Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 11

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 11

–**–**–

میں کتنا غلط سوچتا رہا۔۔۔جو نظرآتا ہے وہی تھوڑا ہوتا۔۔۔
میں نے ہانیہ کے کردار پہ انگلی اٹھاٸی ہے۔۔۔ وہ۔۔ اپنے دل میں اس کے دکھ کو محسوس کر رہا تھا۔۔۔
اسے ہانیہ کاکرب سے بھرا چہرہ یاد آ رہا تھا۔۔۔
اپنی عزت کی چادر کے ٹکڑوں کو بکھرتے ہوۓ دیکھتی اس کی آنکھیں۔۔۔ یاد آ رہی تھی۔۔۔
اپنی صفاٸی میں کچھ نا بولنے کے لیۓ بھینچے ہوۓاس کے ہونٹ۔۔۔ یاد آ رہا تھے۔۔
کار ڈراٸیو کرتے ہوۓ وہ سوچ رہا تھا۔۔۔۔ بے اختیار اسکے ہاسٹل کے آگے گاڑی روکی تھی اس نے۔۔۔۔
بے مقصد وہاں کھڑا رہا تھا۔۔۔۔ کرتا بھی تو کیا۔۔۔ وہ احان حیدر ۔۔۔ اپنے ہی غرور کو کیسے پاش پاش کرتا۔۔۔ کیسے اسے جا کر کہہ دے کہ وہ
ایک لڑکی کی محبت میں بری طرح گرفتار ہو چکا تھا۔۔۔۔۔
کچھ دیر وہاں کھڑے رہنے کے بعد وہ ۔۔۔ گاڑی آگے بڑھا چکا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے آنکھیں کھولی تھی۔۔۔ سامنے کھڑے۔۔ اس چہرے کو کیسے بھول سکتی تھی۔۔۔ حیدر وحید ۔۔۔ اسکے محسن تھے۔۔۔ وہ فرشتہ تھے جو خدا نے بھیجا تھا اسے شیطان کے کے چنگل سے بچانے کے لیے۔۔۔
انھوں نے شفقت سے ہاتھ پھیرا تھا۔۔۔ ہانیہ کے سر پر۔۔۔۔ اتنی شفقت کا احساس اسے اپنی زندگی میں پہلی دفعہ ہوا تھا۔۔۔
آنسو آ گیے تھے۔۔۔
حیدر کو۔۔ بڑی مشکل سے آج تین دن بعدہانیہ ملی تھی ھاسپٹل سے۔۔
۔ گاڑی کی ٹکر کی وجہ سے اسے چوٹ لگی تھی۔۔
انکل۔۔۔ رونے کی وجہ سے آواز بھر گٸ تھی۔۔۔ ۔۔
نہیں۔۔۔ انکل نہیں۔۔۔ بابا۔۔۔ حیدر نے شفقت سے اس کے سر کو تپھکی کے انداز میں دبایا۔۔۔۔
وہ رودی تھی۔۔۔۔ ہچکی بندھ گٸی تھی۔۔۔۔ بابا۔۔۔۔ بابا۔۔۔۔ وہ بار بار اس الفاظ کو دہرا کے دیکھ رہی تھی۔۔۔ حیدر کا پر وقار چہرہ۔۔ آنکھوں سے جھلکتی۔۔۔ شفقت۔۔۔ خدا کا تحفہ نہیں تھا تو پھر کیا تھا۔۔۔۔
چلو گھر چلنا ہے ۔۔۔ انھوں نے اس کے ہاتھ کو پکڑ کر تپھکی دی تھی۔۔۔
ہانیہ ایک دم چپ سی ہو گٸی تھی۔۔۔ آنکھوں میں درد اور خوف کی ملی جلی کیفیت تھی۔۔۔۔
وہ یہاں نہیں ہے۔۔۔ چلا گیاہے۔۔۔
ہانیہ کے دل کو ایک دم کچھ ہوا تھا۔ کچھ دردسا۔اب بھی ۔۔ اس ظالم کےجانے پہ دل اداس ہوا تھا۔۔۔
میں گھر نہیں جانا چاہتی۔۔۔ اس گھر سے جس سے احان نے اسے نکالا تھا۔۔۔ کیسے چلی جاۓ۔۔۔
آنکھ کا کونا نم سا ہی رہ گیاتھا۔۔۔۔
حیدر نے ہانیہ کا ایڈمیشن کروایا تھا۔۔
۔ وہ سکول جانے لگی تھی۔۔وہ زہین تھی ۔۔۔ ڈاکٹر بننا چاہتی تھی۔۔۔
حیدر نےکبھی اس میں اور ردا میں فرق نہ رکھا۔۔۔ ہاں لیکن اسے گھر نہیں لے کر گیے۔۔۔ اس نے ہاسٹل میں رہ کر پڑھاٸی کی۔۔۔
حیدر اس کی ہر ضرورت پوری کرتے تھے۔۔ ۔۔اس سے ملتے رہتے تھے۔۔۔
احان کے ساتھ ان کی بات ہوٸی تھی۔۔۔ پر انھوں نے اسے یہ ہی کہا تھا وہ نہیں ملی انکو دوبارہ ۔۔ وہ نہیں چاہتے تھے کہ احان اب اور ذہنی ازیت سہے۔۔۔۔
ردا کو بھی یہی پتہ تھا وہ نہیں ملی دوبارہ۔۔۔بس صرف حیدر کو پتہ تھا وہ مل گٸی ہے۔۔۔
اور پھر ۔۔۔ احان پاکستان واپس آیا ۔۔ اس نے اپنا ہاسپٹل بنایا تھا۔۔۔وہ بہترین سرجن بنا۔۔
ہانیہ جب ڈاکٹر بنی تو حیدر نے زبردستی اس کو ادھر جاب کرواٸی۔۔۔ حیدر نے بہت دفعہ ہانیہ سے پوچھا اگر وہ چاہے تو وہ اس کے اور احان کے درمیان علیحدگی کروا دیتے ہیں۔۔لیکن ہانیہ کا کہنا تھا ۔۔ احان چاہیے مجھے ساری عمر نہ اپناٸیں پر میں ان کے ساتھ ہی منسوب رہوں گی۔۔۔
وہ ہانیہ کی یہ ایک واحد ضد کے آگے گھٹنے ٹیکنے پر مجبور ہو گۓ تھے۔۔۔
اب ان کی یہ خواہش تھی کہہ وہ ہانیہ کو پوری طرح بہو کے روپ میں گھر لے آٸیں۔۔۔ اس لیے انھوں نے ہانیہ کا معملا ہمیشہ احان سے چھپا کر رکھا۔۔۔۔
اسے اسی ہاسپٹل میں بھیجا۔۔ کہہ وہ احان کا دل جیت لے۔۔۔۔
پر ایسا کچھ نا ہوا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا نہیں۔۔۔ ایسا نہیں کر سکتی۔۔۔
ہانیہ کا دل دھک سے رہ گیا تھا۔۔ بابا آج پھر علیحدگی کی بات کر رہے تھے۔۔۔
تو پھر جاٶ ہاسپٹل۔۔۔ ایسے مت بیٹھو میں نے اس لیے ڈاکٹر نہیں بنایا تھا تمہیں۔۔ کہ تم ایسے ہاتھ پہ ہاتھ دھر کی بیٹھ جاٶ۔۔۔
بابا مجھے نہیں جانا۔۔۔ آج تیسرا دن تھا۔۔ ہانیہ کی سوٸی وہیں اٹکی ہوٸی تھی۔۔۔
ٹھیک ہے پھر میں کرتا ہوں احان کو کال بتاتا ہوں تمھارا۔۔۔ حیدر نے اسے دھمکایا تھا۔۔۔ وہ نہیں چاہتے تھے وہ اپنا کیرٸر داٶ پر لگا دے۔۔۔
اس سے بات مت کرنا۔۔۔ بلانا مت اسے۔۔۔ اور کیوں ڈرتی ہو ۔۔۔ وہ اس خبیث کا ہاسپٹل نہیں ہے ۔۔۔ تمھارے بابا کا ہے۔۔۔ کل سے جاٶ گی تم ۔۔۔
جی۔۔۔۔ اس نے مختصر جواب دیا تھا۔۔
شاباش میرا بچہ۔۔۔ وہ پرجوش ہو گٸے تھے۔۔۔۔
اس نے کال کاٹ دی تھی۔۔۔ اب وہ سعدیہ کا نمبر ڈاٸل کر رہی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار مجھے نہیں لگتا اب وہ آۓ گی۔۔۔ زبیر نے اس کی طرف دیکھتے ہوۓ کہا۔۔
۔مجھے لگتا ہے کہیں اور اپلاٸی کر رہی وہ۔۔۔
احان بار بار اپنے ھاتھ سے اپنے بال پیچھے کر رہا تھا ۔۔۔۔ کرسی گھوما رہا تھا۔۔۔۔ کیسے اس پل کو واپس لاٶں جس میں غلطی کر بیٹھا ہوں میں۔۔۔ اس کا دل بار بار ۔۔۔ وقت کی گھڑیوں کو موڑنے کی خواہش کر رہا تھا۔۔۔
اسکی بیچینی بڑھتی جا رہی تھی۔۔ اوپر سے وہ یاد اتنا آ رہی تھی۔۔۔کسی چیز میں دل نہیں لگ رہا تھا۔۔۔۔
وہ ہونٹوں پہ بار بار زبان پھیر رہا تھا۔۔۔
احان ۔۔۔ تمہیں ۔۔۔۔۔ہانیہ ۔۔۔۔۔۔سے محبت۔۔۔۔۔۔ ہو گٸی ہے کیا۔۔۔ زبیر جو اس کا کافی دیر سے بغور جاٸزہ لے رہا تھا۔۔۔ رکتے رکتے بولا۔۔۔
احان نے چونک کے دیکھا۔۔۔۔ نہ۔۔نہ۔۔نہیں تو۔۔۔ وہ خجل سا ہو گیا تھا۔۔ پھر ایک دم سے اعتماد بحال کیا۔۔۔
مجھے صرف گِلٹ ہے اور کچھ نہیں ۔۔۔ اس کے ماتھے پہ بل آ گٸے تھے۔۔۔ اس کے بعد۔۔ زبیر نے اور کوٸی سوال نا کیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج بھی وہ بجھا بجھا سا۔۔۔ ھاسپٹل آیا تھا۔۔۔۔۔
جیسے ہی وہ کوریڈور میں داخل ہوا تو سامنے سے وہ جلوہ گر ہوٸی۔۔۔
سبز رنگ کے سادہ سے سوٹ میں وہ اس دنیا کی توہر گز نہیں لگ رہی تھی۔۔۔۔
اوہ۔۔۔۔۔ مارے خوشی کے دل اچھلنے لگا تھا۔۔۔۔ لیکن وہ بے نیازی سے پاس سے گزر گٸی۔۔۔۔ کوٸی خوف نہیں تھا۔۔۔ کوٸی گھبراہٹ نہیں تھی۔۔۔۔
احان حیدر ۔۔۔ اب بس کب تک سیراب کے پیچھے بھاگتی رہوں۔۔۔۔ تمھارا دل پتھر کا ہے جس کو نہ تو میرا بیش بہا حسن ہی پگھلا سکا۔۔۔ اور نہ میری محبت نرم کر سکی۔۔۔ ہانیہ کا دل خون کے آنسو رو دیا تھا۔۔۔ ظالم تھا یہ شخص۔۔۔ مجھے بس اب ساری عمر ایسے ہی چپ چاپ گزار دینی ہے۔۔۔۔
اسے بلاتا ہوں۔۔۔۔ نہیں۔۔۔۔ نہیں۔۔۔
وہ اپنے آفس کی کرسی پر جھول رہا تھا۔۔۔ بے چینی سے۔۔۔۔
پھر انٹرکام اٹھایا۔۔۔۔
پھر رکھ دیا۔۔۔اپنی انگلی کی پوروں سے انکھوں کی بند پلکوں کو سہلایا۔۔۔
کیا مسٸلہ ہے ۔۔۔یار۔۔۔۔ سامنے پڑی فاٸل کو اتنی زور سے ہاتھ مارا۔۔۔ وہ اڑتی ہوٸی ہوا میں گٸی اور پھر ایک زور کی آواز کے ساتھ زمین بوس ہوگٸی۔۔۔۔۔
ڈاکٹر ہانیہ کو میرے آفس میں بھجیں پلیز۔۔۔۔ انٹر کام میں وہ کسی کو کہہ رہا تھا۔۔۔۔
دروازے پہ ہلکی سی دستک کے ساتھ اس کی مدھر سی آواز گونجی۔۔۔۔
مے آٸی کم ان۔۔۔۔
احان کے دل کے شور نے اس کی آدھی آواز ہی سننے دی۔۔۔۔۔
نکالتا ہے نہ تو نکال دے۔۔۔ اچھا ہے بابا کو یہ تو کہنے والی بنوں گی۔۔۔ کہہ اس نے نکال دیا ہے۔۔۔ ہانیہ خاموشی سے اسکے بلکل سامنے والی کرسی پہ بیٹھ گٸی تھی۔۔۔
تین منٹ اسے یہاں بیٹھے ہوۓ ہو گٸے تھے لیکن مکمل خاموشی تھی۔۔۔۔۔۔
کیا ہے۔۔۔۔ ہانیہ نے ہونٹوں کو نچلے دانت کے نیچے دبایا ۔۔۔ اور چھت کی طرف دیکھتے ہوۓ ارد گرد نظر کو گرایا۔۔۔۔
مجھے۔۔۔۔۔۔
۔۔ احان کی آواز سے سکوت ٹوٹا تھا۔۔۔۔
میں۔۔۔۔ میرا ۔۔۔۔ مطلب ہے۔۔۔۔ مجھے ایسےنہیں کرنا چاہیے تھا اس دن۔۔۔
بڑی بمشکل سے وہ کہہ پایا تھا۔۔۔
ہن۔۔۔۔ بس۔۔ ۔۔ ہانیہ نے دل میں سوچا۔۔۔
پھر خاموشی۔۔۔۔
اس طرح معافی مانگتے ہیں کیا۔۔۔۔ ہانیہ نے دل میں سوچا ۔۔۔ وہ احان کی طرف نہیں دیکھ رہی تھی۔۔۔
کیونکہ جانتی تھی اس پتھر کے صنم پہ اگر ایک بھی نظر ڈال بیٹھی۔۔۔ بس دل کی محبت کا لاوا۔۔ نفرت کی یہ فرضی سی دیوار کو پاش پاش کر کے۔۔۔ پھر سے دل کی اندر بہنے لگے گا۔۔۔
اٹس ۔۔۔ اوکے۔۔۔ اب میں جاٶں ۔۔۔ یا کچھ اور بھی کہنا ہے۔۔۔
پہلی دفعہ وہ احان کے ساتھ اتنی سختی سے بات کر رہی تھی۔۔۔
وہ اپنی جگہ سے اٹھی۔۔۔ مڑی۔۔۔
اور تھینکیو۔۔ ۔۔۔ احان کی آواز اسکے عقب سے آٸی۔۔۔۔
تھینکیو کس بات کا۔۔۔ اس نے رخ موڑے بنا۔۔ کہا تھا۔۔
واپس آنے کا۔۔۔ اور وہ کبھی اتنے نرم لہجے میں اس سے نہیں بولا تھا۔۔۔
میں اب یہاں صرف اپنے لیۓ آٸی ہوں۔۔۔۔ وہ مختصر سا جواب دے کر باہر نکل آٸی تھی۔۔۔
آج اسے نہ تو ڈر لگا تھا۔۔۔ اورنا ہی خوف سے وہ کانپی۔۔۔
وہ اسے حیران سا چھوڑ گٸی تھی۔۔۔۔
دونوں۔۔ ہاتھ میز پر رکھ کے اس پر احان نے سر رکھ دیا تھا۔۔۔
میں نے اسے قریب کرنے کے بجاۓ اور دور کر دیا ہے۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: