔
کیا کہا بی بی ۔۔۔۔ آپ روتے ہوئے گئی تھی اور مطمئن بیٹھی ہیں سب ٹھیک تو ہے ۔۔۔
اللہ انہیں اجر دے گا بہت بڑی مدد کر دی وہ نہیں جانتے بہت بڑا احسان کر گئے ہیں وہ مجھ پر ۔۔۔
نائدہ اسے حیرانی سے دیکھنے لگی۔۔۔

🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹

وہ تیز تیز قدم اٹھاتا ہوا آفس کے میٹنگ روم کی طرف بڑھ رہا تھا ۔۔۔
اس کے پیچھے اسٹاف سے کچھ تین چار لوگ بھی تھے ۔۔۔
دروازہ کھولتے ہوئے وہ روم میں اینٹر ہوئے سب کھڑے ہو چکے تھے۔۔۔۔
سر آپ کو خود آنے کی کیا ضرورت تھی آپ فون کر دیتے ہم ۔۔۔
آج کی میٹنگ رہنے دو کل کنٹینیو کریں گے ۔۔۔ وہ صوفے پر ٹانگ پر ٹانگ چڑھائے بیٹھ کر بولا ۔۔۔
اوکے سر جیسا آپ مناسب سمجھیں۔۔۔ کلائنٹس اٹھ کر چلے گئے ۔۔۔
احد کو فون کرو اس کی وجہ سے میٹنگ مس ہو گئی آج کہاں ہے وہ ۔۔۔
سوری سر میں بتانا بھول گئی تھی احد کی دو دن میں شادی ہے اس لیے وہ بتا کر گیا ہے ۔۔۔
وٹ نان سینس ۔۔۔ وہ فائل تو دے سکتا تھا کہ اس کی بھی شادی ہے ۔۔۔
ہاشم سر احد کا فون ہے ۔۔۔
ہاشم نے فون لے لیا ۔۔۔
سر سوری میں فائل آج ہی بھیج دیتا ہوں ۔۔۔
تمھیں پتا ہے تمھاری وجہ سے میٹنگ مس ہو گئی۔۔۔
سر معاف کر دیں ۔۔۔
ہاشم نے فون رکھ دیا اور باہر نکل گیا ۔۔۔
سر غصے میں کیوں ہیں آج ۔۔۔ رمشہ جو کہ ہاشم کی سیکرٹری تھی اس کے جانے کے بعد دھیمی آواز میں بولی
پتا نہیں کہاں سے آ رہے ہیں بہتر ہو گا آج ان سے دور رہیں ان کے غصے کو جانتی ہو ناں ۔۔۔
رائٹ ایسا کرتی ہوں میں ان کی کوفی لے جاتی ہوں شاید غصہ ٹھنڈا ہو جائے
ڈانٹ نہ کھا لینا مجھے نہیں لگتا اس وقت تمھیں جانا چاہیے وہ غصے میں ہیں ۔۔۔
مجھ پر غصہ نہیں کریں گے ۔۔۔ وہ مسکراتی ہوئی چلی گئی ۔۔
ہاں یہ آسمان سے اتری ہوئی پری ہے ناں نہیں ڈانٹیں گے ۔۔۔
ہاشم ابھی تک حور کے بارے میں سوچ رہا تھا اس کا چہرہ اس کی آنکھوں کے سامنے سے جا ہی نہیں رہا تھا ۔۔۔
اس سے کام تک نہیں ہو رہا تھا اتنے میں رمشہ کوفی لیے اندر آئی ۔۔۔۔
سر آپ کی کوفی ۔۔۔
رکھ دو ۔۔۔ بغیر دیکھے جواب دیا
سر کوئی ٹینشن ہے آپ کو ؟ شیئر کر سکتے ہیں آپ سر ۔۔۔
کچھ نہیں آپ جا سکتی ہیں ۔۔۔۔ وہ اسی لہجے میں بولا ۔۔۔
رمشہ کوفی رکھے چلی گئی ۔۔۔ ایک تو پیار سے کہا اوپر سے تیور دکھا رہے ہیں ۔۔۔ وہ خود سے بڑبڑائی۔۔۔۔

🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹

امی آپ کو لگتا ہے ہم نے حور کو وہاں بھیج کر ٹھیک کیا میرا مطلب کیا یہ سب غلط تو نہیں ۔۔۔
نہیں میں نے ٹھیک کیا میری بیٹی کے حق پر ہاتھ مار رہی تھی وہ منہوس لڑکی ۔۔۔
مگر امی آپ کو لگتا ہے احد مجھ سے شادی کریں گے ۔۔۔
کرے گا تم اسے فون ملائو اور کہو حور کسی لڑکے کے ساتھ بھاگ گئی ہے کارڈ چھپ چکے ہیں شادی کی ڈیٹ سب کو پتا ہے پورے خاندان میں رسوائی ہو جائے گی اس کی ایک ہی راستہ ہو گا ۔۔۔
کونسا راستہ امی ۔۔۔
وہ راستہ تم ہو علیشاء۔۔۔۔
او مائی گاڈ امی آپ گریٹ ہیں ۔۔ میں ابھی فون کرتی ہوں احد کو ۔۔۔
اسلام علیکم ۔۔۔ وہ امی جو فون کی طرف اشارہ کرتے ہوئے بولی اور اسکی ماں اس کے ساتھ آ کر بیٹھ گئی اور اس نے فون اسپیکر پر ڈال دیا
وعلیکم السلام ۔۔۔ اس وقت فون کیا آپ نے سب ٹھیک ہے ؟
وہ مجھے سمجھ نہیں آ رہا میں آپ کو کیسے کہوں وہ حور باجی ۔۔۔۔
کیا ہوا حور کو وہ ٹھیک ہے ناں ۔۔۔۔
علیشاء نے اپنی امی کی طرف دیکھا ۔۔۔
اس کی امی نے ہاں کا اشارہ کیا
حور باجی کسی لڑکے کے ساتھ بھاگ گئی ایک خط چھوڑ گئی ہیں جس میں لکھا ہے کہ وہ یہ شادی نہیں کرنا چاہتی تھی کسی اور سے محبت کرتی ہوں اس لیے اسی کے ساتھ جا رہی ہوں ۔۔۔
احد اپنی جگہ سے اٹھا۔۔۔
ہم بہت شرمندہ ہیں باجی ایسا کریں گی ہمیں نہیں پتا تھا ہم نے کبھی یہ توقع نہیں کی تھی کہ ایسا ہو گا ۔۔۔۔
مگر کارڈ چھپ چکے ہیں سب جانتے ہیں دو دن بعد شادی ہے میں کیا کہوں گا سب سے ۔۔۔
علیشاء کی امی نے فون جلدی سے کھینچا ۔۔۔
بیٹا ہم اگر کسی کام آ سکیں تو خوشی ہوگی ہمیں ۔۔۔ میں شرمندہ ہوں میری بیٹی سوتیلی ہی صحیح پر ایسی حرکت کر کے اس نے بہت غلط کیا ۔۔۔
امی جان پوری فیملی میں رسوائی ہو جائے گی کہ لڑکی بھاگ گئی شادی سے پہلے میں کیا کروں گا۔۔۔
بیٹا اگر تمھیں مناسب لگے تو علیشاء ۔۔۔۔
احد خاموش ہو گیا تھا ۔۔۔
مگر اس وقت رسوائی سے بچنے کا یہی ایک طریقہ تھا ۔۔۔ میں امی سے بات کرتا ہوں آپ شادی کی تیاریاں کریں شادی اپنے مقرر کردہ وقت پر ہی ہو گی ۔۔۔ احد نے فون رکھ دیا ۔۔۔
علیشاء خوشی سے چیخی ۔۔۔
حور تمھاری جگہ کبھی نہیں لے سکتی وہ صرف ایک چیونٹی ہے جسے میں نے مسل دیا ۔۔۔۔ اب وہ تمھارے راستے میں نہیں آئے گی اس کی ماں بھی مر گئی اور نام و نشان مٹ گیا اب حور کا بھی وہی حال ہو گا کب مرے گی کسی کو کیا پتا ۔۔۔
اس کا نام بھی مت لیں امی شادی کی تیاریاں شروع کردیں ۔۔۔۔

🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹

صبح ہوئی انیلہ نے دروازہ کھول دیا۔۔۔
نائدہ سو رہی تھی مگر حور اٹھ گئی تھی ۔۔۔
چل باہر ۔۔۔
حور نے حیرانی سے اسے دیکھا ۔۔۔
چل باہر ۔۔۔
حور اٹھی اور انیلہ نے اس کا ہاتھ پکڑ لیا اور دروازہ بند کر کے ایک طرف چلنے لگی ۔۔۔
حور ڈرتے ہوئے اس کے ساتھ چل رہی تھی ۔۔۔
وہ دل میں دعائیں مانگ رہی تھی ۔۔۔کاش سب ٹھیک ہو ۔۔۔
وہ ایک کمرے میں اسے لے آئی جہاں سب کھانا کھا رہی تھی ۔۔۔چل کھانا کھا لے روز روز تجھے الگ کھانا نہیں دے سکتی میں ۔۔۔
حور ان سب کو دیکھ رہی تھی اور کانپ رہی تھی ۔۔۔ اس وقت وہ ان سب سے الگ جا کر بیٹھ گئی مگر کھانے کو ہاتھ تک نہیں لگایا ۔۔۔۔
انیلہ جا چکی تھی ۔۔۔
لڑکی ۔۔۔تو کھانا کیوں نہیں کھارہی ۔۔۔ نئی ہو کیا ۔۔۔ اس کے ساتھ بیٹھی لڑکی نے کہا
مگر حور نے کوئی جواب نہ دیا ۔۔۔
خوبصورت ہو بہت ۔۔۔ وہ ایک بار پھر بولی اور چور نظروں سے اسے تکنے لگی
حور نے اپنے کھانے کی پلیٹ اٹھائی اور اپنے کمرے کی طرف چلی گئی جہاں نائدہ سو رہی تھی ۔۔
دروازہ کھلنے کی آواز پر وہ اٹھ گئی تھی
یہ لو کھانا کھا لو ۔۔۔ حور نے کھانے کی پلیٹ اس کی طرف بڑھا دی۔۔۔
آپ نے کھا لیا بی بی ۔۔۔
ہاں میں کھا چکی ہوں ۔۔۔ حور نے اس کے ساتھ بیٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
بی بی آپ کو جھوٹ بولنا بھی نہیں آتا آپ کے ہونٹ خشک ہیں ۔۔۔
تم کھا لو مجھے بھوک نہیں ہے ۔۔۔
نائدہ نے پلیٹ اٹھائی اور کھانا کھانے لگی ۔۔۔
ایک بات کہوں بی بی دیکھنا آپ یہاں نہیں رہنا چاہتی آپ بہت جلدی یہاں سے چلی جائیں گی ۔۔۔
کاش ایسا ہو ۔۔۔ میں کب تک خود کو بچاتی رہوں گی ۔۔۔
آپ بہت اچھی ہیں اچھے لوگوں کے ساتھ برا نہیں ہوتا۔۔۔

میٹنگ کے بعد ہاشم سب سے پہلے روم سے باہر نکلا
سر آپ کہیں جا رہے ہیں ۔۔۔ رمشہ اس کے پیچھے آتے ہوئے بولی
ہممم۔۔۔ اس نے چلنا جاری رکھا ۔۔۔
سر آپ کی کوفی۔۔۔
آج رہنے دو ۔۔۔ کہہ کر اس نے کار کی کیز نکالی اور کار میں بیٹھ گیا اور سٹارٹ کر کے کہیں چلا گیا ۔۔۔
تمھیں نہیں لگتا تم بغیر وجہ سر کے پیچھے بھاگتی ہو جب کہ وہ تمھیں لفٹ ہی نہیں دیتے ۔۔۔ رمشہ کی فرینڈ نے اسے پیچھے سے پکارا تو وہ جلدی سے مڑی ۔۔۔
تمھیں غلط لگتا ہے ۔۔۔ وہ الجھ کر بولی
اچھا مجھے غلط لگتا ہو گا پر کل سے وہ کسی کی سوچوں میں گم سم ہیں تم نے نوٹ کیا ۔۔۔
ایسا کچھ نہیں ہے۔۔۔۔ رمشہ نظر انداز کرنے لگی
تم نظر انداز کرو مگر مجھے تو سب دکھائی دے رہا ہے۔۔۔
جسٹ شٹ اپ ۔۔۔ رمشہ اتنا کہہ کر غصے میں چلی گئی ۔۔۔

🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹🌹

وہ نا چاہتے ہوئے کار انہی راستوں پر دوڑا رہا تھا جہاں جانے کے لیے کل اس کے دوستوں نے اس کے آگے کوئی لاکھ بار ہاتھ جوڑے تھے ۔۔۔
کیوں پاگل ہو رہا ہوں میں۔۔۔ ایسا کیا ہو گیا مجھے ۔۔۔ کیوں بار بار سوچ رہا ہوں اسی بارے میں ۔۔۔ خود سے بڑبڑایا اور کار کو بریکس لگائے ۔۔
سامنے وہی سب تھا ۔۔۔ کار سے اترا اور پوکٹ میں ہاتھ ڈالے سامنے کھڑا دیکھنے لگا ۔۔۔
کل کا سارا منظر ایک بار پھر اس کی آنکھوں کے سامنے گھوما ۔۔۔
یہاں دیکھتے ہوئے نظروں کو شرم آتی ہے وہ یہاں کیسے رہ رہی ہو گی ۔۔۔۔ نہ چاہتے ہوئے ۔۔۔اس نے کہا تھا اس کی کوئی مجبوری ہے ۔۔۔ آخر کیا وجہ ہے۔۔۔ کیوں رہ رہی ہے وہ یہاں ۔۔۔ لاکھوں سوال اس کے ذہن میں گردش کرنے لگے ۔۔۔
سوچتے ہوئے اس نے قدم بڑھانے شروع کر دیئے ۔۔۔ ہر قدم پر اسے حور کا خیال آتا گیا اور وہ قدم بڑھاتا گیا ۔۔۔
اس کی نظریں اسے تلاش کر رہی تھی اور باقی سب لڑکیاں اسے دیکھ رہی تھی
وہ بھی کچھ کم نہیں تھا خوبصورت نوجوان تھا گرین آنکھیں وہ کبھی یہاں پھیر کر دیکھتا اور کبھی وہاں پر پھر مایوسی سے رخ بدل لیتا ۔۔۔۔
صاحب آپ یہاں ۔۔۔ نجمہ للچائی ہوئی اسے دیکھ کر خوشامد کرنے آ گئی تھی ۔۔۔
وہ رک گیا۔۔۔
کیسے پوچھتا وہ کیسی ہے مگر آیا تو اسی کا پوچھنے ہی تھا ۔۔۔ وہ لفظ ڈھونڈ رہا تھا کہ کیا کہے ۔۔۔
آپ اسی سے ملنے آئے ہیں ۔۔۔
وہ چونکا ۔۔۔
آئیے میں لے چلتی ہوں آپ کو ۔۔۔
وہ اسے حور کے کمرے کی طرف لے کر بڑھ رہی تھی ۔۔۔
کمرے کا دروازہ کھلا تو حور اور نائدہ چونکی ۔۔۔
پہلے تو نجمہ اندر آئی حور کو حیرت نہ ہوئی پر اسے دیکھ کر وہ جلدی سے اٹھی ۔۔۔
نائدہ حور کو دیکھ کر اٹھی ۔۔۔
جائو تم باہر ۔۔نجمہ نے نائدہ سے کہا ۔۔۔
نائدہ نے حور کی طرف دیکھا حور نے ناں میں سر ہلایا پر نجمہ کی بات نا سننے کا نتیجہ وہ جانتی تھی اور باہر چلی گئی اور نجمہ بھی باہر چلی گئی ۔۔۔
حور دروازے کی طرف بھاگی ۔۔
رکیں ۔۔۔ ڈریں مت ۔۔۔
۔۔۔چلے جائیں یہاں سے ۔۔۔ کک کیوں آئے ہیں آپ یہاں ۔۔۔
میں کسی غلط ادارے سے نہیں آیا دو منٹ بات کرسکتا ہوں آپ سے ؟؟
نہیں میں کسی سے بات نہیں کرتی چلے جائیں آپ ۔۔۔
خوامخواہ ڈر رہی ہیں آپ ۔۔۔
میں نے کہا جائیں آپ ابھی ۔۔۔
میں آپ کی ہیلپ کرنا چاہتا ہوں ۔۔۔
حور نے اس بار اسے دیکھا ۔۔۔
غلط مت سمجھیں ۔۔۔ کل آپ نے خود کہا تھا آپ مجبور ہیں اس لیے میں یہاں آیا ۔۔۔
آپ میری مدد کیوں کرنا چاہتے ہیں ۔۔۔ آج کل کوئی کسی مطلب کے بغیر کسی کی مدد نہیں کرتا آپ کیوں کر رہے ہیں میری مدد ۔۔۔۔۔
وہ تو میں بھی نہیں جانتا ۔۔۔ آپ یہاں کیسے آئی ۔۔۔
اس کا سوال حیران کن تھا حور پریشان ہو گئی تھی
آپ پریشان نہ ہوں میں آپ کو آپ کے گھر پہنچا دوں گا آپ مجھے سب بتائیں ۔۔۔
کیسے کہوں خود گھر والوں نے مجھے ۔۔۔ وہ سوچ کر ہی ڈر گئی ۔۔۔ کیا سوچے گا ۔۔۔ نہیں میں نہیں بتائوں گی ۔۔۔
اوکے مت بتائیں آپ کی مرضی ۔۔۔ وہ واپس جانے کے لیے تیار ہوا ۔۔
رکیئے۔۔۔۔ وہ پیچھے سے بولی ۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: