Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 15

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 15

–**–**–

احان چھوڑیں پلیز۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آواز۔۔۔۔ کانپنے لگی تھی۔۔۔۔۔
نہیں۔۔۔۔۔ احان کی بھاری آواز۔۔۔ میں مدھوشی کی سا عنصر تھا۔۔۔۔
ہانیہ نے زور سے انکھیں بند کر لیں۔۔۔۔۔۔۔ ۔
پلیز۔۔۔۔۔ سرگوشی ۔۔۔ جیسی آواز نکلی تھی۔۔۔۔
نہیں۔۔۔۔۔ سرگوشی میں ہی جواب ملا تھا۔۔۔۔
احان نے اس کے کان کے قریب سرگوشی کی تھی۔
اٸی۔۔۔۔لو۔۔۔۔ یو۔۔۔۔۔۔۔
ہانیہ نے اس کی مدھوشی کا فاٸدہ اٹھا کر اسے دھکا دیا تھا۔۔۔۔
اور وہاں سے ۔۔۔۔ دھڑکتے دل ۔۔۔لڑکھڑاتے۔۔۔ قدموں۔۔۔۔ اور اپنے بے جان ہوۓ پڑے وجود کو لے کر بھاگی تھی۔۔۔۔
دھکا کھانے سے وہ چند قدم پیچھے لڑکھڑا گیا تھا۔۔۔۔ لیکن کھڑا ایسے ہی مدہوشی کی سی حالت میں تھا۔۔۔۔۔ ۔۔۔
کیا ہو جاتا ہے مجھے۔۔۔۔۔۔ کوٸی۔۔۔ قابو ہی نہیں رہتا۔۔۔۔ ایسا کیوں ہے۔۔۔۔ اس نے بری طرح دھڑکتے دل پہ ہاتھ رکھا۔۔۔۔۔
اور ایک گہری سانس لیتا۔۔۔ ہوا کھلے منہ کے ساتھ۔۔۔ وہ صوفے پر گرا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
آنکھیں۔۔۔ اس کی اتنی قربت سے چمک اٹھی تھیں۔۔ لب اس کی کان کی لو کے لمس کوابھی بھی محسوس کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔
بے خودی۔۔۔۔۔ اسے ۔۔۔۔ ہی ۔۔۔۔ کہتے ہیں۔۔ احان حیدر۔۔۔۔
وہ اکیلا بیٹھا ۔۔۔ مسکرا رہا تھا ۔۔۔ ہنسے جا رہا تھا۔۔۔۔
پاس پڑے کشن کو ہاتھ سے اٹھایا۔۔۔ اوپر اچھالا۔۔۔ اور جب وہ نیچے آنے لگا تو۔۔۔ اپنی ٹانگ مار کر اسے پھر سے اچھال دیا۔۔۔۔۔۔۔۔
۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دروازہ کھول کر کمرے میں داخل ہوٸی ۔۔۔ گال سرخ ہو رہے تھے۔۔۔۔۔۔
وہ بیڈ پر ڈھے سی گٸی ۔۔۔ اور اونچی اونچی رونے لگی تھی۔۔۔۔۔
سارہ جو کتاب کھولے بیٹھی تھٕی تیزی سے کتاب ایک طرف پھینک کر اٹھی۔۔۔
ہانیہ ۔۔۔۔۔۔ہانیہ۔۔۔۔۔۔۔ کیا ہوا ہے۔۔۔۔۔ سارہ پرہشان سی ہو کر اس کے پاس آٸی تھی۔۔۔
سارہ احان مجھ سے ہی پیار کرتے ہیں۔۔۔وہ۔۔۔۔ بری طرح رو رہی تھی۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔ پاگل ہو تم۔۔۔۔۔۔ سارہ کہ چہرے پہ خوشی جھلک رہی تھی۔۔۔۔
پاگل لڑکی۔۔۔ اس کو کھونے کے ڈر سے بھی روتی ہو۔۔۔۔ اب اس کو پا لینے پہ بھی رو رہی ہو۔۔۔۔
سارہ نے اسے زور سے گلے لگایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ بے چینی سے اس کا انتظار کر رہا تھا۔۔۔ اور وہ تھی کہ آ کے ہی نا دے رہی تھی۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر ہانیہ آ گٸی ہے کیا۔۔۔۔ اس نے اپنے آفس کا فون کان کو لگایا ہوا تھا اور کسی سے پوچھ رہا تھا۔۔۔
ان کو میرے آفس میں بھیجیں۔۔۔۔
اٹھ کے اپنے بال میں داٸیں باٸیں ہاتھ پھیرا۔۔۔ ٹاٸی کی ناٹ تھوڑی سی ڈھیلی کی۔۔۔
انکھیں چمک رہی تھی پر ساری رات نا سو پانے کا خمار واضح تھا۔۔۔۔
کتنی دیر انتظار کے بعد بھی وہ نہیں آٸی تھی۔۔۔۔
بے چینی سے آفس سے نکلا تھا۔۔۔۔ سٹاف روم۔۔۔ میں بھی نہیں تھی۔۔۔۔
کس وارڈ میں ہیں ڈاکٹر ہانیہ اس نے کاونٹر سے پتہ کیا۔۔۔۔
اور اس وارڈ کی طرف چل پڑا۔۔۔۔
ہانیہ ۔۔۔ نے اسے اپنی طرف آتے دیکھا۔۔۔۔ تو دھک سی ہی رہ گٸی۔۔۔ پلکوں کی جھالر۔۔۔ گالوں پر مزین ہو گٸی۔۔۔۔
وہ قریب آ کر آہستہ سے بولا۔۔۔۔ آفس میں آٶ۔۔۔۔
نہیں۔۔۔ ہانیہ نے سرگوشی کی سی آواز میں کہا۔۔مسکراہٹ چھپاۓ نہیں چھپ رہی تھی۔۔۔۔
احان نے خفگی سے دیکھا۔۔۔۔
کیا کہنا ہے۔۔۔ پھر مدھم سی آواز میں پوچھا۔۔۔۔ اور ہاتھ میں پکڑے کلپ بورڈ پر اپنے ناخن کھرچے۔۔۔۔
کل والی بات جو ادھوری چھوڑ کر بھاگ گٸی تھی۔۔۔ اسے پورا کرنا ہے۔۔۔۔۔۔ شرارت سے احان نے اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔
دل کی دھڑکن۔۔۔ اور تیز ہو گٸی تھی۔۔۔۔
آرہی ہو نا پھر۔۔۔ میں انتظار کر رہا ہوں۔۔۔۔ وہ سرگوشی میں کہتا ہوا تیزی سے وہاں سے چل پڑا۔۔۔۔
وہ دھڑکتے دل کے ساتھ آفس کے دروزے پر کھڑی تھی۔۔۔۔دروازے پر دستک کیسے دے۔۔۔ دل اپنی رفتار بڑھاتا ہی جا رہا تھا۔۔۔۔
احان نے کچھ محسوس کر کے دروازہ کھولا تھا۔۔۔ وہ بلکل سامنے کھڑی تھی۔۔۔۔
بہت دلکش مسکراہٹ تھی۔۔ احان کے ہونٹوں پر۔۔
اندر آٶ۔۔۔۔
وہ دھیرے سے اپنے دل کو سنبھالتی اور اس کے دل پہ قدم رکھتی ہوٸی اندر آٸی تھی۔۔۔۔
جلدی کہیں مجھے جانا ہے۔۔۔۔ اس سے پہلے کے احان اس کا ہاتھ پکڑتا اس نے شرارت سے دونوں ہاتھ پیچھے باندھ لیے تھے۔۔۔۔
کہنا نہیں سننا ہے۔۔۔۔ وہ کون سا باز آنے والوں میں سے تھا۔۔۔ قریب ہو کر سرگوشی کی۔۔۔۔
کیا۔۔۔۔ مدھر ۔۔۔ سی آواز ابھری۔۔۔۔۔
وہی جو کل میں نے تم سے کہا۔۔۔ احان نے اسکے دوپٹہ کا پلو پکڑا۔۔۔
آج تم مجھ سے کہو۔۔۔۔ وہی مدھوش سی آواز۔۔۔ آج پھر ہانیہ کے کانوں میں رس گھولنے لگی۔۔۔۔
میں کیسے کہوں۔۔۔۔ ہانیہ کی آنکھیں ۔۔کھولے بھی نا کھل پا رہی تھی۔۔۔۔ اور وہ ظالم تھا کہ۔۔۔ اسے اس کی حالت پہ ترس بھی نا آرہا تھا۔۔۔۔
راستہ دیں۔۔۔۔ ہانیہ جانے کے لیے پر تولنے لگی۔۔۔۔ وہ جدھر سے بھی نکلنے لگتی احان دھیرے سے آگے آ جاتا۔۔۔
وہ مسلسل اس کی حالت سے محزوز ہو رہا تھا۔۔۔۔
پلیز احان جانے دیں نہیں تو رو دوں گی میں۔۔۔۔
بلکل نہیں ۔۔۔ اب نہیں۔۔۔۔ احان نے دھیرے سے اس کے گال کو چھوا تھا۔۔۔۔۔
تو پھر جانے دیں۔۔۔
پہلے بولو۔۔۔۔ احان بھی ضد کا پکا تھا۔۔۔
دل کی آواز سن لیں۔۔۔ ہانیہ نے ایک ادا سے کہا۔۔۔
ٹھیک ہے۔۔۔ احان نے شرارت آنکھوں میں بھری۔۔۔ اورنیچے اسکے دل کے پاس جھکا۔۔۔۔
وہ دبک کے پیچھے ہوۓ۔۔۔۔ احان نے اگے بڑھ کے اس کا ہاتھ پکڑ لیا۔۔۔ کیا مسٸلہ ہے اب سننے دو۔۔۔۔
مصنوعی خفگی دکھاٸی۔۔۔۔۔
سر خ ہوتے چہرے پر اس نے اتنے زور سے آنکھیں بند کر رکھی تھی۔۔۔۔۔
احان کو اسکا معصوم سا چہرہ دیکھ کر ہنسی آ گٸی ۔۔۔
ہنس کیوں رہے۔۔۔ وہ آہستہ سے بولی۔۔۔۔
چلو جاٶ۔۔۔ نہیں تو ابھی۔۔۔ بے ہوش ہو کرگر جاٶ گی احان نے راستہ دیا۔۔۔۔
آپ ناراض ہو گیے ہیں۔۔۔۔ وہ پریشان سی ہوٸی۔۔۔۔
نہیں تو۔۔۔۔ احان کی آنکھوں میں دنیا جہان کا پیار تھا۔۔۔۔
میں جاٶں پھر۔۔۔۔ اتنے پیار سے اجازت لی۔۔۔۔
نہیں۔۔۔۔۔ احان نے مصنوعی رعب میں کہا۔۔۔
پھر ہنس پڑا۔۔۔ ۔
وہ تیزی سے نکلنے لگی ۔۔۔
سنو۔۔۔۔ وہ رکی۔۔۔۔
پھر تھوڑی دیر بعد بلاٶں گا۔۔۔۔
ہانیہ نے۔۔۔ بچارگی سے دیکھا۔۔۔
احان پھر سے شرارت سے ہنسا۔۔۔
وہ تیزی سے وہاں سے نکل گٸی۔۔۔۔۔
اور وہ کرسی پہ جھولتا ہنستا رہا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس وارڈ میں ڈیوٹی لگی ہوٸی تھی ۔۔ وہ تو خالی رہتا تھا ہمیشہ ۔۔۔ وہ حیران سی ہو کر وارڈ نمبر چیک کر رہی تھی۔۔۔۔
پھر پریشان سی ہوتی ہوٸی وہاں پہنچی۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: