Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 12

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 12

–**–**–

وہ رجسٹر پر لگی اپنی ڈیوٹی کو آنکھیں پھاڑ پھاڑ کر دیکھ رہی تھی۔۔۔
پھر غصے سے کاٶنٹر۔۔ پر لگے فون سے زبیر کا نمبر ملایا۔۔۔
ڈاکٹر زبیر ۔۔۔ میری ڈیوٹی ۔۔ احان کے ساتھ لگا دی ہے پھر۔۔۔ وہ غصے میں روہانسی سی ہو رہی تھی۔۔۔
آ۔۔ہاں۔۔۔ چلو۔۔ میں دیکھتا ہوں۔۔ تم پریشان نہ ہو۔۔۔
۔۔ ٹھیک ہے۔ ہانیہ نے پرسوچ انداز میں رسیور رکھ دیا۔۔۔
احان اب میں مزید آپکا سامنا نہیں کر سکتی۔۔۔ ۔۔لیکن کیا کروں۔۔ آپ کے بنا جینے کا تصور بھی۔۔۔ گھٹن کا احساس دیتا ہے۔۔۔۔
وہ بوجھل قدموں سے سٹاف روم کی طرف۔ چلی گٸی۔۔۔
سعدیہ ۔۔دیبا کی جگہ آنے والی نٸی ڈاکٹر سے باتیں کر رہی تھی۔۔۔
سر۔۔۔ کل ڈاکٹر احان نے ڈیوٹی رجسٹر منگوا لیا تھا۔۔ آٸی تھنک۔۔ انھوں نے ڈیوٹیز اساٸین کی ہیں۔۔۔
زبیر ہانیہ کی ڈیوٹی چینج کروانے گیا تو ۔۔ اسے وہاں سے پتہ چلا۔۔۔۔
آ۔۔ ھاں۔۔۔ تو جناب ۔۔۔ کہتے ۔۔ہیں ۔۔ صرف گلٹ ہے ان کو۔۔۔ زبیر کی آنکھیں شرارت سے چمک اٹھی تھی۔۔۔۔
وہ اپنی ہنسی کو دباتا۔۔ اس کے آفس کے دروازے پہ دستک دے رہا تھا۔۔۔
احان نے جھکا ہوا سر اٹھایا۔۔۔
ہم۔۔م۔۔۔م۔۔۔ آٶ۔۔۔ بہت مصروف سی شکل میں کہا۔۔۔
زبیر بلکل سامنے۔ لگی کرسی پر بیٹھ کے جھولنے لگا۔۔۔۔ بڑی معنی خیز مسکراہٹ تھی اس کے ہونٹوں پر۔۔۔۔ ۔۔۔
احان نے کچھ دیر اس کے بولنے کا انتظار کیا۔۔۔ پر وہ اسی طرح شرارت بھری نظروں سے اسے دیکھے جا رہا تھا۔۔
کوٸی خاص۔۔۔ تکلیف۔۔۔ ۔ احان نے حیرانی اور چڑ کے ملے جلے تاثر میں کہا۔۔۔
زبیر نے ایک زور دار قہقہ لگایا تھا۔۔۔۔۔ وہ اتنا ہنس رہا تھا کہہ اس کی آنکھوں میں پانی آ گیا۔۔۔
اب بکواس کر بھی چکو۔۔۔۔ احان کو اس کی اس حا لت پر اب غصہ آنے لگا تھا۔۔۔۔
جناب۔۔۔ جناب۔۔۔ زبیر نے شرارت سے اپنی ھنسی کو بمشکل روکا ۔۔۔
مان جا یار۔۔۔ وہ میدان فتح کر گٸی ہے۔۔۔ زبیر نے آنکھ دباٸی۔۔۔۔
کون۔۔۔ احان نے انجان بننے کی کوشش کی۔۔۔
وہی جس کے ساتھ تو نے جان بوجھ کے ڈیوٹی لگاٸی ہے۔۔۔۔
احان تھوڑا گڑ۔۔بڑا سا گیا۔۔۔
ایسا کچھ بھی نہیں ہے۔۔۔۔۔ وہ سیٹ سے اٹھا اور اپنا واٸٹ کوٹ بازو پر ڈالا۔۔۔۔
ٹھیک ہے۔۔۔ ایسا تو ایسا سہی۔۔۔ زبیر نے کندھے اچکاۓ۔۔۔
میرے بھاٸی۔۔۔ وہ تمھارے ساتھ ڈیوٹی کرنے سے انکار کر چکی ہے۔۔۔۔ زبیر نے کھڑے ہو کر اس کے کندھے پر ہاتھ رکھا۔۔۔
اور اسے۔۔ صرف میں ہی آمادہ کر سکتا۔۔۔ زبیر نے شرارت سے آنکھ دباٸی۔۔۔۔
نہیں کوٸی ضرورت نہیں میں اپنا معاملا خود ہینڈل کر سکتا ہوں۔۔۔ احان نے زبیر کا ہاتھ ۔۔۔ اپنے کندھے سے نیچے ہٹایا۔۔۔
اوہ۔۔۔ ہو۔۔۔۔ اپنا معاملا۔۔۔ واہ ۔۔ جناب۔۔۔ زبیر پھر سے ہنسنے لگا تھا۔۔۔۔
اور بات سن ذرا۔۔۔ مجھے بہت پہلے سے شک تھا تم پر۔۔ اس دن کوٸی کار وار خراب نہیں تھی تیرٕی۔۔۔۔ زبیر کی شوخی اور شرارت کم ہونے کا نام ہی نہیں لے رہی تھی۔۔۔
اور میرے یار ۔۔۔ یہ محبت کمبخت چیز ہی ایسی ہے۔۔۔۔ تم جیسے کتنے۔۔ سورماٶں کو ڈھیر کر چھوڑا اس نے۔۔۔۔ وہ پھر سے ہنس رہا تھا۔۔۔
اب میں جانا چاہتا ہوں۔۔۔ مجھے جگہ دے۔۔۔ زبیر تو آج دروازہ ہی نہیں چھوڑ رہا تھا۔۔۔ ۔
آۓ ہاۓ اتنی جلدی۔۔۔۔ چل بول تو ذرا میری کوٸی مدد چاہیے۔۔۔ وہ زیادہ ہی شوخا ہو رہا تھا۔۔۔
احان کے لب بھی بلآخر مسکرا اٹھے تھے۔۔۔۔
کیا چیز ہے تو۔۔۔۔ احان کو ہنسی آنے لگی تھی۔۔۔
ہاں ۔۔۔ ہو گٸی ہے محبت۔۔۔ وہ۔۔ مسکرا کے بولا تھا۔۔۔ آنکھیں چمک رہی تھیں۔۔۔۔
تو پھر۔۔۔ تیاری پکڑ۔۔۔ وہ عام ۔۔ لڑکیوں جیسی نہیں ہے۔۔۔ بہت ہی پرسرار سی لڑکی ہے اس کا دل جیتنا بہت مشکل ہے کسی کو گھاس نہیں ڈالتی ۔۔۔زبیر نے اسے گلے لگا کر پر جوش انداز میں کہا۔۔۔
احان ۔۔ حیدر ۔۔۔ کسی عام لڑکی پر مر بھی نہیں سکتا۔۔۔ اس نے اب زبیر کے انداز آنکھ دباٸی ۔۔۔
دونوں نے قہقہ لگایا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
احان اندرداخل ہوا تھا۔۔۔ سب وارڈز کے راونڈ پر جا چکے تھے۔۔۔
وہ اکیلی ہی بیٹھی ہوٸی تھی۔۔۔ اس پر ایک نظر ڈال کے۔۔ اس نے فوراََ نظروں کا رخ موڑ لیا۔۔۔
وہ اس کے سر پر آکر کھڑا تھا۔۔۔ اور اسے دیکھے جا رہا تھا۔۔۔ سرمٸ رنگ کے سوٹ میں اسکا دمکتا ہوا رنگ اور نکھرا نکھرا سا لگ رہا تھا۔۔۔
کیسا ٹھنڈک کا احساس تھا۔۔۔ احان کا دل کر رہا تھا بس اسے دیکھے جاۓ
وہ صوفے پہ بیٹھی تھی۔۔۔ احان بلکل اسکے آگے سینے پر ہاتھ باندھے کھڑا تھا۔۔۔
چلیں۔۔ راونڈ پہ جانا ہے۔۔۔ ۔۔ احان نے خاموشی توڑی۔۔۔۔
مجھے نہیں جانا۔۔۔ تھوڑی سختی لاتے ہوۓ کہا۔۔۔
ڈاکٹر زبیر۔۔۔ گٸے ہیں میری ڈیوٹی چینج کروانے۔۔۔
احان نے اپنی مسکراہٹ دباٸی۔۔۔
۔ شکر ہے اس واقع کے بعد محترمہ میرے ساتھ نارمل تو ہوٸیں نہیں تو ہر وقت گھبراٸی سی ہی رہتی تھی۔۔۔۔ وہ اس کے اس انداز کو انجواۓ کر رہا تھا۔۔۔
ویسے تو آپ نےکل کہا کہ آپ یہاں صرف۔۔ اپنے فرض کی خاطر آٸی ہیں ۔۔۔ تو میں بھی تو آپکو۔۔ اپکی ڈیوٹی کا ہی کہہ رہا ہوں۔۔۔ اب وہ چاہے کسی کے ساتھ بھی ہو۔۔۔
ٹھیک ہے۔۔۔ ہٹیں پھر آگے سے۔۔۔ وہ سختی سے بولی۔۔۔ احان ھنستے ہوۓ پیچھے ہوا۔۔۔
کیسا ظالم انسان ہے ۔۔۔ میری اتنی تزلیل کرنے کےبعد بھی اس کو کوٸی احساس نہیں۔۔۔
اسے حیرت ہو ٸی اس کی ڈھٹاٸی پر۔۔۔۔
وارڈ میں راونڈ لگاتے ہوۓ بھی۔۔۔ وہ پریشان ہی رہی۔۔۔ احان کی نظروں سے۔۔۔
کیا ہے کیوں ایسے دیکھے جا رہے مجھے۔۔۔۔ ۔۔ اب کیا مصیبت ہے کونسی غلطی سرزد ہو گٸی ہے۔۔۔
وہ راونڈ کے بعد سٹاف روم کی طرف جا رہی تھی اور شکر کر رہی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہاسپٹل آج دیر سے پہنچی تھی۔۔۔ سٹاف روم میں آٸی تو ۔۔۔
سعدیہ اور مریم۔۔۔۔۔ کسی بات پر ہنس رہی تھیں۔۔۔۔
مریم کو دیبا کی جگہ پر آۓ۔۔ ابھی کچھ ہی دن ہوۓ تھے۔۔۔
ہوا کیا ہے ۔۔۔ تم دونوں کو۔۔۔ وہ صوفےپر ڈھنے کے سے انداز میں بیٹھی۔۔۔
ہماری یہ ڈاکٹر مریم جی۔۔۔ ڈاکٹر احان پر مر مٹی ہیں۔۔۔۔ سعدیہ نے۔۔ سیبب کا کش منہ میں رکھتے ہوۓ کہا۔۔
ہانیہ کا دل ایک دم سے غیر ہوا۔۔۔
اس نےمریم کا بغور جاٸزہ لیا۔۔۔ وہ جدید فیشن سےلیس لڑکی تھی۔۔۔ کوٸی دوپٹہ نہیں تھا۔۔۔ جینز پر گھٹنوں سے نیچے آتی ہوٸی شرٹ ۔۔ میک اپ سے اٹا ہوا سٹاٸلش سا چہرہ۔۔۔
یہ ۔۔۔یہ۔۔۔ جو آپ سر پہ دوپٹہ سجاۓ پھرتی ہیں۔۔۔۔احان کی کہی ہوٸی بات۔ ۔۔۔ اس کے دماغ میں ہتھوڑے کی طرح لگ رہی تھی۔۔۔۔
اس کے دل میں ٹیس سی اٹھی۔۔۔ اور وہ لمحہ یاد آیا جب اس نےریحم کو دیکھا تھا۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: