Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 10

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 10

–**–**–

احان زبیر کو بولتا چھوڑ کے اپنے آفس میں آ گیا تھا۔۔۔
کیسے ۔۔۔۔کیسےدل کو سمجھاٶں۔۔۔ میں جو بھی کر رہا ہوں مجھے یہ سب نہیں کرنا ہے۔۔۔۔ پر۔۔۔ دل تھا کہ۔۔۔ کمبخت کچھ بھی نا ماننے پر بضد تھا۔۔۔
وہ کرسی کو داٸیں باٸیں گھوما رہا تھا۔۔۔ ہمت تو کرنی ہو گی۔۔
پر کیسے۔۔۔
زبیر ۔۔ لے جاۓ گا اسے اور میں ایسے ہی رہ جاٶں گا تڑپتا۔۔۔
دل اسی کو چاہنے پر بضد تھا۔۔۔ اس کے بس میں تو کچھ بھی نہیں تھا۔۔۔۔ پتہ نہیں کب کیسے وہ گھستی ہی چلی گٸی دل میں۔۔۔ اور اس تخت پر جا بیٹھی۔۔ جس پر اس نے آج تک کسی لڑکی کو جگہ نہیں دی تھی۔۔۔
ہمت۔۔۔ہمت۔۔۔۔ احان حیدر۔۔۔
پر وہ تو زبیر کو پسند کرتی ہے۔۔۔۔
اسی طرح کی الٹی سیدھی باتوں کی صورت میں وہ ہر وقت اس کے دماغ پہ چھاٸی رہنے لگی۔۔۔۔
وہ اٹھا اور ہاسپٹل سے باہر چلا گیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ بری طرح گاڑی سے ٹکراٸی تھی۔۔۔ کوٸی اترا تھا گاڑی سے۔۔۔ اور بس پھر سب دھندلہ ہو گیا تھا۔۔۔۔
اب جب اس کی آنکھ کھلی تو وہ کسی ہاسپتال کے بستر پر تھی۔۔۔ ٹانگوں میں تکلیف تھی۔۔۔
کوٸی جھکا تھا اس پہ۔۔۔ کوٸی عورت۔۔۔ مسکراٸی۔۔۔۔
بیٹا۔۔ کون ہو آپ۔۔۔ کہاں سے ہو۔۔۔
ایک دم پھر سے منظر سامنے سے گزر گیا۔۔۔
آہ ۔۔۔۔۔۔میں کون ھوں۔۔۔۔
یہ مت پوچھیں بلکہ یہ پوچھیں کہ میں کیوں ہوں۔۔۔۔۔۔
مجھے نہیں ہونا چاہیے تھا۔۔۔ وہ سوچ کر پھوٹ۔۔ پھوٹ کے رو دی تھی۔۔۔۔ دل تھا کہ کسی لمحہ چین پانے کو نا۔۔ تھا۔۔۔
وہ عورت گھبرا گٸی تھی۔۔۔ پھر وہ نرس کو بلا رہی تھی۔۔۔
سسٹر۔۔سسٹر۔۔۔
اس کے بعد کوٸی سفید کپڑوں میں لڑکی آٸی تھی۔۔۔ جس نے انجکشن لگایا تھا شاٸید ۔۔۔ پر سب دھندلہ سا گیا تھا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہاسپٹل کے معمول کے کام نپٹا کے فارغ ہوا تھا۔۔۔ ۔۔۔
ایسے ہی وارڈز کے راونڈ لیتے ہوۓ اس نے سب جگہ اسے دیکھنا چاہا پر وہ کہیں نہیں تھی۔۔۔ نہ سٹاف روم میں۔۔۔ نہ کہیں اور۔۔۔ جہاں اسے ہونا چاہیے تھا۔۔۔
سسٹر۔۔۔ آپ نے ڈاکٹر ہانیہ کو دیکھا ہے کیا۔۔۔۔ سر وہ اور ڈاکٹر زبیر اوپر والے سٹاف روم کی طرف جا رہے تھے ابھی۔۔۔۔
اوپر والے سٹاف روم میں۔۔۔
وہ تھوڑا حیران ہوا تھا۔۔۔۔
اوپر بھی ایک اضافی سٹاف روم بنایا گیا تھا۔۔۔ لیکن ڈاکٹرز زیادہ طر نیچے والے میں ہی ہوتے تھے۔۔۔۔
پتا نہیں کیا طاقت تھی۔۔وہ سیڑھیاں چڑھتا ہوا اوپر چلا گیا۔۔۔۔
سٹاف روم کے سامنے کھڑے اسکا دل عجیب ہو رہا تھا۔۔۔ گھٹن سی محسوس ہونے لگی تھی۔۔۔۔۔
اس نے داٸیں ہاتھ سے دروازہ اندر کو دھکیلا تھا۔۔۔۔
ہانیہ کے ہاتھ میں ایک چھوٹی سی ڈبی پکڑی تھی۔۔۔ جس میں وہ ایک گولڈ کی رنگ واضح طور پہ دیکھ سکتا تھا۔۔۔
وہ مسکرا رہی تھی۔۔۔ اور پر شوق نظروں سے رِنگ کو دیکھ رہی تھی۔۔۔۔ اس کے بلکل سامنے زبیر کھڑا تھا۔۔۔ جس نے دونوں ہاتھ پیچھے باندھ رکھے تھے۔۔۔۔ اور وہ جھومنے کے سے انداز میں داٸیں باٸیں ہل رہا تھا۔۔۔۔
ایسے لگتا تھا ابھی اسی لمحے پرپوز کیا ہی تھا اس نے ہانیہ کو۔۔۔ اور ہانیہ وہ بھی تو پیار بھری نظروں سے انگوٹھی کا جاٸزہ لے رہی تھی
جیسے ہی احان کمرے میں داخل ہوا تھا۔۔۔ دونوں نے ایک دم اس کی طرف دیکھا۔۔۔
ہانیہ تو تھوڑا سا گھبراٸی تھی۔۔۔ پر زبیر ھنستا ہوا احان کی طرف آیا تھا ۔۔
۔ آ ۔۔۔نا۔۔۔ یار ۔میں تمھیں بتانے ہی والا تھا۔۔۔ زبیر نے احان کے کندھے پہ ہاتھ رکھنے کے لیۓ ہاتھ بڑھایا۔۔۔
جس کو ایک جھٹکے سے دھکا دیا تھا احان نے۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو رہا ہے یہ۔۔۔۔۔۔ ہم۔م۔م۔م۔۔۔ احان کی آنکھوں میں خون اتر آیا تھا۔۔۔
کیا تماشہ ہے یہ۔۔۔ بارعب غصے والی آواز تھی۔۔۔
کیا ہوا احان زبیر اس کی طرف بڑھا تھا۔۔۔ احان نے ھا تھ کے اشارے سے اسے روکا۔۔۔۔
آپ ویسے تو بہت پارسا بنتی ہیں۔۔۔۔ سر پر۔۔۔ یہ ۔۔یہ۔۔۔ دوپٹہ سجاۓ رکھتی ہیں۔۔۔۔ اس نے ناگواری سے اسکے سر پر سجاۓ دوپٹے کو دیکھ کر کہا۔۔۔
دراصل آپ ہیں کیا۔۔۔ یہ کوٸی۔۔۔ ڈیٹ پوانٹ نہیں بنایا ہوا میں نے۔۔۔ احان کا دل کر رہا تھا ہانیہ کا گلا دبا دے۔۔۔۔
احان یہ کیا بکواس کر رہے ہو۔۔۔۔ زبیر پھر سے آگے بڑھا تھا۔۔۔جب کہ وہ تو ساکت کھڑی تھی خوف سے بھری آنکھیں لے کر۔۔
اوہ۔۔ جسٹ شٹ اپ زبیر۔۔۔۔ یہ میرا ہاسپٹل ہے تم دونوں نے اسے پتا نہیں کیا بنا رکھا ہے ۔۔۔ کیا اتنے دن سے میں یہ سب نوٹ نہیں کر رہا۔۔۔۔
یہ سب تماشے کرنے کے لیے پوری دینا پڑی ہے۔۔۔ وہ دانت پیس پیس کہ ہانیہ کو سنا رہا تھا۔۔۔مجھے ایسی بہودہ حرکات اپنے اس ہاسپٹل میں ہر گز نہیں چاہہیے۔۔۔۔ وہ دھاڑنے کے سے انداز میں بول رہا تھا۔۔ اس کی رگیں تنی ہوٸی تھی۔۔۔۔
ہانیہ کا دل بری طرح بھر آیا تھا۔ ۔۔۔ وہ تیز تیز قدم اٹھاتی باہر چلی گٸی تھی۔۔۔۔ آنسوٶں کا ایک گولہ تھا ۔۔۔ جو اٹک کے رہ گیا تھا۔۔۔ ہانیہ کے گلے میں۔۔۔۔ وہ دھواں دھواں ہو گٸی تھی۔۔۔۔
کیا بکواس کری جا رہے ہو ۔۔۔۔زبیر نے آگے بڑھ کے احان کا گریبان پکڑا ہوا تھا۔۔۔
پتہ ہے کس کے بارے میں یہ بول رہے ہو۔۔۔۔ہانیہ ایسی لڑکی نہیں ہے۔۔۔۔ زبیر دانت پیس کر بول رہا تھا۔۔۔۔
احان نے ایک جھٹکے سے اپنا کارلر زبیر کے ھاتھ سے چھڑوایا تھا۔۔۔۔۔
دیکھ چکا ہوں میں وہ کیسی لڑکی ہے۔۔۔۔ بھاری آواز میں دانت پیستے ہوۓ احان نے کہا۔۔۔۔
کیامطلب کیا دیکھا۔۔۔۔۔ زبیر نے۔۔۔ سوالیہ انداز میں کہا۔۔۔ جیسے اس کے حساب سےیہ کوٸی کسی قسم کی معیوب بات نہیں تھی۔۔۔۔
وہی جو تم کر رہے تھے اس کے ساتھ ۔۔۔۔ پرپوز کر رہے تھے اسے۔۔۔۔۔ احان نے غصے میں اپنی آواز کو کم کرنے کی کوشش کی۔۔۔۔
اوہ ۔۔۔میرے خدا۔۔۔ احان میں اسے پرپوز نہیں کر رہا تھا۔۔۔۔
احان نے حیران ہو کہ زبیر کی طرف دیکھا۔۔۔
میں نے سعدیہ کو پرپوز کرنے کے لیے رنگ خریدی تھی۔۔۔ وہ میری بہت اچھی دوست ہے اور سعدیہ کی بھی تو سعدیہ کو دینے سے پہلے۔۔ ایک دفعہ اسے چیک کروا رہا تھا کہ کیسی ہے۔۔۔۔
میرا اور ہانیہ کا ایسا کو ٸی چکر نہیں۔۔۔۔ اور تمھیں کیا۔۔۔ ایسی لگتی وہ کہ وہ میرے جیسے سے سیٹ ہو گی۔۔۔۔ میں اس کا احترام کرتا ہوں دل سے۔۔۔اور سعدیہ کو تو میں دو سال سے پسند کرتا ہوں۔۔۔۔اب اس کی دوست کے ذریعے موقع ملا مجھے کہ میں پرپوز کروں اسے۔۔۔۔
زبیر۔۔۔ ایک سانس میں اسے سب بتا گیا۔۔۔۔
اور اسکے سر پر جیسے۔۔۔حیرت اور شرمندگی کا پہاڑ ٹوٹ پڑا تھا۔۔۔۔۔۔
احان۔۔۔ تم نے بہت غلط کیا ۔۔۔ وہ پہلے ہی تم سے دور بھاگتی ہے۔۔۔۔۔ تم ہو کہ اس کی جان ہی نہیں چھوڑ رہے۔۔۔۔
زبیر سر مارتا ہوا افسوس کے انداز میں وہاں سے نکل گیا۔۔۔۔
اور وہ وہیں پہ بس کھڑا کا کھڑا رہ گیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ روتی ہوٸی ہاسٹل پہنچی تھی۔۔۔۔ سارہ ابھی یونیورسٹی سے واپس نہیں آٸی تھی۔۔۔۔
وہ بری طرح رو دی تھی۔۔۔۔ ۔۔
ہر ظلم تیرا یاد ہے۔۔۔ بھولا تو نہیں ہوں۔۔۔۔ اۓ وعدہ فراموش۔۔۔ میں تجھ سا تو نہیں ہوں۔۔۔۔
احان نے اسے دکھ ہی دیا ہمیشہ ۔۔۔ چوٹ تکلیف۔۔۔ پر وہ تھی کے اسے پوجتی تھی۔۔۔۔۔ پر آج تو اس نے اسکے کردار کی دھجیاں بکھیر دی تھیں۔۔۔
اس نے بابا کا نمبر ڈاٸل کیا تھا۔۔۔۔
دوسری طرف حیدر کی آواز سن کر وہ پھوٹ پھوٹ کے رو دی تھی۔۔۔۔
کیا ہوا ہے ہانیہ۔۔۔ بولو تو سہی۔۔۔ انکی پریشان سی آواز ابھری۔۔۔۔
بابا۔۔۔ مجھے نہیں احان کا دل جیتنا۔۔۔۔ میں نہیں کر پا رہی یہ۔۔۔وہ مجھ سے ہر صورتمیں نفرت کرتے ہیں۔۔۔ چاہیے میں کسی بھی شکل میں ان کے سامنے چلی جاٶں۔۔۔۔
کبھی وہ اپنے آنسو صاف کر رہی تھی اور کبھی۔۔ اپنا ناک۔۔۔
میں ان کے نام کے سہارے ساری عمر گزار لوں گی بابا پر میں۔۔۔ ان کی نفرت نہیں دیکھ سکتی۔۔۔۔
مجھے کل سے ہاسپٹل نہیں جانا۔۔۔۔
اس نے روتے ہوۓ فون بند کر دیا۔۔۔
اور پھر تکیے پہ سر رکھ کے رونے لگی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہاں ہے وہ۔۔۔۔ بدتمیز۔۔۔۔ بیس سالہ احان کے منہ پر حیدر نے ایک تپھڑ مارا تھا۔۔۔ مسز حیدر کے گزر جانے کے بعد آج دو دن بعد انھوں نےیہ بات نوٹ کی تھی۔۔۔ کہہ ہانیہ گھر میں نہیں ہے۔۔۔
ردا نے انہیں سب سچ بتادیا کیونکہ وہ بھی ہانیہ کے یوں گھر سے باہر نکالے جانے کو برا سمجھ رہی تھی۔۔۔
پتہ نہیں وہ بچی کہاں در در کی ٹھوکریں کھا رہی ہو گی۔۔۔۔
تم چلے جاٶ میرے نظروں کے سامنے سےدوبارہ مجھے کبھی اپنی شکل نا دکھانا۔۔۔۔
حیدر نے پریشانی میں۔۔۔ فون ملایا۔
دیکھو ہر جگہ ۔۔۔ تلاش کرو اسے۔۔۔ وہ کسی کو فون پہ ہداٸت دے رہے تھے۔۔۔۔
احان کو اپنے کٸےپہ کوٸی شرمندگی نہیں تھی۔۔۔ وہ آرام سے جا کر اپنی پیکنگ کرنے لگا اسے اب زیب کے پاس جاناتھا باہر پڑھنے۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج دوسرا دن تھا۔۔۔ ہانیہ نہیں آٸی تھی۔۔۔۔ وہ سٹاف روم میں گیا تھا کتنی بار
پر سعدیہ سے یہ پوچھنے کی ہمت نہ ہوٸی کہ۔۔۔ یہ پوچھے کہ ہانیہ کیوں نہیں آ رہی۔۔۔۔
کہیں بھی دل نہیں لگ رہا تھا۔۔۔۔
سعدیہ کے ھاتھ میں وہی رنگ تھی۔۔۔ اسکا مطلب تھا کہ اس نے زبیر کا پرپوزل ایکسپٹ کر لیا ہے۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: