Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 14

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 14

–**–**–

ساحل پہ کھڑے ہو تمہیں کس بات کا غم۔۔۔۔ چلے جانا۔۔۔۔
میں ڈوب رہا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ڈوبا تو نہیں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اۓ وعدہ فراموش۔۔ میں تجھ ساتو نہیں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔
سسکیٶں کی مسلسل آواز سے سارہ کی آنکھ کھلی تھی۔۔۔۔
اس نے اپنے ارد گرد دیکھا۔۔۔۔ اوہ۔۔۔ ہانیہ۔۔۔ رو رہی تھی۔۔۔
اپنے باٸیں ہاتھ سے سا!ٸیڈ لیمپ آن کیا تھا۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔۔ ہانیہ۔۔۔ وہ اس کے قریب ہوٸی تھی رونے کی آواز اور اونچی ہو گٸی تھی۔۔۔۔
کیا ہوا ہانیہ۔۔۔۔ کیا کیا ہے اب احان نے۔۔۔۔ سارہ کو پتہ تھا وہ جب بھی روٶٸی صرف اس ایک شخص کے ظلم پر ہی روٸی تھی۔۔۔۔۔۔
ہانیہ ۔۔۔۔۔اس نے ہانیہ کو بہت پیار سے گلے لگایا تھا۔۔۔۔
سارہ۔۔۔ وہ کبھی۔۔۔ میرا نہیں ہو گا۔۔۔۔ رو رو کے اس کی آنکھوں کے پوٹے سوجے پڑے تھے۔۔ پلکیں آنسوٶں کی وجہ سے ایک دوسری سے چپکی ہوٸی تھی۔۔۔۔
ہانیہ ۔۔ ہواکیا ہے اب۔۔۔ ایک تو تم اس ظالم سے محبت ہی اتنی کرتی ہو۔۔۔۔ میں تمھاری جگہ ہوتی تو کب کی چھوڑ دیتی ایسے انسان کو۔۔۔ سارہ سے ہانیہ کی حالت دیکھی نہیں جا رہی تھی۔۔۔۔
کہنا بہت آسان ہے ۔۔۔ سارہ۔۔۔۔ اس کو چھوڑنے کے تصور سے بھی مجھے خوف آتا ہے۔۔۔ آنسو تھے کے تھمنے کانام نہیں لے رہے تھے۔۔۔۔
اب کیا ہوا ہے۔۔۔۔
احان کو ڈاکٹر مریم پسند آ گٸی ہے۔۔۔۔ ۔وہ اب ہر وقت بس اسی کے ساتھ ہوتے ہیں ۔۔۔۔الٹی ھتیلی سے وہ بچوں کی طرح آنسو صاف کر رہی تھی۔۔۔۔
سارہ وہ سارا دن ۔۔۔۔ اس۔۔۔ چڑیل کے ساتھ گھومتے ہیں۔۔۔۔ میرا دل کرتا ہے ۔۔۔ جاوں اور اس کو گریبان سے پکڑ کر کہوں۔۔۔۔
تم صرف میرے ہو احان حیدر۔۔۔
میں نے تمہیں ۔۔۔ مانگا ہے راتوں کو اٹھ اٹھ کے تہجد میں۔۔۔۔
اور میں کسی ناجاٸز محبت کو نہیں۔۔۔۔ اپنے شوہر کی محبت ما نگتی رہی۔۔۔۔
تو یہ کیسا انصاف ہوا۔۔۔۔ ایک انجان لڑکی آٸی۔۔۔ اور دو پل میں وہ اس کے اسیر بھی ہو گۓ۔۔۔
کیا میری محبت۔۔۔ میری تڑپ اتنی کمزور نکلی۔۔۔۔۔
یا میرا وہ جھوٹ ۔ ۔۔۔ جو میں نے اپنی عزت بچانے کو بولا تھا۔۔۔ وہ اب میری سزا بن گیا ہے۔۔۔۔۔
وہ پاگلوں کی طرح بولے جا رہی تھی۔۔۔۔
سارہ مجھے احان سے زیادہ اللہ سے شکوہ ہے۔۔۔۔۔ احان کو تو کچھ پتا نہیں۔۔۔۔ لیکن اللہ کو تو سب پتہ ہے نا۔۔۔۔۔۔
وہ پھوٹ پھوٹ کے رو دی تھی۔۔۔۔
اللہ نے میری جھولی میں کیوں نہیں ڈالی اس کی محبت۔۔۔۔
کسی کو بن مانگے ہی وہ مل گیا۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔ بس کرو نا۔۔۔ بس کرو ۔۔ سارہ کو سمجھ نہیں آرہا تھا وہ کیسے چپ کرواۓ اسے۔۔۔
وہ اس کو گلے لگاکر اس کے بال سہلا رہی تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کی انکھیں ابھی بھی سوجی ہوٸی تھیں۔۔۔سر میں شدید درد تھا۔۔۔ ساری رات اتنا روٶٸی تھی کہہ اب یوں لگتا تھا جیسے آنکھوں ۔۔۔ میں زخم سے ہو گۓ ہوں۔۔۔۔
وہ وارڈ میں راونڈ لگانے نہیں گٸی تھی۔۔۔ آج۔۔۔
اب سر کو دونوں ہاتھوں سے دباتے ہوۓ۔۔۔ وہ خود کو کوس رہی تھی۔۔۔ اس سے اچھا تھا آج نا آتی۔۔۔۔
احان مریم کو اپنے آفس میں چھوڑ کے ہانیہ کی ایک جھلک دیکھنے کو نکلا تھا۔۔۔۔
وہ اسے سٹاف روم میں اکیلی بیٹھی نظر آٸی تھی۔۔۔
وہ اچانک اس کے بلکل سامنے کھڑا تھا۔۔۔۔
ڈاکٹر مریم کہاں ہیں۔۔۔۔ اس کے دل کا خون کرنے کے لیے احان نے سوال کیا۔۔۔۔۔۔
وہ تپ گٸی تھی۔۔۔۔
مجھے کیا پتہ۔۔۔۔ مختصر جواب دے کر وہ پھر سے میگزین دیکھنے کی ایکٹنگ کرنے لگی۔۔۔۔
اوہ۔۔۔ کہاں تلاش کروں نظر ہی نہیں آ رہی۔۔۔۔احان نے جلتی پہ تیل چھڑکا تھا۔۔۔۔
اچھا سنیں ڈاکٹر ہانیہ۔۔۔۔ وہ جاتے جاتے پھر شرارت سے پلٹا تھا۔۔۔۔
ہا نیہ نے روہانسی شکل کے ساتھ اوپر دیکھا۔۔۔۔۔
اپ ایک مسیج دے سکتی ہیں ڈاکٹر مریم کو۔۔۔۔ احان نے بڑی تڑپ والی شکل بنا کر کہا۔۔۔۔۔۔
ہانیہ کی آنکیھں اس کی پچھلی رات کے سارے کرب کی داستان چیخ چیخ کے احان کو سنا رہی تھی۔۔۔۔۔ کیوں خود کو اور مجھے اذیت میں رکھے ہوۓ ہے یہ۔۔۔۔احان کے دل میں ٹیس اٹھی تھی۔۔۔
جی۔۔۔۔ کیا کہنا ہے۔۔۔۔ ہانیہ نے دانت پیستے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔
آ۔۔۔ہاں۔۔۔۔۔۔۔ ان سے کہیں کہ ڈاکٹر احان آپکو آفس میں بلا رہے ہیں جلدی آٸیں ذرا۔۔۔۔۔۔
ایک آنسو کا گولہ تھا جو ہانیہ کے گلے میں کہیں پھنس گیا تھا۔۔۔۔
اوکے۔۔۔۔۔ اس کی آواز کہیں بہت دور سے آتی ہوٸی محسوس ہوٸی۔۔۔۔۔
احان مسکراہٹ چھپاتے ہوۓ وہاں سے چلا گیا تھا۔۔۔۔ ہانیہ کی حالت اس کی بے چینی کی وضاحت دینے کے لیے کافی تھی۔۔۔۔
وہ آنسوٶں کو چھپاتی ہوٸی۔۔۔۔ وہاں سے اٹھی اور باہر نکل گٸی۔۔۔۔
باہر جاتے ہوۓ اس کی نظر مریم پر پڑی۔۔۔ اس کا دل کیا جا کر اس کا خون کر دے۔۔۔۔
اخر آنسو پلکیوں کے بند توڑ کر گال پہ ٹپک ہی پڑے تھے۔۔۔۔
وہ آنسوٶں کو۔۔۔ اپنے ہاتھ کی ہتھیلی سے رگڑتے ہوۓ ہاسپٹل سے باہر نکل گٸی تھی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج وہ دو دن کی چھٹی کے بعد آٸی تھی۔۔۔۔
آج بھی بلکل دل نہیں لگ رہا تھا۔۔۔۔ وہ بے دلی سے زبیر اورسعدیہ کے ساتھ بیٹھی ہوٸی تھی۔۔۔
اچانک باتوں کا رخ احان اور مریم کی طرف مڑ گیا تھا۔۔۔۔۔
احان کو تو اس کا پرفیکٹ ساتھی مل گیا ہے۔۔۔۔ زبیر بات کرتے ہوۓ۔۔۔ ہانیہ کی طرف دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔ کا دل جیسے کسی نے مٹھی میں لے لیا تھا۔۔۔۔
ہاں ۔۔ اچھے لگتے ہیں دونوں۔۔۔ پر مجھے نہیں لگتا ڈاکٹر احان انٹرسٹڈ بھی ہیں مریم میں۔۔۔ سعدیہ نے زبیر کی بات کی نفی کی۔۔۔۔
ہا نیہ کا دل نہیں کر رہاتھا اور ان کی گفتگو۔۔۔ مزید سنے۔۔۔۔
اوہ ۔۔۔نہیں مجھے تو بہت دفعہ احان کی باتوں سے یوں لگا ہے وہ کافی سیریس ہے۔۔۔ مریم کے لیے۔۔۔۔
ہانیہ ایک دم سے اٹھی تھی۔۔۔۔
چپ چاپ سہی مصلحتِِ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وقت کے ہاتھوں۔۔۔۔۔۔۔۔
مجبور سہی۔۔۔ وقت سے ہارا تو نہیں ہوں۔۔۔۔۔
اۓ وعدہ فراموش میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تجھ سا تو نہیں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تیز تیز قدم اٹھاتی ہوٸی۔۔۔ کسی ایسے کونے میں چھپ جانا چاہتی تھی۔۔۔۔ جہاں کوٸی اسے یوں تڑپتے نہ دیکھ سکے۔۔۔اور آنسو تھے کے روکتے نہیں تھے۔۔۔ بہتے ہوۓ۔۔ انکھوں کے کنارے سے۔۔۔ گالوں تک کا سفر تیزی سے طے کر گۓ۔۔۔ تھے۔۔۔۔
جب وہ کوریڈور۔۔ سے یوں روتے ہوۓ جا رہی تھی۔۔۔ تو احان کی نظر اس پر پڑی۔۔۔ دل نے اس کے کرب کی گواہی دی تھی۔۔۔۔ وہ اس کے پیچھے آرہا تھا۔۔۔۔وہ اس بات سے بے خبر اوپر والے سٹاف روم میں جا رہی تھی اس کو پتہ تھا یہاں کوٸی نہیں آتا جاتا تھا زیادہ۔۔ یہاں وہ کھل کے رو سکتی تھی۔۔۔
وہ سٹاف روم کی اندر دیوار کے ساتھ لگ کے بیٹھتی چلی گٸی تھی۔۔۔۔۔۔
مسطر مجھے کیوں ۔۔۔ دیکھتا رہتا ہے زمانہ۔۔۔۔۔
دیوانہ سہی ان کا۔۔۔۔۔۔تماشہ تو نہیں ہوں۔۔۔۔۔
اے وعدہ۔۔۔۔ فراموش میں تجھ سا تو۔۔۔نہیں ہوں۔۔۔
ہر ظلم تیرا یاد ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بھولا تو نہیں ہوں۔۔۔۔
احان اندر داخل ہوا تو وہ گھٹنوں میں منہ دے کر رو رہی تھی۔۔۔۔ جیسے ہی احان کو وہاں دیکھا۔۔۔ وہ ایک دم سے کھڑی ہوٸی تھی۔۔۔۔ اپنی گالوں کو رگڑ رگڑ کے صاف کر رہی تھی۔۔۔ ابھی آنسو کی ایک دھار صاف کرتی بھی نہ تھی کہ دوسری نکل آتی تھی۔۔۔۔ اور اب احان کو دیکھ کر تو ان میں روانی آ گٸی تھی۔۔۔۔۔
وہ دشمنِجاں۔۔۔۔ اہستہ سے چلتا ہوا اس کے بلکل سامنے کھڑا تھا۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔ کیا ہوا۔۔۔ اس کی آواز میں بہت اپناٸیت تھی۔۔۔
ہانیہ بتاٶ مجھے کیا پرابلم ہے۔۔۔۔ وہ واقعی پریشان ہو رہا تھا۔۔۔۔
وہ ہچکیوں کے ساتھ رو رہی تھی۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔ کیا پربلم ہے۔۔۔ بتاتی کیوں نہیں۔۔۔۔۔ احان کی آواز میں بلا کی پریشانی در آٸی تھی۔۔۔۔
آپ ہیں میری ۔۔۔ پرابلم۔۔۔۔ ہانیہ نے۔۔ احان کے گریبان کو اپنے ہاتھوں سے پکڑ کر جھنجوڑ ڈالہ۔۔۔۔
آپ کو ۔۔ میں نظر ۔۔۔ ہی نہیں آتی۔۔۔ یہ ہے میری پربلم۔۔۔۔۔۔۔
وہ چیخ رہی تھی۔۔۔۔
انکھیں سوجی ہوٸی تھی۔۔۔ پلکیں بھیگی ہوٸی تھی۔۔۔۔
ناک سرخ ہو رہا تھا۔۔۔۔ وہ ایسے حسین لگ رہی تھی جیسے صبح کی شبنم کے قطرے کسی پھول پہ پڑے ہوں۔۔۔۔
احان نے مسکراتے ہوۓ اس کے ھاتھوں کو اپنے ھاتھوں میں دبا لیا تھا۔۔۔ جو اس کے گریبان کو پکڑے ہوۓ تھے۔۔۔۔۔
کیا میں اتنا اہم ہوں۔۔۔ کہ تمھاری پرابلم بن جاٶں۔۔۔۔۔ اس کی آواز۔۔۔ بھاری ہو گٸی تھی۔۔۔۔
ہانیہ کا دل دھک سا رہ گیا تھا۔۔۔۔ اس نے حیرت سے احان کی طرف دیکھا تھا۔۔۔۔
احان نے بڑے پیار سے اسکی گال پر اپنا ھاتھ رکھ کے اپنے انگوٹھے سے اس کے آنسو صاف کیے۔۔۔۔
حیرت در حیرت تھی۔۔۔۔۔
ہانیہ کو اپنے کانوں پہ۔۔۔ اپنی آنکھوں پہ۔۔۔۔ اور اپنی۔۔۔ قسمت پر یقین نہیں آ رہا تھا۔۔۔۔۔
احان تھوڑا اور قریب ہوا تھا۔۔۔ وہ دیوار سے جا لگی تھی۔۔۔۔
اس کے نازک سے ہاتھ ابھی بھی ہانیہ کے ہاتھوں میں تھے۔۔۔۔۔
ہانیہ نے احان کی انکھوں میں جھانکا تھا۔۔۔۔۔۔
آہ۔۔۔۔ محبت کا سمندر موجزن تھا۔۔۔۔۔ اسے یقین نہیں آرہا تھا۔۔۔۔۔
ایک بھر پور لمحہ تو یوں ہی گزرا تھا۔۔۔۔۔
احان اتنا قریب تھا ۔۔۔ کہ اس کے دل کے تیزی سے دھڑکنے کی آواز سناٸی دے رہی تھی۔۔۔۔۔ اس کی خوشبو۔۔ ناک کے نتھنوں سے گھس کے دل کی دنیا میں تباہی مچا رہی تھی۔۔۔۔۔
جان کہیں پسلیوں کے درمیان میں۔۔۔ آ کر اوپر نیچے ڈبکیاں لگانے لگی تھی۔۔۔۔۔ اس کی حالت غیر ہو گٸ۔۔۔ تھی۔۔۔۔
چھوڑیں۔۔۔ مجھے۔۔۔ وہ ہاتھوں۔۔۔ کو چھڑوانے کی ناکام کوشش میں تھی۔۔۔
جب کے وہ تو۔۔۔ احان کے آہنی ھاتھوں میں یوں جکڑے ہوۓ تھے۔۔۔ کہ ہل تک نہیں رہے تھے۔۔۔
اور احان کوتو جیسے سننا ہی بند ہو گیا تھا۔۔۔۔۔اس کا چہرہ ہانیہ کے پاس آ رہا تھا۔۔۔۔
چھوڑیں مجھے۔۔۔۔ ہانیہ کی آنکھیں بند ہو گٸی تھی۔۔۔۔۔
کیوں ۔۔۔ نہیں ۔۔ وہ مدھوشی کی سی آواز میں بولا۔۔۔۔
احان کے سانس سے نکلنے والی گرم ہواٸیں ہانیہ کے گال جلا رہی تھیں۔۔۔۔۔
چھوڑیں آواز بند سی ہوٸی تھی۔۔۔ ۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Read More:  Mushaf Novel By Nimra Ahmed – Episode 24

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: