Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 17

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 17

–**–**–

کار کو ریسٹورانٹ کے سامنے روک کے وہ اترا تھا۔۔۔۔
اپنے کورٹ کو درست کر کے۔۔ اس نے ایک دفعہ چہرے کو کار کے سٸایڈ مرر میں جھک کر دیکھا تھا۔۔۔
پھر سلیقے سے قدم اٹھاتا وہ۔۔۔ ہوٹل کی سیڑھیاں چڑھ رہا تھا۔۔۔۔ ۔۔
آج وہ ہانیہ کے بابا سے ملنے جا رہا تھا۔۔۔ ۔۔۔ ہلکا سا مسکراتا وہ اندر داخل ہواتھا۔۔۔۔۔ وہ مسکراتی ہوٸی کھڑی تھی جس کی اسکے دل پرحکومت تھی۔۔۔۔
وہ اسکے حسین سراپے کو اپنی آنکھوں میں قید کرتا ہوا اس کے پاس آیا تھا۔۔۔۔
وہ گھبراٸی سی لگ رہی تھی۔۔۔۔
اس کے پاس آ کر اس نے سوالیہ نظروں سے ارد گرد دیکھا۔۔۔۔
بابا ۔۔۔کہاں ہے۔۔۔۔۔ تمہارے۔۔۔۔
وہ بہت پر جوش دکھاٸی دے رہا تھا۔۔۔ وہ پوری طرح پر اعتمادتھا۔۔۔۔ ہوتا بھی کیوں نہیں۔۔۔ وہ ایک مکمل شخصیت کا مالک۔۔۔ ہارٹ سرجن ۔۔۔ اور ایک ویل آف فیملی سے تھا۔۔۔۔
اسے یقین تھا ہانیہ کے بابا اسے کسی صورت انکار نہیں کر سکتے۔ تھے۔۔۔
بابا۔۔۔ بابا ۔۔ آنے والے ہیں بس۔۔۔ ہانیہ نے ماتھے پہ آیا پسینہ صاف کیا۔۔۔
کیسا لگ رہا ہوں میں۔۔۔۔ احان نے دایٸں آنکھ کو دباتے ہوۓ ۔۔ ہانیہ۔ ۔۔ سے سرگوشی۔۔۔ کی۔۔۔۔
پرفیکٹ۔۔۔ گلے میں پھنسے آنسو کے گولےکو نگلتے ہوۓ۔۔۔ دل میں سر اٹھاتے خوف کو دباتے ہوۓ اس نے جھوٹی مسکراہٹ چہرے پر سجاتے ہوۓ کہا ۔۔۔
احان آپ بیٹھیں۔۔۔ بابا باہر آ گۓ ہیں میں ان کو لے کر آتی ہوں۔۔۔ ہانیہ بمشکل بول رہی تھی۔۔۔
اسے آج ہانیہ ۔۔۔ وہی شروع والی۔۔۔ ہانیہ لگی۔۔۔۔
وہ کرسی پر بیٹھ گیا تھا۔۔۔ دونوں ہاتھوں کو جوڑ کر میز پر رکھا۔۔۔
ہانیہ اور حیدر اسکے عقب سے آتے ہوۓ آگے آۓتھے۔۔۔
وہ مسکراتا ہوا سلام لینے کے لیے اٹھا۔۔۔۔۔
حیدر بلکل اسکے سامنے کھڑے تھے۔۔۔۔۔
با۔۔۔۔با۔۔۔۔ ۔۔ آپ۔۔۔۔۔ اس نے ایک نظر ہانیہ کی طرف نا سمجھ آنے والے انداز میں دیکھا۔۔۔
پھر بابا کی طرف۔۔۔۔
وہ حیرت زدا کھڑا تھا۔۔۔۔ آپ یہاں کیسے۔۔۔۔۔ وہ بار بار دونوں کے چہرے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
ہانیہ روہانسی سی شکل بناۓ۔۔۔ دانتوں سے نچلے ہونٹ کو کچل رہی تھی۔۔۔۔
کچھ دیر وہ اسی کفیت میں پر سوچ انداز میں کھڑا رہا۔۔۔ حیدر مسکراۓ۔۔۔ پیار سے احان کی طرف دیکھا۔۔۔ اور پھر ہانیہ کی طرف۔۔۔
احان کا ماتھا ٹھنکا۔۔۔۔۔۔ اوہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کون ہو تم۔۔۔۔ احان نے ۔۔۔ ہانیہ کی طرف بے یقینی کے انداز میں دیکھا۔۔۔۔ احان کا چہرہ دھواں دھواں تھا۔۔۔۔
یہ ہانیہ احان ۔۔ ہے۔۔۔ تمھاری بیوی۔۔۔ حیدر نے الفاظ پر زور دیتے ہوۓ کہا۔۔۔۔
وہ ایک دم چپ ہو گیا تھا۔۔۔۔ چہرہ سخت۔۔۔ دماغ کی رگیں کھنچ رہی تھیں۔ جبڑا دانتوں کو پسینے کے سے انداز میں بھینچا ہوا تھا۔۔۔
میں احان حیدر۔۔۔ کیا سمجھتا تھا خود کو۔۔۔ اور اتنی سی میری اوقات کے زندگی میں دو دفعہ بری طرح دھوکا کھایا اور دونوں دفعہ ایک ہی لڑکی سے۔۔۔۔
وہ دانت پیستے ہوۓ بول رہا تھا۔۔۔۔ آنکھیں سرخ ہو رہی تھی۔۔۔۔
اور اس دفعہ تو ۔۔۔ بابا ۔۔۔ آپ بھی اس کے ساتھ ملے ہوۓ تھے۔۔۔۔ اس نے حیرانی اور نفرت کے ملے جلے تاثر سے حیدر کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔
احان میری بات سنو۔۔۔ میں تمھیں آج وہ سب سمجھاتا ہوں۔۔۔۔
حیدر نے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھا۔۔۔۔
پیچھے کھڑی ہانیہ کا رنگ زرد ہو گیا تھا۔۔۔۔
ایک منٹ ۔۔۔ایک منٹ بابا۔۔۔ احان نے دکھ سے حیدر کے ھاتھ کو کندھے سے نیچے کیا۔۔۔۔
اسکا مطلب آپ کو کبھی میری بات پر یقین آیا ہی نہیں تھا۔۔۔۔ جب میں باہر تھا۔۔۔ آپ سب جھوٹ کہتے رہے مجھے۔۔۔ ۔۔۔
اور اس کے ساتھ مل کر مجھے بیوقوف بنایا۔۔۔۔
میں ۔۔۔ میں ۔۔ اس کے پیچھے دیوانہ ہو گیا۔۔۔۔۔ اور مجھے خبر بھی نہیں یہ سب جانتی ہے۔۔۔۔۔۔ یہ۔۔۔ جانتی تھی۔۔۔ کہ میرا اس کا کیا رشتہ ہے۔۔۔ میں کون ہوں۔۔۔ یہ مجھے۔۔۔ دھوکا دیتی رہی۔۔۔
احان نے خونخار نظروں سے ہانیہ کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔
اللہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کی انکھیں خالی تھیں ۔۔۔ جن میں کل تک خود کے لیے پیار کا سمندر دیکھتی رہی تھی۔۔۔۔
وہ دھک سی رہ گٸی۔۔۔ حالت ایسی کے کاٹو تو رگوں میں خون نہیں۔۔۔۔۔
احان ۔۔۔ ہانیہ ۔۔۔بلکل ایسی نہیں ہے۔۔۔۔ یہ سب میں نے کرنے کو۔۔۔۔ حیدر کی بات ابھی پوری نہیں ہوٸی تھی۔۔۔ کہ احان نے ھاتھ ان کے سامنے کیا۔۔۔۔
بس بابا میں جانتا ہوں یہ کتنی معصوم ہے۔۔۔۔ یہ۔۔ آج سے دس سال پہلے ایسی شاطر تھی۔۔ کہ اس نے ایک ہنستہ بستا گھر۔۔۔ ایک دل۔۔۔ اور میری زندگی تباہ کر دی تھی۔۔۔ احان آج وہی احان تھا۔۔۔۔ وہ دھاڑنے کے سے انداز میں بول رہا تھا۔۔۔
ہانیہ کا دل دہل گیا تھا۔۔۔۔
ہانیہ کے گلے میں آنسوٶں کا گولا اٹک کر رہ گیا۔۔۔۔
وہ حیدر کے پیچھے آوازیں دینے پربھی نہیں رکا تھا۔۔۔۔۔ تیزی سے ہوٹل سے باہر نکل گیا تھا۔۔۔۔۔
ہانیہ بڑی مشکل سے پاس پڑی کرسی کے سہارے۔۔۔ اپنی لٹی پٹی ۔۔ محبت لے کر بیٹھتی چلی گٸی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج کتنے عرصے کے بعد وہ یوں سگریٹ پر سگریٹ پی رہا تھا۔۔۔۔ مونال کی اونچاٸی پہ وہ بیٹھا۔۔آج ایک ایسا انسان تھا۔۔ جس کو لگ رہا تھا اس کی زندگی۔۔۔ عجیب سی ہے۔۔۔ ایسا لگتا تھا ۔۔۔۔ زندگی اس کی ہے پر۔۔۔ کوٸی اور ہے۔۔۔ جو اس کو جب چاہیے کسی رخ میں بھی موڑ دیتا ہے۔۔۔۔
اسے حیرت ہو رہی تھی کہ۔۔۔ ہانیہ کتنے آرام سے اسے بیوقوف بناتی رہی تھی۔۔۔۔
ہنستی ہو گی مجھ پر۔۔۔۔۔۔ کہ یہ خود کو کیا سمجھتا ہے۔۔۔ کہ اس وقت مجھے نکال کر پھینک چکا تھا۔۔۔ اب کیسے میرے پیچھے پاگل ہو رہا۔۔۔۔
اس نے غصے سے سگریٹ کو پاس پڑے پتھر پر رگڑ دیا۔۔۔۔۔
دل کر رہا تھا یوں ہی۔۔۔۔ہا نیہ کے چہرے کو مسل کے رکھ دے۔۔۔۔ خود کو سمجھتی کیا ہے۔۔۔۔
وہ دل میں کچھ سوچ کے اٹھا تھا۔۔۔ کوٹ کو کندھے پر ڈال کے وہ گھر جا رہا تھا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری رخصتی کر دیں ۔۔۔ ہانیہ کے ساتھ۔۔۔۔۔ حیدر کر سر پر کھڑا وہ کہہ رہا تھا۔۔۔۔۔
حیدر نے خوشگوار حیرت سے۔۔۔ احان کو دیکھا۔۔۔۔
اور پھر زور سے گلے لگا لیا۔۔۔۔۔
دل خوش کر دیا۔۔۔۔۔ وہ پر جوش ہو رہے تھے۔۔۔۔ میں۔۔۔ میں ۔۔۔
ہانیہ کو بتاتا ہوں۔۔۔۔
وہ خوش ہو کر اپنا موباٸل تلاش کر رہے تھے۔۔۔۔
احان آنکھوں میں خون لیے۔۔۔ اپنے کمرے کی طرف جا رہا تھا۔۔۔ جب اسے پیچھے سے حیدر کی پر جوش۔آواز سناٸی دے رہی تھی۔۔۔ کہ احان رخصتی چاہتا ہے۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: