Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 16

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 16

–**–**–

وہ وارڈ میں داخل ہوٸی تو۔۔۔ سارا وارڈ خالی پڑا تھا۔۔۔۔ یہ کیسا مزاق ہوا۔۔۔
وہ تھوڑا سا آگے آٸی۔۔۔۔ کوٸی نہیں تھا۔۔۔۔
کندھے اچکا کر ابھی وہ واپس مڑی ہی تھی۔۔۔۔ کہ سارے وارڈ کے پنکھے چلنے لگے۔۔۔۔ اور گلاب کی پتیوں کی بارش شروع ہو گٸی تھی۔۔۔۔
اس کے چاروں اور گلاب ہی گلاب تھے۔۔۔۔ اتنی حیرانی سے وہ ارد گرد دیکھ رہی تھی۔۔۔۔
ایک خوشگوار سا احساس تھا جو ارد گرد پھیل گیا تھا۔۔۔۔ ۔۔
وہ آہستہ آہستہ چلتا ہوا بلکل اس کے پیچھے آگیا تھا۔۔۔ وہ ابھی بھی حیرانی سے گرتے پھولوں کو دیکھ رہی تھی۔۔۔
اچانک احساس ہوا کوٸی پیچھے ہے۔۔
مڑ کے دیکھا تو۔۔۔ وہ اپنے پورے جلوے لے کر اس کے دل کے۔ تار بجانے کو کھڑا تھا۔۔۔
احان کے چہرے کی وہ دلکش مسکراہٹ۔۔۔ اسے اور خوبرو بنا رہی تھی۔۔۔۔
اسے اپنی قسمت پر یقین نہیں آ رہا تھا۔۔۔ وہ ہانیہ ہی تھی اور وہ احان ہی تھا۔۔۔۔
احان۔۔۔ یہ۔۔۔ یہ ۔۔۔ سب کس لیے۔۔۔۔اس کی خوشی چھپاۓنہیں چھپ رہی تھی وہ کب اس شخص کے لیے اتنی اہم ہو گٸی۔۔۔۔ جو اس کی زیست کا حصول تھا۔۔۔۔
میری زندگی میں آنے کے لیے۔۔۔۔ وہ اسکا ہاتھ پکڑ کر کھڑا تھا۔۔۔۔
مجھے تمھارے گھر لے کر آنا ہے اپنے بابا کو۔۔۔۔جلد سے جلد۔۔۔
وہ اسے کہہ رہا تھا۔۔۔ اور ہانیہ کو تو جیسے اب ہوش آ رہا تھا۔۔۔۔
اوہ۔۔۔۔۔ جب احان کو حقیقت کا پتہ چلے گا۔۔۔۔۔
ایک دم سے دل جیسے خوف سے بھر گیا تھا۔۔۔۔
انکھوں میں وحشت سی پھیل گٸی تھی۔۔۔۔
ایک دم اس نے احان کے ہاتھ سے اپنا ہاتھ چھڑوایا تھا۔۔۔۔
اور کچھ کہے بنا وہاں سے چلی گٸی تھی۔۔۔ اسے کچھ سمجھ بھی تو نہیں آ رہی تھی۔۔۔۔
بابا کو پوچھنا بھی تو تھا اب کیا کرنا ہے۔۔۔۔ احان ۔۔۔ کو کیسے بتانا ہے سب۔۔۔۔
وہ حیران سا کھڑا کا کھڑا رہ گیا تھا۔۔۔۔۔
ہانیہ کے اس پرسرار سے انداز پر۔۔ اسے عجیب سا لگا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا۔۔۔ نہیں میں جھوٹ پر اب اس رشتے کو آگے نہیں بڑھاٶں گی۔۔۔۔
احان کو اب پتہ چل جانا چاہیے۔۔۔۔ پھر جو ہو میری قسمت۔۔ لیکن اب اسے میں دھوکے میں نہیں رکھ سکتی ہوں ۔۔ دانت کچلتی وہ اپنے دل کو اس کی محبت کی تسلی دیتی ہوی کہہ رہی تھی۔۔۔۔
ٹھیک ہے۔۔۔ حیدر نے ایک ٹھنڈی سانس لی تھی۔۔۔۔
احان کو بلاٶ ملنے کے لیے۔۔۔۔۔ انھو ں نے پر سوچ انداز میں کہا۔۔۔۔۔
اور پھر تھوڑی دیر کی خاموشی کے بعد فون کاٹ دیا۔۔۔۔۔
وہ یونہی ساکت سی بیٹھی کی بیٹھی رہ گٸی تھی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہاسپٹل میں آ تو گٸی تھی۔۔۔ پر دل کل سے بجھ سا گیا تھا۔۔۔۔ اب کیا ہو گا جب احان کو اس حقیقت کا علم ہوگا کہ۔۔۔ میں ہانیہ ہوں۔۔۔ اسے کسی پل چین نہیں آ رہا تھا۔۔۔۔
وہ مین ھال میں سے گزر رہی تھی۔۔۔ ایک لڑکی وہیں فرش پر بیٹھی ہوٸی تھی۔۔۔ پاس بہت ہی بری حالت میں ایک عورت لیٹی ہوٸی تھی۔۔۔۔
اوہ یہ ایسے کیوں ۔۔۔۔ وہ اگے بڑھی تھی۔۔۔
سسٹر۔۔۔ سسٹر۔۔۔۔ ادھر آٸیں ذرا ۔۔۔ یہ پیشنٹ یہاں کیوں۔۔۔۔
جی میم۔۔۔۔ نرس بھاگتی ہوٸی وہاں آٸی تھی۔۔۔۔
یہ پیشنٹ ادھر کیوں ہیں۔۔۔۔ ان کو وارڈ میں شفٹ کریں۔۔۔۔
میم انھوں نے ڈیوز پے نہیں کٸے ہیں۔۔۔۔ سسٹر نے گھبراہٹ میں جواب دیا کیونکہ اسے پتہ تھا۔۔۔ ڈاکٹر ہانیہ مریضوں کا کتنا خیال کرتی ہے۔۔۔
سسٹرمیں ڈیوز کلیرکرتی ہوں۔۔۔ان کو شفٹ کریں جلدی ۔۔۔ وہ ابھی سسٹر سے بات کر ہی رہی تھی۔۔۔۔ جب اس عورت کے پاس بیٹھی۔۔۔ لڑکی تیزی سے اٹھ کر اس کے پاس آٸی۔۔۔
ہانی آپی۔۔۔۔۔ لڑکی کی آواز پر اس نے ایک دم پلٹ کر دیکھا۔۔۔۔
تمنا ۔۔۔۔۔۔۔ ایک پل میں اس نےتمنا کو پہچان لیا تھا۔۔۔۔۔
اس کی حالت ہی اسے ان کا حال چیخ چیخ کر بتا رہی تھی۔۔۔۔ ۔۔
تمنا اس کےگلے لگی زور زور سے رو رہی تھی۔۔۔۔
تمنا وہ کون۔۔۔۔ یہ کہتے ہوۓ وہ آگے بڑھی تھی۔۔۔۔۔۔
ساجدہ۔۔۔ بے سدہ پڑی تھی۔۔۔۔۔۔
اماں کو باٸی پاس کا بتا رہے ڈاکٹر۔۔۔۔ ان کو انجاٸنا کی تکلیف ہے۔۔۔۔
وہ سکتے میں کھڑی تھی۔۔۔۔ ۔۔۔
تمنا۔۔۔۔ ابا۔۔۔۔۔وہ بس اتنا سا کہہ کر۔۔ ۔۔۔ اس کی طرف دیکھنے لگی۔۔۔۔۔
ابا اب نہیں۔۔۔۔ رہے۔۔۔ہانی آپی۔۔۔۔ روتے ہوۓ تمنا نے کہا۔۔۔
ہانیہ کے دل میں ایک ٹیس اٹھی تھی۔۔۔۔۔ آنسو۔۔۔۔ لہروں کی شکل میں اس کے چہرے پہ اتر آۓ تھے۔۔۔
ساجدھ نے آہستہ سے آنکھیں کھولی تھیں۔۔ گندی میلی سی چادر میں لپٹی وہ عورت تھی۔۔۔ جس نے اس پر ظلم کے پہاڑ توڑے۔۔۔ اسے بیچنے تک کا گناہ کرنے کی ہمت رکھنے والی یہ عورت آج اس کے قدموں میں بے آسرا پڑی تھی۔۔۔۔۔
اس پر دنیا تنگ کرنے والی کی آج خود دل کی دیواریں تک بند ہو گٸی تھیں۔۔
آج وہ ایسے حیرانی سے ہانیہ کی طرف دیکھ رہی تھی۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔۔۔ ساجدہ۔۔۔۔حیران ہو کر اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔ ۔۔۔
وہ ہانیہ جسے یہ دو وقت کی روٹی بھی نہیں دیتی تھی۔۔۔ آج شہزادویوں کے سے سراپے میں اس کے آگے کھڑی تھی۔۔۔۔
اجلا نکھرا سا چہرہ۔۔۔۔ اس کی سوچ سے بھی زیادہ مہنگے کپڑے۔۔اور جوتے۔۔۔۔
ساجدہ۔۔۔ کو ہانیہ سے خوف آ رہا تھا۔۔۔ اب وہ اس کے ساتھ کیا کرے گی۔۔۔۔
قدرت ایسٕے ہی رخ موڑتی ہے۔۔۔۔ دینا مکافاتِ عمل ہے۔۔۔۔۔
ہانیہ نے ساجدہ پر سے نظر ہٹا کر تمنا کی طرف دیکھا۔۔۔
تمنا۔۔ ۔۔۔۔ تم فکر نہ کرو۔۔۔۔رکو زرا۔۔۔
اس نے انہیں وارڈ میں شفٹ کروایا۔۔۔۔
ساجدہ۔۔۔نے سر ایسے نیچے گرایا پھر اٹھایا نہیں۔۔۔
تمنا میں بات کرتی ہوں ڈاکٹرز سے پریشان نہیں ہو تم۔۔۔۔۔
وہ ساجدہ پر نظر ڈالے بنا باہر نکل گٸی۔۔۔۔۔
اور بوجھل قدموں سے احان کے آفس کی طرف بڑھنے لگی۔۔۔۔۔۔
کل یوں اسے وہاں چھوڑ کر بھاگ گٸی تھی وہ اور پھر وہ فون کرتا رہا وہ بھی ایٹنڈ نہیں کیے تھے۔۔۔۔
وہ دروازے کے سامنے کھڑی بے چینی سے ہونٹ کچل رہی تھی۔۔۔۔۔ دروازے پر دستک دیتی ہوٸی وہ آگے بڑھی۔۔۔
احان نے نظر اٹھا کے اس طرف دیکھا اور پھر نظر نیچے کر لی۔۔۔ موڈ خراب لگ رہا تھا۔۔۔۔۔۔
بیٹھ جاٶں۔۔۔ ہانیہ نے ڈرتے ڈرتے پوچھا۔۔۔۔۔
کوٸی جواب نہیں آیا وہ بےحد سنجیدہ۔۔۔ انداز میں کام کر رہا تھا۔۔۔۔ اسے وہ ایسے روٹھا ہوا۔۔ ۔۔ اپنے دل میں اترتا ہوا محسوس ہو رہا تھا۔۔۔۔۔ ۔
بابا ملنا چاہتے آپ سے۔۔۔ دھیمی سی آواز میں کہا گیا۔۔۔۔
احان نے فوراََ سر اٹھا کے اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔ وہ ہونٹوں کے پاس بال پواٸنٹ رکھ کر آنکھوں کی پتیلیوں کو سکیڑ کر اسکی طرف دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
پھر ایک دم اس کے ہونٹوں پر مسکراہٹ آ گٸی تھی وہی مسکراہٹ۔۔۔ جو ہانیہ کی جان لے جاتی تھی۔۔۔۔
یہ مجھ سے اب اتنی محبت کرتا ہے۔۔۔ میری حقیقت سے کوٸی فرق نہیں۔۔۔ پڑے گا اسے۔۔۔۔ ہانیہ نے اپنے دل کو تسلی دی۔۔۔ اور مسکرا دی تھی۔۔۔۔
لکین دل کی اندر وہ خوف بھی سر چھپا کے بیٹھا ہواتھا۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: