Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 19

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 19

–**–**–

وہ خاموشی سے آ کر سامنے لگے صوفے پر بیٹھ گیا تھا۔۔۔۔اس نے سر دونوں ہاتھوں میں جکڑا ہوا تھا۔۔۔۔ایسے جیسے بالوں کو نوچ رہا ہو۔۔۔
ہانیہ نے کچھ دیر کی خاموشی کے بعد جھکی ہوٸی نظریں اٹھا کر دیکھا۔۔۔ اسکے مسکراتے لب اچانک سنجیدہ ہو گۓ تھٕے۔۔
احان کیا ہوا آپکو۔۔۔ اس کی گھبراٸی سی آواز خاموش کمرٕے میں گونجی۔۔۔۔
احان نے کوٸی جواب نہیں دیا۔۔۔
وہ پریشان سی ہو کر لہنگا سنبھالتی دوپٹے کو اکٹھا کرتی بیڈ سے اتری تھی۔۔۔۔
وہ سر کو دونوں ہاتھوں میں جکڑے زمین کو گھور رہا تھا۔۔۔۔
احان کیا ہوا۔۔۔ وہ تھوڑا سا نیچے جھکی۔۔۔۔۔
احان۔۔۔۔ اس نے احان کا ہاتھ پکڑا۔۔۔۔
چپ کرو۔۔۔۔ چپ کرو۔۔۔ وہ اتنی زور سے دھاڑتا ہوا ایک دم اٹھا تھا۔۔۔۔ہا نیہ کانپ گٸی تھی۔۔۔۔
اس نے اتنی زور سے ہانیہ کے منہ کو اپنے آہنی ہاتھ کی انگلیوں میں دوبوچا تھا کہ تکلیف سے اس کی کراہ نکل گٸی۔۔۔
آہ۔۔۔۔ اس کی آنکھوں میں درد سے پانی آ گیا تھا۔۔۔
تم خود کو کیا سمجھتی ہو ہاں۔۔۔ کیا سمجھتی ہو۔۔۔ جب چاہو۔۔۔ مجھے پاگل بناٶ۔۔۔ اپنے جال میں پھنساٶ۔۔۔ وہ اسکے منہ کو پکڑ کر دبوچ رہا تھا۔۔۔ نہ تو کچھ بول پا رہی تھی نا اس ظالم سے اپنا آپ چھڑوا پا رہی تھی۔۔۔۔
تم نےمیری زندگی کا مزاق بنا کر رکھ دیا ہے۔۔۔۔ اس نے ایک جھٹکے سے اسے چھوڑا تھا وہ لڑ کھڑاتی۔۔۔ہوٸی بیڈ پرگری تھی۔۔۔۔
ابھی تو کچھ سمجھ نہیں آ رہا تھا۔۔۔ پر احان کی باتیں اسکا لہجا سب سمجھا رہا تھا اسے۔۔۔۔
اب میں تمہیں بتاتا ہوں کہ اذیت کیا ہوتی۔۔۔درد کیا ہوتا۔۔۔
وہ اس پرجھکا تھا۔۔۔۔
بہت شوق تمہیں مجھ سے شادی کا ہاں۔۔۔۔۔ آنکھوں میں خون اور منہ سے زہر اگلتا۔۔۔ یہ اسکا احان تو ہر گز نہیں تھا۔۔۔۔
یہ تو وہ بیس سال پہلے والا احان تھا۔۔۔۔ ۔۔
اس کا احان تو اسے چھوتا بھی ایسے تھا جیسے وہ کوٸی پھول ہوتی۔۔۔۔
یہ تو وہ احان تھا۔۔۔ جو اسے دھوکے باز سمجھتا تھا۔۔۔۔
احان نے اسے بازو سے پکڑ کے سیدھا کیا تھا۔۔۔ اور خود بھی بیڈ پر بیٹھ گیا تھا۔۔۔
کیوں ۔۔۔ کیوں تم پیچھے پڑی ہو میرے۔۔۔۔ وہ اسے پاگل سا لگا تھا اچانک۔۔۔۔
شاٸید ریحم کی زہر جیسی باتوں کا زیادہ اثر تھا کہ وہ اسے کھا جانے والی نظروں سے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
آج سے میں جیسے کہوں گا۔۔۔ ویسے ہی تمہیں رہنا ہو گا۔۔۔ جیسے میں چاہوں گا ویسا ہی ہو گا۔۔۔۔ تم نے جس طرح زبردستی میری زندگی میں داخلہ لیا ہے۔۔۔
اب تمہیں ۔۔۔ میں دکھاتا ہوں زبردستی سے کسی کو اپنے مطابق زندگی گزارنے پر مجبور کرنا کیسا ہوتا ہے۔۔۔۔
ہانیہ کی آنکھوں میں پھر سے وہی خوف در آیا تھا جو اسے پہلے آتا تھا اس سے۔۔۔۔
وہ سہم سی گٸ تھی۔۔۔۔
احان ایک دم سے طنزیہ ہنسا تھا۔۔۔۔ اپنی یہ ایکٹنگ اور نوٹنکی صرف بابا کے سامنے کرنا۔۔۔ سمجھی تم۔۔۔ احان نے اس کا ہاتھ پکڑ کر اتنی زور سے کھینچا تھا۔۔۔ وہ ہل کے رہ گٸ تھی۔۔۔
اب اٹھو اور یہ اتارو۔۔۔ کیا پہنا ہوا ہے ۔۔۔ احان نے نگواری سے دیکھا۔۔۔۔
وہ ابھی بھی حیران سی بیٹھی تھی۔۔۔۔ میں آپ کو ہر گز دھوکا نہیں دینا چاہتی تھی۔۔۔ دوسری دفعہ۔۔۔ احان۔۔۔ یہ تو صرف بابا۔۔۔ وہ دل میں سوچ کر ہی رہ گٸی تھی۔۔۔
وہ دھیرے سے اپنے خواب اپنے ارمان اور اپنا لہنگا اٹھا کر بیڈ سے اتر گٸی تھی۔۔۔
جب وہ کپڑے بدل کے آٸی تو وہ بیڈ پر آنکھوں پر بازو رکھ کر لیٹا ہوا تھا۔۔۔۔ آج تو آنسو بھی نہیں تھے بس حیرانی ہی تھی۔۔۔ کہ یہ کیسی محبت تھی اس شخص کو جو پل میں ہی سوٸی ہوٸی پرانی نفرت میں بدل گٸی۔۔
وہ خاموشی سی بیڈ کے کونے پربیٹھی اس کو دیکھ رہی تھی۔۔۔ اس کے پاٶں کے پاس بیٹھی ۔۔۔
اس نے دھیرے سے احان کے پاٶں پر اپنا ہاتھ رکھا تھا۔۔۔ احان مجھے معاف۔۔۔
ابھی اس نے بات پوری بھی نہیں کی تھی۔۔۔ کہ احان نے تیزی سے اپنے پاٶں کھینچ لیے۔۔۔۔
اور ایک بات۔۔۔۔جب میں کچھ پوچھوں اسکاجواب بس۔۔۔ سمجھی۔۔۔ تمھاری کسی بھی قسم کی کوٸی جھوٹی بکواس مجھے نہیں سننی۔۔۔
یہ چادر اٹھاٶ اور سامنے صوفے پر لیٹو گی تم۔۔۔۔
اٹھو اب۔۔۔۔ وہ زور سے دھاڑا تھا۔۔۔
وہ تیر کی سی تیزی سے اٹھی اور صوفےپر جا کر لیٹ گٸی۔۔۔
خود وہ پھر سے بیڈ پر آنکھوں پر الٹا بازو رکھ کے لیٹ گیا۔۔۔۔۔
وہ آہستہ آہستہ ۔۔۔ رو رہی تھی۔۔ سسکیوں کی آواز احان کے دماغ میں لگنےلگیں۔۔۔۔
وہ تیزی سے اٹھا اور اس پر جھکا تھا۔۔۔۔
چپ۔۔۔ اب آواز نا آۓ۔۔۔ مجھے یہ ڈرامےنہیں چاہیے۔۔۔
اور ہاں بابا کے ساتھ کسی بھی بات کا رونا نہیں رونا اب کی بار ۔۔۔
وہ خود پھر سے بیڈ پر جا کر لیٹ گیا تھا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ساری رات نا سو پاٸی تھی۔۔۔ بوجھل ہوتے ہوۓ سر کے ساتھ اس نے آنکھیں جو صرف بند کی ہوٸ تھی۔۔ ان کو کھولا۔۔۔۔۔
احان مزے سے بیڈ پر سو رہا تھا۔۔۔۔
اسے ساری رات صوفے پر چادر میں نیند بھی نہیں آٸی۔۔۔۔
وہ اٹھ کے بیڈکے پاس آٸی تھی۔۔۔۔
کتنا خوبصورت ہے ۔۔۔ احان ۔۔۔ حیدر۔۔۔۔ اس کی نظر کہیں جا کر اس دشمنِ جان کے خوبرو چہرے پر ٹک گٸی تھیں۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ پر۔۔ اسے اسکی محبت پر۔۔ اس کےمخلص ہونے پر یقین ہی نہیں تھا۔۔۔ وہ تو اسے ایک مکار۔۔ چال باز لڑکی سمجھتا تھا۔۔۔۔
اسکو یہ لگتا تھا کہ اب ہاسپٹل میں بھی میں اس کے ساتھ جو بھی کیا سب جھوٹ تھا۔۔۔۔
اللہ کیسے یقین دلاٶں اس ظالم کو کہ میں تو آج سے نہیں پتہ نییں کب سے اس کی محبت میں تڑپتی ہوں۔۔۔۔
میری پہلی اور آخری محبت صرف آپ ہی تو ہیں۔۔۔۔
وہ کتنے مزے سے سو رہا تھا۔۔۔۔ بکھرے سے بال تھے۔۔۔ وجہیہ پیشانی۔۔۔۔ بادامی آنکھیں۔۔۔
وہ۔۔۔ باہر آٸی تو بابا خوش دلی سے ملے۔۔۔۔۔
اوہ میرا بچا۔۔۔۔۔حیدر نے باہیں پھیلاٸیں۔۔۔۔۔ وہ کہاں ہے خبیث۔۔۔۔۔ انھوں نے ہانیہ کو آنکھ ماری۔۔۔
خوشی ان کے ہرانداز سے جھلک رہی تھی۔۔۔۔۔
تمھارے لیے ناشتہ لگواوں بیٹے اٹھ گٸی ہو تم۔۔۔۔ وہ تو بہت لیٹ اٹھے گا۔۔۔۔
بابا ان کے ساتھ ہی کروں گی میں۔۔۔۔۔۔۔
اچھا۔۔۔ بابا ناشتہ میں بناتی ہوں ۔۔۔ آپکا۔۔۔
نہیں نہیں تم پاس بیٹھو۔۔۔ تو باتیں کرتے ہیں۔۔۔ بابا بڑے خوش تھے ہانیہ کو گھر میں دیکھ کر۔۔۔۔
تقریباََ بارہ بجے کے قریب وہ کمرے میںں واپس آٸی تو ۔۔۔ احان اپنے موباٸل پر کچھ دیکھنے میں مصروف تھا۔۔۔
جیسے ہی وہ کمرے میں داخل ہوٸی تو ۔ احان نے موباٸل ایک طرف رکھ دیا۔۔۔۔
ادھر آٶ۔۔۔۔ انگلی کے اشارے سے ایسے بلایا جیسے وہ اس کی کو زرخرید کنیز ہو۔۔۔۔۔
تم کس کی اجازت سے باہر گٸی ۔۔۔۔ دانت پیستے ہوۓ اپنے مخصوص انداز میں پوچھا۔۔
جی۔۔۔۔۔ ہانیہ حیران ہوٸی۔۔۔۔
جی۔۔۔۔۔ جب تک میں اٹھوں نہیں تم باہر نہیں جا سکتی۔۔۔ سنا تم نے۔۔۔۔
لیکن احان بابا۔۔۔ابھی وہ ھاتھ ہلا کر بات ہی کر رہی تھی۔۔۔
میں نے رات تمہیں سمجھایا نا جتنا پوچھوں بس اتنا جواب۔۔۔۔
وہ بیڈ سے اٹھا تھا۔۔۔۔
آپ کے لیے ناشتہ بناٶں۔۔۔۔ اس نے پیار سے کہا۔۔۔۔ وہ تو جو ظالم۔۔۔ہے۔۔ لیکن ہانیہ کیا کرے اپنے دل کا جس کو یہ ستم بھی ہنس کر قبول تھے۔۔۔۔
تمہیں یہ تکلف کرنے کی ضرورت نہیں۔۔۔۔ میں تمھارے ہاتھ کا ہرگز نہیں کھاٶں گا۔۔۔۔ ۔۔۔اور باتھ میں گھس گیا۔۔۔۔۔
وہ چپ سی کھڑی رہ گٸی تھی۔۔۔۔۔
بالوں کو ٹاول سے رگڑتا باہر آیا تھا۔۔۔۔۔ وہی غصے والا چہرہ۔۔۔۔ اپنے کپڑے نکال کر وہ سیدھا ہوا۔۔۔۔
وہ اسی جگہ اسی حالت میں کھڑی ھاتھوں کو مسل رہی تھی۔۔۔۔
کن اکھیوں سے اس کے سراپے کو احان نے آیٸنے میں دیکھا۔۔۔۔۔ کوٸی حسین چڑیل ہی تو لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔ احان کا خون جل گیا۔۔۔۔۔۔
ڈریسنگ سے واپس آیا تو ھلکے پھلکے سی ٹی شرٹ اور جینز میں تھا۔۔۔۔
اب چلو۔۔۔۔ باہر۔۔۔۔ دوبارہ جب میں کہوں تب جاٶ گی۔۔۔ سمجھی۔۔۔
وہ اس کے اس عجیب سے پاگل پن پر حیران ہو رہی تھی۔۔
احان یہ سب کرکے اسے کیا ازیت دینا چاہتا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ولیمہ۔۔۔۔نہیں ہو گا۔۔۔۔ وہ دو ٹوک الفاظ میں بابا سے کہہ رہا تھا۔۔
آپ چاہتے تھے میں اس شادی کروں ۔۔۔ ہو گٸی۔۔۔۔
لیکن اب وہی ہو گاجو میں چاھتا ہوں۔۔۔۔ فورک سے اٹھا کے املیٹ منہ میں ڈالہ۔۔۔۔
حیدر۔۔ حیران ہو کر احان کو دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔
اٹھو مارکیٹ جانا ہے۔۔۔۔ بڑے رعب سے ہانیہ کو کہا۔۔۔۔۔
وہ کٹھ پتلی کی طرح اسکے ساتھ چل دی۔تھی۔۔۔۔۔
احان نے اسے بہت ساری جینز ٹی شرٹس پتہ نہیں کیا کیا لے دیا۔۔۔۔۔
احان یہ۔۔۔۔ یہ۔۔۔۔ ایسےمیں ۔۔۔۔ میں کب پہنتی یہ سب۔۔۔۔ وہ حیران ہو کر کہہ رہی تھی۔۔۔۔
پہلے تم اپنی مرضی کرتی تھی۔۔۔۔ لیکن آج سےتمھارے ہر کام میں میری مرضی چلے گی۔۔۔۔
احان پلیز آپ ایسا نییں کر سکتے میرے ساتھ۔۔۔۔ وہ روہانسی ہوٸی۔۔۔۔
ہاں میں کچھ بھی نا کروں۔۔۔۔ اور تم جو دل چاہے بنا میری اجازت کرتی رہو میری زندگی سے۔۔۔۔۔
وہ کار میں شاپر پھینک کر بیٹھا۔۔۔۔۔۔
آج کے بعدمیں تمھیں انہی کپڑوں میں دیکھوں سنا تم نے۔۔۔۔وہ کار میں بیٹھ کر ۔۔۔۔ دانت پیستے ہوے اس پر دھاڑا تھا۔۔۔
اس نے آج تک ایسے کپڑے نہیں پہنے تھے ۔۔۔۔ وہ تو لوز سے کرتے پر دوپٹے کو بھی ایسے اپنے جسم کے گرد گھوما تی تھی کہ۔۔۔۔ اور اب یہ سب سارا سارا دن وہ کیسےپہنے گی۔۔۔
گھر آۓ تو رات ہو چکی تھی۔۔۔۔
جاٶ وہی ناٸٹ سوٹ پہن کر آٶ۔۔۔۔۔ ٹراٸوزر شرٹ کی شکل میں وہ سوٹ تھا۔۔۔
وہ ویسے ہی ان کپڑوں کو پکڑ کر کھڑی تھی۔۔۔۔ کبھی ان کو دیکھتی کبھی احان کو۔۔۔۔آنکھوں میں موٹے مٹے آنسولیے۔۔۔۔
اور وہ تھا۔۔۔کہ اس پر اس کے آنسو آج کوٸی اثر نہیں کر رہے تھے۔۔۔ اسے تو یہ سب مکاری لگ رہی تھی۔۔۔۔۔
وہ کپڑے پہن کر بڑی سی چادر کو لے کر باہرآٸی تھی۔۔۔۔۔
وہ اتنا عجیب محسوس کر رہی تھی۔۔۔۔ بے چینی سی ہو رہی تھی۔۔۔۔۔
احان نے اسے دیکھا۔۔۔ کبھی گلے کو اوپر کر رہی تھی تو کبھی۔۔۔ شرٹ کو پکڑ پکڑ کر نیچے کھینچ رہی تھی۔۔۔۔۔
ابھی تو اور بے سکون کرنی ہےتمھاری زندگی۔۔۔۔ مسز احان۔۔۔۔
احان نے چڑ کے سوچا۔۔۔۔۔
وہ سمٹ کر صوفے پر لیٹ رہی تھی۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: