Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 18

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 18

–**–**–

بابا کیا کہہ رہے تھے۔۔۔ اسے یقین نہیں آ رہا تھا۔۔۔۔ وہ جو جب سےآٸی تھی تب سے ۔۔۔ رو رہی تھی۔۔۔ اپنی زندگی کو کوس رہی تھی۔۔۔۔ اب ایک دم سے جیسے کسی نے مرہم رکھ دیا۔۔۔۔
احان کے دل میں جو اس نے محبت جگاٸی تھی آخر کو وہ جیت گٸی۔۔۔۔
اسے سمجھ نہیں آ رہی تھی آج کس طرح شکر اداکرے اپنے رب کا۔۔۔
سارہ کو اس نے گول گول گھوما ڈالا تھا۔۔۔۔
آج پہلی دفعہ تمہیں اتنا خوش دیکھ رہی ہوں۔۔۔۔ سارہ نے اس کے ناک کوپکڑ کر داٸیں باٸیں کیا۔۔۔۔
تمہیں پتا ہے سارہ۔۔۔ ہاسٹل کی زندگی۔۔۔ دس سال سے گزار رہی ہوں۔۔۔۔ اب یوں لگ رہا جیسے۔۔۔ آزاد ہو جاوں گی اس قید سے میں۔۔۔۔
اپنے گھر جاٶ ں گی۔۔۔۔
احان کے ساتھ رہوں گی۔۔۔
۔ آخری جملے پر وہ شرما سی گٸی تھی۔۔۔۔
وہ خوشی سے پاگل ہو رہی تھی۔۔۔
احان کی کال نہیں آٸی۔۔۔۔ سارہ نے پوچھا۔۔۔۔
نہیں ۔۔۔ کال تو نہیں آٸی۔۔۔ پر بابا بتا رہے وہ کہہ رہے جلدی رخصتی کرنی ہے۔۔۔۔ ہانیہ کا چہرہ گلابی ہو رہا تھا۔۔۔۔۔
اوۓ ہوۓ۔۔۔۔۔۔کیا بات ہے جناب۔۔۔۔۔ اب کہاں رہا جانا ۔۔۔ ان سے ۔۔۔ سارہ نے آنکھ دباٸی۔۔۔۔
ہانیہ نے شرماتے ہوۓ اسے چپت لگاٸی۔۔۔۔۔
وہ بار بار موباٸل کی سکرین کو دیکھ رہی تھی۔۔۔۔ احان کو تو اتنے مسجیز کر دینے چاہیے تھے ابھی تک۔۔۔
دھڑکتے دل کے ساتھ اس کا نمبر ملایا۔۔۔۔
لیکن ۔۔۔ اس نے کاٹ دیا۔۔۔۔
بی زی ہوں گے۔۔۔۔ اس نے ہونٹ دانتوں کے نیچے دبا کے سوچا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
احان دو دن میں رخصتی چاہتا تھا۔۔۔ حیدر ہانیہ کو گھر لےآۓ تھے۔۔
حیدر نے احان کو بہت سمجھایا کہ کچھ دیر ٹھہر جاتے ہیں ردا اور اس کے بچے بھی آ جاٸیں امریکہ سے۔۔۔
پر وہ بضد تھا ۔۔۔ جلدی کریں۔۔۔۔
وہ گھر آٸی تو جیسے اس کے اندر تک سکون اتر گیا تھا۔۔۔۔
بابا نے یقیناََ احان کو میری ساری مجبوری اور کہانی سنا دی ہو گی۔۔۔ اسی لیے وہ شادی کرنے پر مان گۓ۔۔۔۔
وہ خود ہی سوچ سوچ کر خوش ہو رہی تھی۔۔۔۔
وہ آج حیدر ہاوس۔۔ سے ہاسپٹل آ رہی تھی۔۔۔ کار کی ونڈو سے وہ بار بار ہاتھ باہر نکال رہی تھی۔۔۔۔ اسے آج یہ ہوا کچھ انوکھی سی ہی لگ رہی تھی۔۔۔۔
پیاری سی مدھم سی اسے چھیڑتی ہوٸی۔۔۔۔ اس کے ساتھ اٹھکیلیاں کرتی ہوٸی۔۔۔۔۔ وہ بہت خوش تھی آج ۔۔۔ بار بار احان کے ہونٹوں پر سجی مسکراہٹ نظر آتی تو کبھی۔۔۔ اس کی آنکھوں میں وہ محبت کا سمندر۔۔۔۔
وہ ہاسپٹل میں سب سے پہلے تمنا کہ پاس گٸی تھی۔۔۔
کیسی ہو ۔۔۔ کسی چیز کی ضرورت تو نہیں۔۔۔اس نے پیار سے تمنا کو گلے لگا کر پوچھا۔۔۔۔
ساجدہ حیران اور شرمندہ سی اسے دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔
آپا۔۔۔۔ اماں کا باٸی پاس کیسے ہوگا ۔۔۔۔ ہمارے پاس تو اتنے پیسے بھی نہیں ہیں۔۔۔۔
میں تو ہوں نہ۔۔۔۔ اس نے پیار سے تمنا کا چہرہ اہنے ھاتھوں میں لیا۔۔۔
زری۔۔۔ بہادر اور فاطمہ کیسے ہیں۔۔۔ گھر کون ہوتا ہے ان کے پاس۔۔۔۔
آپا ۔۔۔ بہادر۔۔۔۔ بھاگ گیا تھا گھر سے پچھلے سال۔۔۔۔ پھر واپس نہیں آیا۔۔۔۔ اسی کا سوچ سوچ کر اماں کی یہ حالت ہو گٸی ہے۔۔۔۔ کہ ان کو دل کا ہی مسٸلہ ہو گیا۔۔۔۔
کیا۔۔۔۔ ہانیہ کا منہ اور آنکھیں کھلی کی کھلی رہ گٸں۔۔۔۔ بہادر گھر سے بھاگ گیاتھا۔۔۔۔ ستیلے ہی سہی تھے تو سب اس کےباپ جاۓ۔۔۔ اور اسی نے تو پالا تھا سب کو۔۔۔۔
اس کی آنکھوں میں پانی آ گیا۔۔۔
اس نے اب ساجدہ کی طرف دیکھا تھا۔۔۔۔
اس کی گدھ جیسی مکار انکھوں میں اب ندامت کےآنسو تھے۔۔۔
جیسے ہی ہانیہ نے اس کی طرف دیکھا۔اس نےہاتھ معافی کے انداز میں جوڑ لیے۔۔۔۔
ہانیہ کتنی دیر اسے کھڑی ایسے دیکھتی رہی پھر اس کے ھاتھ نیچے کر کے وہاں سے چل پڑی۔۔۔
سٹاف روم میں مریم کو چھوڑ کر سب خوش تھے۔۔۔۔
چھپی رستم کہیں کی۔۔۔۔ کر دیا پاگل اس اکڑو شہزادے کو۔۔۔۔
سعدیہ اسے چھیڑ رہی تھی۔۔۔۔
احان کا ایک مسیج آیا تھا صرف اسے جس میں لکھا تھا کہ بس کسی کو ہمارٕے نکاح کا پتہ نا چلے پہلے ہاسپٹل میں۔۔۔۔۔۔
اس لیے۔۔۔ہاسپٹل میں سب یہی سمجھ رہے تھے کہ احان نے ہانیہ کو پرپوز کیا ہے اور اب شادی ہے دونوں کی۔۔۔۔۔
ہانیہ کی نظریں بار بار احان کو ہی تلاش کر رہی تھیں۔۔ پر وہ کہیں بھی نہیں تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
احان نے سادگی سے رخصتی کا کہا تھا۔۔۔۔ پر پھر بھی حیدر نے رشتہ دار اکٹھے کر لیے تھے۔۔۔۔
وہ اس سب سے چڑ کے کمرے میں بیٹھا ہوا تھا۔۔۔۔
با ہر مہمانوں کا بھی شور شرابا تھا۔۔۔۔
اسلم اس کی شیروانی لے کر آیا تھا۔۔۔
سیاہ رنگ کی شیروانی۔۔۔بلکل اسی طرح تھی جسے اس کے جلے ہوۓ دل کی راکھ ہو۔۔۔
اس نے شیروانی پہنی۔۔۔ اور اپنے سراپے کو۔۔۔ آینے میں دیکھا۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔۔ احان۔۔۔۔۔ تم خود کو سمجھتی ہو کہ۔۔۔ تم جب چاہو ۔۔ میری زندگی کے ساتھ ۔۔۔ کھلواڑ کھیلو۔۔۔ مجھے دھوکا دو۔۔۔ اور میں تمھیں بخش دوں۔۔۔۔
بھول ہے تمھاری۔۔۔۔ تمہیں ہر اس پل کا حساب دینا ہو گا۔۔۔ جس جس پل تم نے میری تزلیل کی۔۔۔ میرے اوپر جھوٹا الزام لگایا۔۔۔۔
پھر مجھے محبت کے جھوٹے جال میں پھنسا کر۔۔۔ میرے جزبات کا مزاق اڑایا۔۔۔۔
اس کی گردن اکڑ گٸی تھی۔۔۔۔
تمہیں کیا پتا کہ میں تم سے سچی محبت کر بیٹھا تھا ۔۔۔ اور تم ھنستی ہو گی۔۔۔۔ ھنستی ہو گی۔۔۔۔۔ کہ کیسا بیوقوف ہے۔۔۔۔
ڈریسنگ پر اتنی زور سے ہاتھ مارا کہ اس پر پڑی ساری چیزیں زمین پہ ڈھیر ہو گٸی تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اس کے قریب بیٹھا تھا۔۔۔۔ اس کے دل کا مالک۔۔۔۔ اس کی روح میں بسنے والا۔۔۔۔ اس کا شہزادہ۔۔۔۔ احان حیدر۔۔۔۔ سیاہ رنگ کی شیروانی۔میں ملبوس۔۔ غضب ڈھا رہا تھا۔۔۔۔ جس کے کالر پر صرف ہلکا سا سرخ موتی اور نقشی کا کام تھا۔۔۔۔ اور اس کی خوشبو۔۔۔۔ اس کے اندر اتر رہی تھی۔۔۔۔
اس کے جسم کا رواں رواں۔۔۔ خوش تھا ۔۔۔ پر ساتھ بیٹھے۔۔۔ احان کے تن بدن میں آگ سی جل رہی تھی۔۔۔۔
ریحم سٹیج پر آٸی تھی۔۔۔ اور ان کے پاس والے صوفے پر بیٹھ گٸ تھی۔۔۔ اس کی گود میں اس کی چھوٹی سی بیٹی تھی۔۔۔۔
کیسے ہو۔۔۔ اس نے احان کی طرف دیکھ کر کہا۔۔۔
احان نے کوٸی جواب نہیں دیا۔۔۔۔
احان حیدر ۔۔۔ مجھے چھوڑنا تو بنتا تھا تمھارا۔۔۔ اس جیسی۔۔۔ حور تو کسی کو بھی پاگل کر دے اور وہ جان تک دے دۓ۔۔۔
تم نے تو پھر اس کے حسن کے آگے ہماری نام نہاد محبت ہی قربان کی تھی۔۔۔۔ طنز تھا ریحم کے لہجے میں۔۔۔ اس نے احان کے قریب ہو کر سر گوشی کے انداز میں یہ زہر اگلا تھا۔۔۔
احان ۔۔۔ کا چہرہ اور سخت ہو گیا تھا۔۔۔۔
جبڑے باہر کو واضح ہو رہے تھے۔۔۔۔ دل کر رہا تھا ابھی اٹھے اور ہانیہ کو دھکا دے دے سٹیج سے ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دھڑکتے دل کے ساتھ۔۔۔ بیڈ پر بیٹھی ہوٸی تھی۔۔۔۔ رات کے تین بج گۓ تھے۔۔۔ جب احان کمرے میں آیا۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: