Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 1

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 1

–**–**–

وہ یونورسٹی سے واپس آکر ابھی پورچ میں کھڑا ہی ہوا تھا۔۔ جب اسے اپنے پیچھے۔۔ ٹیکسی رکتی دیکھاٸی دی۔۔۔۔
۔ اس نے غور سے دیکھنے کے لیے اپنے قدم آگے بڑھاۓ۔۔۔۔۔
اوہ بابا۔۔۔ وہ تیزی سے آگے بڑھا تھا۔۔۔۔
آپ کیسے۔۔۔ یہاں آپ نے بتایا بھی نہیں۔۔۔ وہ ان کے ہاتھ سے بیگ پکڑتے ہوۓ کہہ رہا تھا۔۔۔
ابھی وہ پورچ سے گزرتے ہوۓ۔داخلی دروازے تک پہنچے ہی تھے۔۔ کہہ ایک شور اسے عقب میں سناٸی دیا۔۔۔
تین لوگ آکر اسے گھونسے اور موکے جڑنے لگے۔۔کیا ھوا کون لوگ ہو تم۔۔۔۔ وہ حواس باختہ ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔
یہی حال حیدر وحید کا تھا۔۔۔۔ کیوں مار رہے ہو میرے بیٹے کو۔۔۔۔۔ وہ مسلسل احان کو چھڑوانے کی کوشش کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔
اس کے گھر میں ہے میری بیٹی۔۔۔۔ ان سب میں سے ایک۔۔۔آدمی نے دھاڑتے ہوۓ کہا۔۔۔ لیکن باقی سب۔۔ احان کی ایک بھی بات سنے بنا اسے مارنے میں مصروف تھے۔۔
کیا مطلب بیٹی ہے آپکی۔۔۔۔ حیدر حواس باختہ ہو گۓ تھے۔۔
انھوں نے اپنے بیس سال کے بیٹے کی طرف حیرانی سے دیکھا۔۔۔۔ میرا بیٹا ایسا نہیں ہے۔۔۔۔ سب رک گۓ تھے۔۔۔
کھولو دروازہ ابھی پتہ چل جاۓ گا سب ۔۔۔کھولو دروازہ۔۔۔
ان میں سے ایک آدمی زیادہ جوش میں آگے بڑھا۔۔۔
احان کھولو دروازہ۔۔۔۔ حیدر نے۔۔ گرج دار آواز میں کہا۔۔۔۔ بیس سالہ احان لرز گیا باپ کے خوف سے۔۔۔۔
بابا میں کہہ رہا ہوں نہ اندر کچھ بھی نہیں ہے۔۔۔۔ احان بار بار اپنے باپ کو یقین دلانے کی کوشش کر رہا تھا۔۔۔
کھولو تم۔۔۔۔۔ حیدر نے پھر سے دھاڑنے والے انداز میں کہا۔۔
احان نے جیسے ہی داخلی دروازے کا لاک کھولا۔۔۔
تو حیدر کے پاٶں کے نیچے سے زمین نکل گٸی۔۔۔۔۔
سیاہ چادر میں منہ آدھے سے زیادہ چھپاۓ۔۔۔ ایک لڑکی کھڑی تھی۔۔۔۔۔ جو غالبََ پندرہ۔ چودہ۔۔ سال کے لگ بھگ لگ رہی تھی۔۔۔
انھوں نے خون خار نظروں سے اپنے بیٹے کی طرف دیکھا۔۔۔۔
وہ حواس باختہ کھڑا اس لڑکی کی طرف دیکھ رہا تھا۔۔۔
جو لوگ تھوڑی دیر پہلے احان کو مار مار کے ادھ موا کر رہے تھے۔۔۔
ایک دم سے اس لڑکی پر جھپٹے تھے۔۔۔۔۔ بیغیرت کیاکر رہی تو تین دن سے یہاں۔۔۔۔ لڑکی بمشکل اپنی چادر کو سر سے سرکنے سے بچا رہی تھی۔۔۔۔۔
اطہر اسے بار بار مار رہے تھے۔بتا مجھے کیا کر رہی تھی یھاں ۔۔۔۔
پیار کرتے ہیں ہم۔۔۔ ایک گھٹی سی معصوم سی آواز چادر میں سے نکلی۔۔۔۔
وہ اٹھی اور بھاگتی ہوٸی۔۔ حیدر کے سامنے کھڑی ہو گٸ۔۔۔ میں اور آپ کا بیٹا ایک دوسرے کو پیار کرتے ہیں۔۔۔۔
کیا بکواس کر رہی ہو تم ۔۔۔۔ احان دور کھڑا چیخ رہا تھا۔۔۔ اسکے دونوں بازو دو لڑکوں نے جکڑے ہوۓ تھے۔۔۔۔۔
۔
جھوٹ بول رہی ہے یہ۔۔۔ احان حیدر۔۔ کی آنکھیں کھلی کی کھلی رہ گٸ تھی۔۔۔ میں تو جانتا تک نہیں اسے۔۔۔۔ احان کو سمجھ نہیں آ رہا تھا کہ وہ کرے تو کرے کیا۔۔۔۔ کوٸی بھی اسکی بات کا یقین نہیں کر رہا تھا۔۔۔۔۔ کون تھی وہ اور ایسے کیوں اس پر اتنا بڑا الزام لگا رہی تھی۔۔۔۔
اوروہ تھی کہ اتنا بڑا جھوٹ بول کے رو ایسے رہی تھی جیسے ۔۔۔ سارا قصور احان کا ہو۔۔۔ دوپٹے میں منہ آدھے سے زیادہ چھپا ہوا تھا۔۔ اور مسلسل وہ ناک رگڑ رہی تھی۔۔۔ روتے ہوۓ۔۔۔
حیدر کا رنگ سرخ ہو گیا تھا۔۔۔۔ وہ آگے بڑھے۔۔ اور اپنے بیٹے کے منہ پہ ایک زناٹے دار چماٹ جڑ دیا تھا۔۔۔۔ یہ تربیت کی تھی تمھاری۔۔ کہ تم یہ گل کھلاٶ گےاکیلے رہ کے۔۔۔ احان۔۔ ہل کے رہ گیا تھا ۔۔
با با آپ میرا یقین کریں یہ لڑکی سراسر جھوٹ بول رہی ہے۔۔۔احان چیخ رہا تھا ۔۔ اسے سمجھ نہیں آ رہا تھی آخر کو اسکے ساتھ یہ ہو کیا رہا ہے۔۔۔
احان کے سر پر حیرت کے پہاڑ گر رہے تھے۔۔۔۔ جس لڑکی کو وہ دیکھ آج رہا ہے۔۔ جس کا نام تک وہ نہیں جانتا۔۔۔وہ لڑکی کہہ رہی تھی کہ وہ دونوں ایک دوسرے سے پیار کرتے ہیں۔۔۔ وہ تین دن سے ایک ساتھ ایک گھر میں تھے۔۔۔۔ اور وہ آج نکاح کرنے والے تھے۔۔۔
تم کیوں جھوٹ بول رہی ہو۔۔۔ احان کا سر پھٹنے پہ آ گیا تھا۔۔۔۔ وہ تیزی سے اسکی کی طرف بڑھا۔۔۔ اسے حیدر نے بڑی مشکل سے روکا۔۔
میں تجھے مار دوں گا جان سے بیغیرت لڑکی۔۔۔ اطہر۔۔ غصے میں آ کر اس لڑکی کی طرف بڑھا۔۔۔ اور اسکا گلا دوبوچ ڈالا۔۔۔
چھوڑیں اسے۔۔۔حیدر ۔۔۔ نے اگے بڑھ کے۔۔ لڑکی کو بچایا۔۔
میں ڈی۔سی۔پی۔۔۔ حیدر وحید۔۔۔۔ حیدر نے اپنا ریوالور آگے کیا تھا۔۔۔ ۔۔ سب ڈر کے ایک دم پیچھے ہو گۓ تھے۔۔۔
چھوڑیں اسے۔۔ میں اسی وقت اسکا نکاح اپنے بیٹے سے کرتا ہوں۔۔۔حیدر نے دو ٹوک انداز میں بپھرے کھڑے ۔۔اطہر کو کہا۔۔
آپکا اس سے کوٸی تعلق نہیں یہ ان دونوں کا شرعی حق ہے۔۔۔۔ اپنی مرضی سے شادی کریں۔۔۔
بابا ۔۔۔ بابا۔۔ احان انھیں روکنے کی کوشش کر رہا تھا۔۔۔
بابا میں نہیں جانتا اس لڑکی کو۔۔۔
بکواس مت کرو تم۔۔۔ تم نے ہمارے سامنے گھر کا دروازہ کھولا یہ لڑکی اس میں سے نکلی۔۔۔ یہ کیسے تھی وہاں۔۔۔
بابا میں نہیں جانتا۔۔۔ پر ۔۔۔۔ احان کی بات منہ میں ہی تھی۔۔۔۔اسکے گھر والے کہہ رہے ہیں وہ تین دن سے گھر سے غاٸب تھی۔۔۔۔ حیدر کو ایک لمحے کہ لیے بھی۔۔ احان پر یقین نہیں تھا۔۔۔۔
تم کہاں تھےان تین دن میں حیدر نے خون خار نظروں سے۔۔۔ احان کو دیکھا۔۔۔۔
مہ ۔۔۔مہ۔۔ میں گھر پر تھا بابا۔۔۔ وہ گڑ بڑا ہی تو گیا تھا۔۔۔ شل دماغ تھا۔۔۔ ۔۔
وہ دوپٹے کی اٶٹ سے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔ جو اسے اس وقت کوٸی انسان تو ہر گز نہیں لگ رہی تھی۔۔۔ کوٸی بلا ہی تو لگ رہی تھی۔۔۔ وہ گھر میں موجود کیسے تھی۔۔۔ وہ خود حیرت کے سمندر میں غوطہ زن تھا۔۔۔
اور وہ تھی کہ پر سکون کھڑی تھی۔۔۔ اب تو اسکا رونا بھی تھم گیا تھا۔۔۔۔
وہ سر پکڑ کر رہ گیا۔۔۔ چلو گھر۔۔۔ چلو بیٹی تم بھی۔۔ انھوں نے اس لڑ کی کی طرف دیکھا۔۔۔
وہ جو پہلے ہی حیدر کے پچھے چھپی کھڑی تھی۔۔ جلدی سے ان کے ساتھ چل دی۔۔۔۔
حیدر رکے تھے۔۔ پیچھے کی طرف مڑ کے دیکھا۔۔۔ شام کو نکاح ہے آپکی بیٹی کا میرے بیٹے کے ساتھ۔۔۔۔ اپ لوگ شرکت کریں گے تو مجھے خوشی ہو گی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
با با لیکن۔۔۔ ہانیہ کے ہاتھوں میں پسینہ آ گیا۔۔ تھا۔۔ اسکی جاب کا فرسٹ ڈے تھا۔۔۔ اور وہ اس ہاسپٹل میں ہر گز جانا نہیں چاہتی تھی۔۔۔ جہاں بابا اسے بھیجنے پہ بضد تھے۔۔۔۔۔
ایک خوف سا تھا۔۔۔ اس نے سر پہ دوپٹہ درست کرتے ہوۓ۔۔ کال کاٹی۔۔۔ اور ایک ٹھنڈی سانس لی۔۔۔
ھاں کیا کہتے بابا۔۔۔ سارہ ۔۔ نے ہمدردی سے اسکے کندھے پہ ہاتھ رکھا۔۔۔۔
ہانیہ کی بڑی بڑی انکھیں ۔۔۔اسکے اندر کی گھبراہٹ کی وضاحت دے رہی تھیں۔۔۔
اسکی معصوم سی شکل گھبراہٹ کا شکار تھی۔۔۔۔ بابا کو اس کی بات کیوں سمجھ نہیں آ رہی تھی۔۔۔۔
بار بار اسکی انکھوں کے سامنے وہی رات گزر رہی تھی۔۔۔۔
اس نے اپنے نیچلے ہونٹ کو بے دردی سے کچلا۔۔۔۔۔
سارہ نے اسے اپنے گلے سے لگا لیا تھا۔۔۔ اور اسکے پیچھے تپھکی دے رہی تھی۔۔۔ اگر اس نےپہچان لیا مجھے۔۔۔۔۔۔ ہانیہ کی آواز بہت دور سے آتی ہوٸی محسوس ہوٸی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کیوں اس سیاپے کو پال کے رکھوں۔۔۔۔ کرتے کراتے کچھ ہو نہیں ۔۔۔ یہ جو ایک گھر ہی سب کچھ نہیں ہوتا۔۔۔ ساجدہ اونچی اونچی چیخ رہی تھی۔۔۔۔۔۔
وہ اسکے سامنے سر نیچے کیۓ بیٹھاتھا۔۔۔ پانچ بچے اور یہ مہنگاٸی کا دور۔۔۔اطہر کی کمر ٹوٹنے پر تھی۔۔۔۔
میں کہہ رہی ہوں کرو ہانی کی شادی کوٸی نہیں ۔۔۔ میں بھی جب تمھارے گھر آٸی تھی یہی کوٸی۔۔۔ چودہ پندرہ سال کی تھی میں۔۔۔۔ ساجدہ نے اتنی مکاری سے جھوٹ بولا۔۔۔
لیکن ساجدہ تم یہ بھی تو دیکھو۔۔۔ کہ وہ کتنا بڑا ہے اس سے ۔۔۔ اتنے بڑے بچے ہیں اسکے۔۔۔ اطہر کا دل بیٹی کی محبت میں بولا تھا۔۔۔ ایک پل کے لیے۔۔۔
میں بھی جب آٸی تھی تمھاری بھی ایک بیٹی تھی۔۔۔ وہ چیخ کے بولی تھی۔۔
لیکن میں جوان تھا۔۔۔ میری بیٹی چار سال کی تھی ابھی۔۔۔ وہ گھبرا کے وضاحت دے رہا تھا۔۔ کہ تمھارے ساتھ کوٸی زیاتی نہیں ہوٸی جس کا بدلہ تم میری بیٹی سے لو۔۔۔
بات سنو میری جس طرح کے لچھن ہیں نہ اسکے۔۔ کبھی درختوں پہ چڑھتی ہے تو کبھی دیواریں پھالانگتی ھے۔۔۔ ۔۔ تمھارے ہاتھ سے نکل جاۓ گی۔۔۔۔ ساجدہ ھاتھ کو نچا نچا کے بات کر رہی تھی۔۔۔۔
وہ تو وہ تمھا رے ڈر سے ایسا کرتی ہے۔۔۔ تم جب مارتی ہو اسے تب تب وہ ایسا کرتی ہے۔۔۔۔ اطہر نے اپنی بیوی کی خون خار نظروں سے گھبراتے ہوۓ رک رک کے کہا۔۔۔
اچھا تو وہ چوہیا۔۔۔ میرے خلاف باتیں بھی کرتی تم سے۔۔۔ میں نے کبھی نہیں مارا اس کلموہی کو۔۔۔ غصے سے اس کے منہ سے تھوک نکلنے لگا تھا۔۔۔
میں نے تمہیں دو ٹوک الفاظ میں بتا دیا ہے۔۔۔ اگلے ہفتے۔۔ نزیر اپنے گھر والوں کے ساتھ آ رہا ہے دو جوڑوں میں رخصت کرو ۔۔ اس بوجھ کو۔۔۔ ساجدہ پیر پٹختی باہر نکل گٸی۔۔۔۔
اور اطہر سر نیچے پھینک کے بیٹھ گیا۔۔۔۔
وہ جو چاۓ کا کپ ابا کے لیے لے کر کھڑی تھی۔۔ لرز کے رہ گٸی تھی۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ خوف سے دھڑکتے دل کے ساتھ میٹنگ روم میں داخل ہوٸی تھی۔۔۔۔
وہ آج بھی اتنا ہی خبرو تھا۔۔۔ وہی دل کو دھک کر دینے والی پرسینیلٹی۔۔۔ دس سال پر لگا کر گزر گۓ تھے۔۔۔ بس اسکے چہرے پہ اب سنجیدگی۔۔۔ اور ایک عینک کا اضافہ ہوا تھا۔۔۔۔۔
یہ آپ کے آنے کا وقت ہے ڈاکٹر۔۔ بڑے غصے سے۔۔۔ اپنی پینٹ کی جیب میں ہاتھ ڈال کے سوال کیا۔۔۔
وہ پہلے ہی ۔۔۔اسے اتنے سال بعد دیکھ کے گھبراہی ہوٸی تھی۔۔۔ اس کی بارعب آواز سے جان اور نکل گٸ تھی۔۔۔
سر۔۔۔ سر۔۔۔ سوری۔۔۔ مہ ۔۔۔مہ۔۔ میں آٸیندہ خیال رکھٶں گی۔۔۔
گھبراہٹ سے اسکے ماتھے پہ پسینہ آ گیا تھا۔۔۔۔۔
اسکے سامنے وہ شخص کھڑا تھا جو اس دنیا میں واحد اسکا اپنا تھا۔۔ لیکن اسے کچھ خبر نہیں تھی۔۔۔
وہ بڑی مشکل سے لڑ کھڑاتے ہوۓ کرسی پر بیٹھی۔۔۔ اس نے ہانیہ کو بلکل نہیں پہچانا تھا۔۔۔ لیکن پھر بھی۔۔ اسکے ہاتھوں پہ بار بار پسینہ آ رہا تھا۔۔۔
وہ سب نۓ ڈاکٹرز کو۔۔۔ ہاسپٹل کے ۔۔۔ اصول اور ان کی ڈیوٹیز کے بارٕے میں آگاہ کر رہا تھا۔۔۔ ۔۔
ہانیہ کو کچھ سمجھ نہیں آ رہا تھا۔۔۔ موٹے موٹے آنسو۔۔۔ اسکے ماضی کی تلخ یادوں کی صورت میں ڈگمگانے لگے تھے۔۔۔۔
وہ آہستہ آہستہ ۔۔۔ دھندلا ھو رہا تھا۔۔۔ اور دھندلا۔۔۔
ہانیہ نے ارد گرد دیکھتے ہوۓ ۔۔ اپنے آنسو ہاتھںوں سے بےدردی سے رگڑ ڈالے۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر صاف کروا دیا ہے۔۔ بیٹے۔۔ خیال سے رہنا۔۔ حیدر نے احان کے کندھے پہ تپھکی دی۔۔۔ تمھاری مما کی طبیعت ٹھیک نہیں رہتی۔۔۔ نہیں تو ہم ساتھ رہتے۔۔۔ حیدر کے چہرے پہ پریشانی صاف ظاہر تھی۔۔۔۔
میں چکر لگاتا رہوں گا۔۔۔ انھوں نے مسکرا کہ اپنے بیٹے کو گلے لگایا۔۔۔
احان احمد ۔۔ ساٸنس میں انٹرمیڈیٹ کے۔۔ امتحان میں اعلی نمبروں میں کامیاب ہوا تھا۔۔۔ ۔ اب لاہور کے میڈکل کالج میں اسکا میرڈ بن گیا تھا۔۔۔ اس لیے اسلام آباد سے لاہور اسے آنا پڑا۔۔۔
حیدر نے اسے لاہور میں اپنا گھر ہی صاف کروا کر دیا تھا۔۔۔
اپنی بیوی کی طبیعت کی وجہ سے۔۔ وہ پریشان تھے ۔۔ نہیں تو کچھ دن وہ احان کے ساتھ گزار کے ہی جاتے۔۔۔۔
وہ اپنے بیٹے کے گلے لگے ہوۓ تھے۔۔۔ڈی ۔۔سی۔۔ پی۔۔ حیدر وحید کو آج اپنے بیٹے پہ ناز تھا۔۔۔
وہ اسے ایک بہترین سرجن کی شکل میں دیکھنا چاھتے تھے۔۔۔۔
بابا مما کا خیال رکھیۓ گا۔۔ بیس سالہ احان کو اپنی ماں سے بہت محبت تھی۔۔۔
تم اپنا خیال رکھنا اور دل لگا کر پڑھنا اپنے ماموں کی طرف چکر لگاتے رہنا۔۔۔
حیدر نے۔۔ اسکے ماموں جو لاہور میں ہی مقیم تھے ان کا ذکر کیا۔۔۔
جی بابا۔۔۔ وہ مسکراتے ہوۓ اسکے گال پہ ھاتھ رکھ کے اسے پیار بھری نظروں سے دیکھ رہے تھے۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج اسکی ناٸٹ شفٹ تھی۔۔۔ اسکی جاب کا آج تیسرا دن تھا۔۔ اور ان تین دنوں میں ایک دن بھی ہانیہ کا اس سے سامنا نہیں ہوا تھا۔۔۔ اور وہ اس بات پر شکر شکر ہی کر رہی تھی۔۔۔ آتے ہی اس نے اپنی ڈیوٹی رجسٹر میں چیک کی۔۔۔
اور دل دھک سا رہ گیا۔۔۔۔
آج اسکی ڈیوٹی اسی کے ساتھ تھی۔۔۔ وہ دھڑکتے دل کے ساتھ۔۔۔ اس کے آفس کی طرف بڑھ رہی تھی۔۔۔
مے۔۔۔آٸی۔۔۔کم ان سر۔۔۔۔ اسے اپنی آواز بہت دور سے آتی ہوٸ محسوس ہوٸی۔۔۔
وہ کسی فاٸل کا بغور جاٸزہ لے رہا تھا۔۔۔۔۔
وہ اندر داخل ہوٸی۔۔۔ ایک سوندھی سی مہک نے اسکا استقبال کیا۔۔۔۔۔
جی۔۔۔ بہت بارعب آواز تھی۔۔۔
ہانیہ کے ماتھے پہ پسینے کے ننھے ننھے قطرے نمودار ہو گۓ تھے۔۔۔ اس نے دنوں ھیتھلیوں کو آپس میں جوڑا۔۔۔ ایسے جیسےخود کو خود کا ہی سہارا دیا ہو۔۔۔۔
سر۔۔۔ ۔۔۔۔ وہ۔۔۔ میری۔۔۔ ڈیوٹی ہے آج۔۔۔۔ آپ کے۔۔۔ ساتھ۔۔۔ او۔۔پر۔۔یٹ میں ۔۔۔ اس نے اٹکتے ہوۓ۔۔۔ کہا۔۔۔ اس سے یہاں کھڑا رہنا مشکل ہو رہا تھا۔۔۔
اوکے۔۔۔۔ یور۔۔گڈ ۔۔ نیم۔۔۔ ۔۔ فاٸل سے نظر اٹھاۓ بنا سوال کیا گیا۔۔۔۔
دل بند ھو گیا تھا۔۔۔ اسے ایک دم سے گھٹن کا احساس ہونے لگا۔۔۔ ۔۔ وہ کیسے اسے اپنا نام بتا دے۔۔۔۔
وہاں بھی تھوڑی دیر خاموشی رہی جیسےکہ وہ خود بھول گیا ہو اس سے یہ سوال کر کے۔۔…
ہانیہ ۔۔۔۔ اس نے گھٹی سی آواز میں کہا۔۔۔۔
ایک دم اس نے فاٸل سے سر اٹھایا تھا۔۔۔۔ اسکی طرف دیکھا۔۔۔ ہا نیہ کا دل۔۔ خوف سے بند ہونے والا تھا۔۔۔۔۔
اوکے۔۔ وہ ایک دم سے نارمل ہو گیا تھا۔۔ آپ چلیں ۔۔ میں آرہا ہوں آپ جا کر تیاری شروع کریں پیشنٹ کو تیار کریں ۔۔ میں ابھی پہنچ رہا ہوں۔۔۔۔
وہ ایک دم سے اسکے آفس سے ایسے باہر نکلی تھی جیسےکوٸی قید سے باہر نکلتا ہے۔۔۔۔۔
باہر آکر اس نے اپنے سانس کو بحال کیا۔۔۔
جلدی سے بابا کو کال ملاٸی۔۔۔ ۔۔۔
بابا میری ڈیوٹی لگ گٸ ہے آج ان کے ساتھ۔۔۔ پلیز کچھ کریں۔۔۔ خوف سے اس کی آواز کانپ رہی تھی۔۔۔
کیوں کچھ نہیں ہوتا شاباش جاٶ۔۔۔ بابا کی آواز نے اس کی ساری امیدوں پہ پانی پھیر دیا۔۔۔
اپریشن تھیٹر میں وہ اس سے جو بھی مانگتا وہ کانپتے ہاتھوں سے دے رہی تھی۔۔۔ ۔۔
مس ہانیہ۔۔ کیا مسٸلہ ہے آپ کے ساتھ۔۔۔اسے ہانیہ پہ غصہ آ گیا تھا۔۔۔ ۔۔
آپ چلی جاٸیں باہر۔۔ اس نے ناگواری سے ہانیہ کی طرف دیکھا۔۔۔۔
وہ ساکت کھڑی۔۔۔تھی۔۔ آج دس سال بعد بھی وہ اس پہ ویسے ہی ناگواری دکھا رہا تھا۔۔۔
سناٸی نہیں دیا آپکو۔۔۔ چلی جاٸیں باہر۔۔۔۔ اس نے دانت پیستے ہوۓ۔۔ کہا۔۔۔
باقی سب جو ساتھ تھے سارے خاموش ہو گۓ تھے۔۔۔
ڈاکٹر احان حیدر۔۔۔ کے غصے سے پورا ہاسپتال واقف تھا۔۔۔
وہ تقریباََ دوڑتی ہوٸی لابی میں سے گزری تھی۔۔۔
سعدیہ۔۔ اسکو دیکھ کر اس کے پیچھے آٸی تھی۔۔۔
چپ کرو یار۔۔۔ سعدیہ اسکو چپ کروا رہی تھی۔۔ ڈاکٹر احان ایسے ہی ہیں سڑیل سے کھڑوس کہیں کے۔۔۔۔
وہ ایسا تو نہیں تھا۔۔ اس دن سے پہلے تک۔۔۔ اس نے دل میں سوچا۔۔۔ ۔۔۔۔
وہ کسی سے بات کرتا ہوا اندر داخل ہوا تھا۔۔۔ اس کو دیکھ کر ٹھٹکا۔۔۔
آپ کیوں رو رہی ہیں۔۔۔۔ بڑے غصیلے انداز۔۔ میں پوچھا گیا۔۔۔۔
وہ گڑبڑا گٸ تھی۔۔۔
کہ ۔۔۔کہ۔۔۔ کچھ نہیں سر۔۔۔ اس نے آنکھیں صاف کی۔۔۔
آپ ڈاکٹر ہیں مس ہانیہ۔۔۔ بی بریو۔۔۔ ۔۔ وہ کہتا ہوا باہر چلا گیا تھا۔۔۔۔
بہادر تو میں بہت ہوں۔۔۔ احان حیدر۔۔۔۔ اگر دس سال پہلے یہ بہادری میں نہ دکھاتی۔۔ تو شاٸید آج یہاں اس جگہ پر نا ہوتی۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔
آنکھوں سے آنسو خشک ہو گۓ تھے۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابا پلیزمجھ پہ رحم کریں میں یہ شادی نہیں کرنا چاہتی۔۔۔ مجھے پڑھنا ہے۔۔۔ آنٹی ساجدہ مجھے سکول بھی نہیں جانے دے رہی۔۔۔ وہ پندرہ سال کی معصوم سی ہانیہ۔۔۔ اپنے باپ کے آگے فریاد کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔
اطہر بلکل خاموش کھڑا تھا۔۔۔ ۔۔۔ اپنی بیوی کی وجہ سے۔۔۔ نزیر کے اپنے کاروبار میں شریک کرنے کے لالچ کی وجہ سے۔۔۔ بس وہ خاموش تھا۔۔۔
بولا تو صرف اتنا۔۔۔ ہانی ۔۔۔۔ تو ۔۔۔ بہت ۔۔ خوش رہےگی۔۔ میری گڑیا۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔
وہ تڑپ کے رہ گٸی۔۔۔ یہ ہے وہ باپ جس کے سہارے میری ماں مجھے چھوڑ کے اس دینا سے چلی گٸی۔۔۔۔ ۔۔۔۔
جو اس پندرہ سال کی معصوم سی گڑیا کو۔۔۔ چالیس سال کے آدمی سے بیہانے کو تیار ہو گۓ تھے۔۔۔۔ ۔۔۔۔
وہ دل برداشتہ ہو کر آج پھر۔۔۔ وہیں درخت کی شاخ پہ بیٹھی تھی۔۔۔ چھپ کے۔۔۔ اس درخت کی آغوش میں اسکو بہت اپناٸیت محسوس ہوتی تھی۔۔۔۔ ۔۔۔ یہ درخت انکے لان میں پھیلا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔ جس کی شاخیں ساتھ والے گھر تک بھی پھیلی ہوٸی تھی۔۔۔ جب وہ اس درخت پہ بیٹھتی تھی تو۔۔۔ اسے ساتھ والے گھر کا سارا لان نظر آتا تھا۔۔۔۔ اس گھر میں کوٸی نہیں رہتا تھا۔۔۔ جب وہ زیادہ چھوٹی تھی تو اکثر۔۔ دیوار پھلانگ کے۔۔۔ ان کے لان میں بھی چلی جاتی تھی۔۔۔۔
وہاں گھنٹوں ساجدہ کے ڈر سے بیٹھی رہتی تھی۔۔ پھر ابا کے گھر آنے کے وقت جاتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن آج۔۔۔ وہ لان پہلے کی طرح ویران نہیں تھا۔۔۔ ۔۔ وہاں ایک لڑکا اپنا باٸیک دھو رہا تھا۔۔۔ ۔۔
کانوں میں ھیڈ فون گھساۓ۔۔۔ اونچی آواز میں گانے گاتے ہوۓ ۔۔۔ وہ زندگی سے بھرپور انسان لگ رہا تھا۔۔۔۔۔۔
کتناسکون تھا اس کے چہرے پہ۔۔۔ کوٸی غم نہیں کوٸی فکر نہیں۔ ۔۔ وہ اس سے لگ بھگ کوٸی چھ یا پانچ سال بڑا لگ رہا تھا۔۔۔۔
وہ خوش تھا۔۔ اور وہ اتنی ہی اداس اپنی زندگی سے بیزار۔۔۔
وہ اپنی باٸیک کو چھوڑ کے اب خود پہ پانی ڈال رہا تھا۔۔۔۔ ۔۔
وہ کبھی اپنے منہ پر پانی ڈالتا تو کبھی اپنے کندھوں پہ۔۔۔۔
دونوں کے چہرے بھیگےہوۓ تھے۔۔۔۔
ایک کا پانی سے ۔۔۔۔
ایک کا آنسو سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہے ہانیہ چل نا یار کینٹن چلتے ہیں۔۔ بہت بھوک لگی ہے۔۔۔
وہ وارڈ میں لاسٹ پیشنٹ چیک کر رہی تھی جب ۔۔ سعدیہ اس کے پاس آٸی۔۔۔۔
اچھا چلتے ہیں ۔۔ مجھے ۔۔ میڈیسن تو لکھنے دو۔۔۔ سعدیہ اسکا بازو پکڑ کر کھینچ رہی تھی۔۔۔۔
ایک منٹ مجھے دو۔۔۔۔ کیا ہے ان کو سعدیہ نے اس سے پیپر شیٹ کینچھی۔۔۔۔ اس پر میڈیسن لکھی۔۔۔
یہ لگا دو ۔۔۔ ہانیہ نے بنا دیکھے۔۔۔ کلپ بورڈ۔۔ نرس کے ھاتھ میں تھاما دیا تھا۔۔۔ کیوں کہ سعدیہ اسکا بازو پکڑ کر کھینچ رہی تھی۔۔۔۔
وہ کینٹین پہ کھانے کے بعد بڑے خشگور موڈ میں چاۓ پی رہی تھیں۔۔۔ جب نرس نے آ کر اسکی جان نکال دی۔۔۔۔
میم آپ دونوں میں سے وارڈ نمبر 6 میں کس کی ڈیوٹی۔۔۔۔ تھی۔۔۔۔۔
م۔م۔میری۔۔۔۔۔ ہانیہ گھبرا گٸی۔۔۔۔
میم آپکو ڈاکٹر احان اپنے آفس میں بلا رہے ہیں۔۔۔۔ ایک اور دھماکا۔۔۔۔
وہ خوف سے دھڑکتے دل کے ساتھ۔۔ احان کے روم۔۔ ناک کرتے ہوۓ داخل ہوٸی۔۔۔۔
کمرے کا منظر اس کی سوچ سے بھی زیادہ خوف ناک تھا۔۔۔
احان سرخ چہرے کے ساتھ بیٹھا ہوا تھا۔۔۔ ساتھ دو تین اور سینیر ڈاکٹر کھڑے تھے۔۔۔
جیسے ہی وہ کمرے میں داخل ہوٸی تو۔۔۔ احان دھاڑنے کے انداز میں اس پر برس پڑا۔۔۔۔
آپ کی وجہ سے آج ایک پیشنٹ کی جان جانے والی تھی۔۔۔۔ آپ کس قسم کی ڈاکٹر ہیں ۔۔ آپ کو پتہ بھی ہے آپ کونسی ڈوز دے کر گٸی اسے۔۔۔۔۔
دل تو کر رہا ہے اسی ٹاٸم آپکو فارغ کر دوں ۔۔۔۔ ۔احان نے میز پر طیش میں ہاتھ مارا۔۔۔۔
وہ سہم گٸی۔۔۔۔۔۔ اس کے حلق سے آواز بھی نہیں نکل رہی تھی۔۔۔۔ ہاں آنکھوں میں آنسو ڈگمگانے لگے تھے۔۔۔ بلکل ویسے ہی جیسے آج سے دس سال پہلے۔۔۔۔
فرق صرف اتنا تھا اب اسکی آواز کا دبدبا پہلے سے کہیں زیادہ تھا۔۔۔۔۔
یہ آپ کی لاسٹ وارنگ ہے۔۔۔۔ سنا آپ نے ناٶ گٹ لاسٹ۔۔۔۔
وہ ایک دم جھٹکا لیتے ہوۓ ہوش میں آٸی جیسے کرنٹ لگا ہو۔۔۔۔
اور پھر سر جھکاۓ۔۔۔ باہر نکل گٸی۔۔۔۔۔
احان نے پانی کا گلاس منہ کولگا لیا۔۔۔۔ ایک تو اسے اس لڑکی کا نام برا لگتا تھا۔۔۔ اوپر سے اس کی حرکتیں۔۔۔۔ اس کی دماغ کی رگیں تن گٸی تھیں۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسے لاہور میں آج تیسرا دن تھا ۔۔۔ آج وہ نک سک سے تیار ہو کر ماموں کی طرف جا رہا تھا۔۔۔۔
بار بار ریحم کا خیال اسکا دل گدگدا رہا تھا۔۔۔۔
ریحم اسکے ماموں کی بیٹی تھی۔۔۔۔ احان اور ریحم بچپن سے ایک دوسرے کے ساتھ کھیلتے آرہے تھے۔۔۔اور اب جب احان میڈیکل کالج میں تھا دونوں کی معصوم دوستی نے کوٸی اور ہی رنگ لے لیا تھا۔۔۔ جو بہت حسین رنگ تھا۔۔۔۔ اسے ریحم بہت اچھی لگتی تھی۔۔۔۔
دروازے پہ دستک دے کر احان بار بار اپنے بال درست کر رہا تھا۔۔۔۔
دروازہ ممانی نے کھولا تھا۔۔۔۔ ارے۔۔۔۔۔۔ احان۔۔۔۔ کم ۔۔کم۔۔ وہ محبت سے اسے اندر بلا رہی تھی۔۔۔۔
ممانی کو سلام کرتے ہوۓ اسکی نظریں مسلسل ریحم کو تلاش کر رہی تھی۔۔۔۔
ممانی ریحم دیکھاٸی نہیں دے رہی۔۔۔ اس نے۔۔ ارد گرد نظر دوڑاتے ہوۓ آخر کو اپنے دل کی بات زبان سے کر ہی دی۔۔۔۔۔۔
وہ اوپر اپنے کمرے میں ۔۔۔۔ کچن سے انکی آوز آٸی۔۔۔۔۔۔
وہ تیزی سے سیڑھیاں چڑھتا اوپر آیا تھا۔۔۔۔
وہ کانوں میں ہیڈ فون لگاۓ ڈراٸنگ کرنے میں مصروف تھی۔۔۔۔۔ کھڑکی سے آنے والی مدھم سی ہوا۔۔۔ ریحم کے بال اڑا رہی تھی۔۔۔۔ جن کو وہ بار بار پنسل سے پیچھے کر رہی تھی۔۔۔۔۔
احان تھوڑی دیر تو یونہی ۔۔۔ کھڑا اسکو دیکھتا ہی رہ گیا۔۔۔۔
وہ اس سارے منظر کا سب سے حسین حصہ لگ رہی تھی۔۔۔۔۔
احان کا نیا نیا۔۔۔ جزبات سے بھرا جوان دل دھڑکنے لگا۔۔۔۔
وہ اپنی بے ترتیب دھڑکنیں لے کر ۔۔۔ آگے بڑھا۔۔ اور ریحم کے کان سے ہیڈ فون کی۔۔۔ واٸر نکال دی۔۔۔
ریحم کے چہرے پر خشگوار حیرت تھی۔۔۔۔ ۔۔
تم کب آۓ۔۔۔ احان۔۔۔ وہ خوشی سے چیخ پڑی۔۔۔۔
کب کیا مطلب میں اب لاھور ہی ہوتا ہوں۔۔۔۔ وہ بڑے ریلکس اندز میں۔۔۔ بیڈ پہ ڈھیر ہوا۔۔۔
سچ۔۔۔۔ وہ خوشی سے پاگل ہوٸی۔۔۔۔ مجھے کیوں نہیں بتایا کسی نے کہ تمھارا ایڈمیشن ادھر ہوا ہے۔۔۔۔ وہ خفگی سے بولی۔۔۔۔
تمھیں سرپراٸز دینا چاھتا تھا۔۔۔۔ احان نے اسے ہلکے سے آنکھ ماری۔۔۔۔
ریحم بلش ہو گٸی تھی۔۔۔۔ احان کا دل کیا وہ اس لمحے کو قید کر لے۔۔۔۔
وہ دونوں یونہی کچھ دیر ایک دوسرے کو دیکھتے رہے۔۔۔۔
اور بار بار مسکرا دیتے۔۔۔۔
نیچے آ جاو بچو۔۔۔ چاۓ تیار ہے۔۔۔ ممانی کی آواز پہ وہ چونکا تھا۔۔۔
پھر دونوں ایک دوسرے پہ ہنستے ہوۓ۔۔۔ نیچے آ گۓ۔۔۔۔
ریحم اس کی ۔۔ پہلی۔۔۔ چاہت تھی۔۔۔ اس نے جب ان جزبات کی دنیا میں پہلا قدم رکھا تو۔۔۔ ۔ریحم ہی وہ پہلی لڑکی تھی۔ جو ہر طرح سے اس کے قریب تھی۔۔۔ سو وہ اسی سے اپنے جزبات کا تبادلہ کر بیٹھا۔۔۔
لیکن اسکے نصیب میں کوٸی اور لکھا جا چکا تھا۔۔۔۔ ایک انجان ساتھی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر احان ۔۔۔ آپ سے بات کرنی ہے مجھے۔۔۔۔۔ سعدیہ نے جھجکتے ہوۓ۔۔۔ کوریڈور سے گزرتے ہوۓ ۔۔ احان کو رکا۔۔
جی۔۔۔۔ وہ مختصر بولا تھا۔۔۔۔ وہ ہمیشہ کم ہی بولتا تھا۔۔۔۔
سر آپ نے جوکل ہانیہ کو ڈانٹا۔۔۔ اس میں اس کی کوٸی غلطی نہیں تھی۔۔۔۔۔ وہ رک رک کے بول رہی تھی۔۔۔۔
غلطی سراسر میری تھی۔۔۔.. وہ میڈیسن میں نے لکھی تھی۔۔۔ سعدیہ کا سر جھکا ہوا تھا۔۔۔۔
احان کچھ دیر وہاں رکا۔۔ پھر تیزی سے وہاں سے چلا گیا۔۔۔۔
عجیب بد دماغ انسان ہے یہ۔۔۔ سعدیہ حیران کھڑی تھی۔۔۔۔ کوٸی تو جواب دیتا۔۔۔۔۔ ۔
ہانیہ چپ کر جاٶ نا۔۔۔ میں ڈاکٹر احان کو بتا کر آٸی ہوں ۔۔۔ کہ تمھاری کوٸی غلطی نہیں ہے۔۔۔وہ۔۔ اب ھاسٹل آ گٸی تھی۔۔ جہاں وہ اور سارہ کب سے ہانیہ کو چپ کرانے کی کوشش کر رہی تھیں۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپی مت روٶ۔۔۔ نا۔۔۔ تمنا اس کے پاس بیٹھی تھی اس پورے گھر میں ایک وہی تو تھی اس کی غمگسار۔۔۔۔۔ ۔
اسکی ستیلی بہن۔۔ اسکے ابا کے ساجدہ میں سےتین بچے تھے۔۔۔ دو بیٹاں اورایک بیٹا تھا۔۔۔۔ اپنی ماں کی ہانیہ سے اتنی نفرت کے برعکس۔۔ تینوں ہانیہ سے بہت پیار کرتے تھے۔۔۔ تمنا سب سے بڑی تھی تو وہ۔۔ ہانیہ کے سارے دکھ درد سمجھتی تھی۔۔۔
۔ آج شام نزیر نامی۔۔۔ اس چالیس سال کے آدمی نے ا سے نکاح کے بندھن میں باندھ کےلے کر جانا تھا۔۔۔۔
اس کا رو رو کر برا حال تھا۔۔۔وہ اس دن سے باپ کے پاٶں میں پڑ پڑ کر رحم کرنے کی تلقین کرتی رہی۔۔۔ لیکن وہ ٹس سے مس نا ہوا۔۔۔
اسے کچھ سمجھ نہیں آ رہی تھی۔۔۔ تمنا نے بتایا کہ اماں رات کو اس آدمی سے بات کر رہی تھی کہ وہ ہانیہ کو دبٸی لے جا کر بیچ دے۔۔۔ ۔۔
آپا تم بھاگ جاٶ یہاں سے۔۔۔ پلیز آپا چلی جاٶ یہاں سے۔۔۔۔ وہ گھبرا گھبرا کے بار بار پیچھے مڑ کے دیکھ رہی تھی۔۔ کہ کہیں اس کی ماں نہ آ جاۓ۔۔۔
ہانیہ کے پیروں تلے سے زمین نکل گٸی ابھی تک توصرف وہ یہی سمجھ رہی تھی کہ اس کی شادی کر رہی اس کی ماں پر آج اس پہ انکشاف ہوا تھا کہ۔۔ اسکی ماں نے اسے بیچا تھا۔۔۔
میں کہاں جاٶں گی تمنا۔۔۔ وہ ڈر گٸ تھی۔۔ ھاتھ لرز رہے تھے۔۔۔
آپی کہیں بھی چلی جاٶ۔۔ پر یہاں سے جاٶ اماں بہت گندی ہیں۔۔۔
مہ ۔۔مہ۔۔ میں ساتھ والے گھر چلی جاتی ہوں دیوار پھلانگ کے۔۔۔ اچانک اس کے ذہن میں خیال ابھرا۔۔۔ اپنے اپکو گناہ کی دلدل سے بچانے کے لیے اسے یہی خیال آیا اس وقت۔۔۔۔
آپا تم جاٶ ۔۔ اماں باہر گٸ ہیں شام کی تیاری کے لیے۔۔ میں تمہاری جگہ کمرے کو لاک کر کے بیٹھ جاتی ہوں تم چلی جاٶ۔۔۔ جاٶ جلدی کرو۔۔۔۔
تمنا۔۔ اسےدھکے دینے کی شکل میں۔۔ وہاں سے بھیج رہی تھی۔۔۔
وہ دھڑکتے دل اور لرزتے قدموں کے ساتھ درخت پر چڑھی۔۔ اور ساتھ والے گھر کے لان کی لٹکتی شاخوں کے سہارے۔۔ نیچے اتر گٸی۔۔۔ ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کینٹین میں سعدیہ کے ساتھ بیٹھی تھی۔۔۔ گرم چاۓ کے کپ کے کناروں پہ آہستہ آہستہ انگلیاں پھیرتی ہوٸی۔۔ وہ اداسی سے ماضی سے لے کر اب تک کی اپنی زندگی کی کسی ایک خوشی کے بارے میں سوچے جا رہی تھی۔۔۔ کوٸی بھی تو خوشی نہیں تھی۔۔۔۔۔
۔ آہ۔۔۔۔ ایک ٹھنڈی ۔۔۔ اداسی۔۔ کہ چادر میں لپٹی ہوٸی سانس اس کے درد بھرے سینے سے نکلی۔۔۔۔
احان ۔۔ ڈاکٹر زبیر کے ساتھ داخل ہوا۔۔۔ وہ ایک دم ہانیہ کو وہاں دیکھ کے ٹھٹکا تھا۔۔۔
ہانیہ نے خاموشی سے نظریں جھکا دی تھی۔۔۔
وہ اسکے بلکل سامنے بیٹھا تھا۔۔۔۔ بار بار احان ۔۔ اسکی طرف دیکھ رہا تھا۔۔۔ اسے گھبراہٹ ہونے لگی تھی۔۔۔۔
سعدیہ چلو یہاں سے۔۔۔۔ اس نے سعدیہ سے سرگوشی میں کہا۔۔۔
کیا ہوا۔۔ سعدیہ نے اسکی گھبراہی ہوٸی نظروں کا طعاقب کیا۔۔۔۔۔۔
اوہ اچھا۔۔۔ چلو۔۔۔۔ اٹھو۔۔ وہ دونوں وہاں سے نکل گٸی تھیں۔۔۔۔
یار مجھے ایک بات تو بتاٶ۔۔۔ سعدیہ نے کن اکھیوں سے گھبراٸی ہوٸی ہانیہ کو دیکھا۔۔۔
تم ڈاکٹر احان سے کیوں اتنا گھبراتی ھو ۔۔۔ مانا ۔۔ کہ وہ بہت سٹریک ہیں۔۔۔ لیکن تمہارے چہرے کی تو ہواٸیاں اڑ جاتی ہیں۔۔۔
نہیں نہیں۔۔ تو ۔ وہ گڑ بڑا گٸی تھی۔۔۔۔
کچھ تو ہے۔۔۔ کیا مسٸلہ ہے۔۔۔ وہ بضد تھی۔۔۔
کچھ نہیں میں ایسی ہی ہوں۔۔۔ وہ تھوڑی چڑ گٸ تھی۔۔
اس نے تھوڑے غصے سے کہا۔۔۔
سعدیہ تھوڑا منہ بنا کے خاموش ہو گٸی تھی۔۔۔۔
۔۔ اب کیسے بتاو دوں تمہیں۔۔۔ کہ احان حیدر۔۔۔ میرا کیا ہے۔۔۔۔اس نے دل میں سوچا۔۔۔
اس دنیا میں اب صرف ایک ہی تو رشتہ تھا اسکا۔۔۔
احان حیدر۔۔۔ اسکا شوہر۔۔۔ اسکا سب کچھ ۔۔۔ وہ اس کے نکاح میں تھی۔۔۔ دس سال سے وہ اس شخص کے نکاح میں تھی۔۔۔
جسے کوٸی خبر نہیں تھی۔۔۔۔ ۔۔۔
سب کچھ دھندلا ہو رہا تھا۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: