Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 2

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 2

–**–**–

جب وہ لان میں اتری تو۔۔ دوپہر کا وقت تھا۔۔۔ خاموشی کا راج تھا۔۔۔ وہ دبے قدموں گھر کے داخلی دروازے کی طرف بڑھی تھی۔۔۔۔
داخلی دروازہ کھلا تھا۔۔۔ وہ آہستہ آہستہ قدم اٹھاتی ہوٸی اندر داخل ہوٸی۔۔
لاوٸنچ میں۔۔۔ پنکھا چلنے کی آواز آ رہی تھی۔۔۔ وہ تھوڑا سا اور آگے آٸی۔۔۔
وہی باٸیک والا لڑکا بے سدہ سو رہا تھا۔۔۔ اسکا ایک بازو۔۔ صوفے سے نیچے لٹک رہا تھا۔۔۔ اور ایک سینے پہ تھا۔۔۔ ۔۔۔
وہ تھوڑی دیر خوف سے کھڑی اسے دیکھتی رہی۔۔۔۔ گھر میں دو کمرے تھے۔۔ دونوں کے دروازے لاونچ میں کھل رہے تھے۔۔۔ ایک طرف کچن تھا۔۔ ۔۔ ڈراٸنگ روم کی دیوار کے ساتھ اوپر کا زینہ تھا۔۔۔
اسے وہ جگہ سب سے بہتر لگی تھی اپنی پناہ گاہ کے لیے۔۔۔
اس نے اپنی چپل اتار کر اپنے ھاتھ میں پکڑی۔۔۔ اور دبے قدموں۔۔ اوپر کی سیڑھیاں چڑھ کے اوپر آ گٸی تھی۔۔۔ سیڑھیاں چڑھتے ہی۔۔ ایک کمرے کا دروازہ کھلتا تھا۔۔ اس نے آہستہ سے دروازہ کھولا تھا۔۔۔۔
دروازہ ہلکی سی چرچراہٹ سے کھلا تھا۔۔۔ کمرے میں ایک ٹوٹی چارپاٸی کے سوا اور کچھ نہیں تھا۔۔۔ ۔۔ وہ بھی دھول مٹی سے اٹی پڑی تھی۔۔۔۔ اسے یہ جگہ ہی بہتر لگی۔۔۔
وہ دبک کر وہاں بیٹھ گٸی۔۔ اور شام ہونے کا انتظار کرنے لگی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گاڑی ۔۔۔ پورچ میں روک کر وہ نیچے اترا۔۔ ایک ھاتھ سے ٹاٸی
کی ناٹ ڈھیلی کرتے ہوۓ وہ داخلی دروازے کی طرف آرہا تھا۔۔۔ آج ھاسپٹل میں اسکی ناٸیٹ شفٹ نہیں تھی اسی لیے جلدی گھرآ گیا تھا۔۔۔
آگۓ۔۔ آج جلدی آ گۓ۔۔۔ حیدر نے ٹی وی کی آواز آہستہ کی۔۔۔ وہ لاٶنچ میں نیوز سننے میں مصروف تھے۔۔..
بس آج ناٸیٹ شفٹ نہیں تھی اس لیے۔۔ وہ مختصر جواب دے کر آگے بڑھا۔۔۔۔
کھانا لگاٸیے اسلم۔۔۔۔۔۔۔ حیدر کا اگلا سوال۔۔۔۔
وہ اپنے بیڈ روم کے لیے سیڑھیاں چڑھتے چڑھتے رک گیا۔۔۔
نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ مختصر جواب دیتا ہوا ایک بازو پہ کوٹ ڈالے وہ اوپر چڑھ گیا۔۔۔۔
بار بار ایک ہی خیال تنگ کر رہا تھا۔۔۔۔۔
جب وہ اسے بری طرح ڈانٹ رہا تھا۔۔ تو اسکا چہرہ۔۔۔۔
کیا ایک نام ہانیہ ہو نا اس بچاری کا جرم تھا۔۔۔۔ دنیا میں تو کتنی ہانیہ ہوں گی۔۔۔ کیا وہ اب ان سب سے بدلہ لیتا پھرے گا۔۔۔ وہ بیڈ پر پیر نیچے لٹکا کے ڈھیر تھا۔۔۔۔۔
جو بھی ہے احان حیدر ڈاکٹر ہانیہ کے ساتھ غلط ہوا۔۔۔۔ اس نے دونوں ہاتھوں سے ماتھے کے بال پیچھے کرتے ہوۓ ہاتھوں کو اایک دوسرے میں اڑا کے اپنے سر کا تکیہ بنایا۔۔۔
خدا کا واسطہ مجھے مت نکالو میں کہاں جاٶں گی میرا کوٸی نہیں ہے۔۔۔۔ پلیز پلیز۔۔۔ معصوم سی آواز اس کے کانوں میں گونج رہی تھی۔۔۔۔ اور وہ منظر پھر سے اسکی آنکھوں کے آگے تھا۔۔ جب دس سال پہلے اس نے۔۔ ہانیہ نامی لڑکی کو دھکے دے کر گھر سے باہر نکال دیا تھا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ شام کو چھت پہ نکلنے سے پہلے۔۔۔۔ نیچے جھانک رہی تھی۔۔۔ سیڑھیوں کٕی اٶٹ سے۔۔۔ نیچے کی طرف جھانکا۔۔۔ صوفہ خالی تھا۔۔۔ اور بلکل خاموشی تھی۔۔۔ وہ آدھا گھنٹہ کسی آہٹ کو سننے میں مصروف تھی۔۔۔ لیکن کوٸی ایک آہٹ تک بھی نا سناٸی دی تھی اسے۔۔۔۔ وہ ہمت کر کے تھوڑے سے زینے اور نیچے اتری۔۔۔۔ آہستہ ۔۔ آہستہ۔۔ وہ نیچے آتی گٸی۔۔۔ ۔۔۔
داخلی دروازہ بند تھا۔۔۔ اس نے دروازے کو پکڑ کر اپنی طرف کھینچا۔۔ دروازہ باہر سے بند تھا۔۔۔ ۔۔
اس نے تیزی سے سیڑھیاں اوپر چڑھیں۔۔ اور چھت کے لیے۔۔ لگاۓ گے دروازے کی کنڈی گھوما کر کھولی۔۔ جو باہر چھت کی طرف کھل رہی تھی۔۔۔ دروازہ کھلا تو ۔۔ مٹی سے اٹی چھت تھی۔۔۔ ۔۔ وہ ننگے پاٶں دوڑتی ہوٸی اس دیوار کی طرف بھاگی۔۔۔جو ان کے گھر کا سارا منظر دیکھاتی تھی۔۔۔۔
وہ دیوار میں بنے پھولوں کے نقش و نگار۔۔ والے ھوادان میں سے جھانک کے اپنے گھر کا منظر دیکھا۔۔۔۔
ایک آدمی ۔۔ سیاہ رنگت والا جس کے چہرے پہ بلا کی منحوسیت تھی۔۔ گلے میں پھولوں کا ہار پہنا ہوا تھا۔۔ ۔
وہ غصے میں بھرا ہوا تھا۔۔۔۔۔ ان کے لان سے پہلے آنے والے صحن میں چکر لگا رہا تھا۔۔۔
مجھے لڑکی چاھیے ہر حال میں۔۔ دو آدمیوں نے اس کے باپ کو پکڑا ہوا تھا۔۔۔ ۔۔
وہ سیاہ صورت آدمی باربار ساجدہ پہ جا کر چیخ رہا تھا۔۔
مجھے لڑکی چاھیے۔۔۔ سمجھی تم۔۔ ہلکی ہلکی آواز اس کے کانوں میں پڑ رہی تھی۔۔۔۔
نہیں تو میرے پیسے نکال۔۔۔ اس آدمی نے اب ساجدہ کا گلا دبوچ لیا تھا۔۔۔۔۔
کون سے پہ۔۔۔پہ۔۔۔۔پیسے۔۔ اطہر کی ٹوٹی ہوٸی گھٹی سی آواز نکلی۔۔۔۔۔
تمھاری بیوی نے لیے پیسے۔۔۔ نزیر کمینگی سے اس کے باپ کے آگے جا کر بولا۔۔۔۔ اطہر نے بے یقینی سے ۔۔ اپنی بیوی کی طرف دیکھا۔۔۔۔
وہ۔۔۔ وہ۔۔۔ شادی کی ۔۔ تیاری اور۔۔۔ تمھارے کاروبار ۔۔ کے لیے ۔۔۔ لیے تھٕے میں نے۔۔۔ وہ گڑبڑا گٸی تھی۔۔۔
اطہر کا سر نیچے ڈھلک گیا تھا۔۔۔۔
اسکے باقی بہن بھاٸی شاٸید اندر ہی تھے۔۔۔
ایک منٹ۔۔ایک منٹ ۔۔۔ ساجدہ اپنی گدھ جیسی آنکھیں گھوما کر بولی۔۔۔ یہ ساتھ والے گھر میں دیکھو۔۔۔ وہ کمبخت۔۔۔ یہاں گٸی ہو گی۔۔۔۔۔۔
افف۔۔۔۔ ہانیہ کا دل دھک سے رہ گیا۔۔ پیروں کے نیچے سے زمین نکل گٸی۔۔۔ ہونٹ سمیت پورا جسم خوف سے کانپنے لگا۔۔۔۔ اس وہ ایک دم نیچے ہوٸی۔۔ پھر آہستہ آہستہ جالی کی اوٹ سے پھر سے دیکھا۔۔۔
نزیر کے آدمی دیوار پھلانگ رہے تھے۔۔۔۔۔
آہ۔۔۔ میرے خدا مجھے بچا لے۔۔۔۔ اے اللہ بچا لے مجھے۔۔۔۔۔ وہ زور زور سے ہل کے دعاٸیں مانگنے لگی۔۔۔۔ دل زور زور سے خوف سے دھڑک رہا تھا۔۔۔۔۔
اس نے پھر سےاوپر ہو کر دیکھا۔۔۔ وہ تین آدمی لان میں گھوم رہے تھے۔۔ ایک داخلی دراوزے کے لاک کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
اوہ خدایا۔۔۔۔۔۔۔ اوہ خدایا۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ کانپ رہی تھی۔۔۔۔ اس نے زور سے اپنی آنکھیں بند کی۔۔۔۔۔ نیچے سے کھٹ پٹ کی آوازیں بند ہوٸی۔۔۔۔ اس نے ڈرتے ہوۓ۔۔ آنکھیں کھولی۔۔۔
پھر تھوڑا سا اوپر ہوٸی۔۔۔۔۔
وہاں کچھ بھی نہیں ہے۔۔۔ ان میں سے ایک ساجدہ کو کہہ رہا تھا۔۔۔۔۔
پھر ۔۔۔پھر۔۔۔ وہ گھر سے باہر بھاگ گٸی ہو گی۔۔۔۔ ساجدہ نے چلاکی سے آنکھیں گھوماتے ہوٸےکہا۔۔
دو دن تک لڑکی مل جانی چاہیے۔۔۔۔۔ مجھے وہی لڑکی چاہیے ہر حال میں۔۔۔ وہ دھاڑا تھا۔۔۔۔
وہ پاگل لگ رہاتھاپاگل ہو بھی کیوں نہ۔۔۔ وہ پاگل ہی تو کر دینے جتنی دلکش تھی۔۔۔۔
سفید۔۔ دودہ جیسی رنگت۔۔۔ملاٸی جیسی ملاٸم جلد۔۔۔ سنہری ایش۔۔ رنگ کے لمبے بال۔۔۔
بڑی بڑی آنکھیں۔۔۔ ہیزل رنگ کی ۔۔۔چمکتی ہوٸی۔۔
لمبی مڑی ہوٸی پلکیں۔۔۔
۔۔۔ تیکھی چھوٹی سی ناک۔۔۔ بھرے بھرے قدرتی گلابی ہونٹ۔۔ لمبی صراحی دار گردن۔۔۔ اور گردن سے نیچے۔۔ بڑی سی چادر میں چھپا ھوش ربا۔۔ وجود
وہ دوپہر کو سوٸی ہوٸی تھی۔۔ جب چپکے سے ساجدہ نے نزیر کو بلا کر اس دلکش ۔۔۔ ھوش ربا ۔۔ حسینہ کاجلوہ اسے دکھایا تھا۔۔۔ اس کا دماغ ہی تو گھوم گیا تھا۔۔۔ وہ اتنی سی عمر میں ہی۔۔ ایسی دلکش تھی۔۔ تو آگے آگے کیا قیامت ڈھانی تھی اس نے۔۔۔
نزیر کا بس چلتا تو ایک دن میں ہی اٹھا کر لے جاتا اسکو پر ساجدہ اپنے خاوند سے ڈرتی تھی کہ اس کو ابھی اس بات کا پتہ نا چلے۔۔۔
نزیر اپنے بندوں کو لے کرچلا گیا تھا۔۔۔
اب ساجدہ تمنا پہ چیخ رہی تھی۔۔۔ بتا کہاں ہے۔۔۔ ہانیہ۔۔۔
لیکن تمنا چپ سادھے کھڑی تھی۔۔۔
وہ دھڑکتے دل کے ساتھ۔۔ واپس اسی چھت والے کمرے میں آ گٸی۔۔۔ ۔۔۔ کمرے کے ساتھ جڑے باتھ میں اس نے وضو کیا تھا۔۔۔ پھر مٹی سے بھرے۔۔ اس فرش پہ ہی سجدہ ریز ہو گٸی تھی۔۔۔۔ ہر سجدہ کے بعد اسکا منہ ۔۔۔ماتھا مٹی سے اور بھر رہا تھا۔۔۔ انسو کی لکریں۔۔۔ بنتی جا رہی تھی۔۔۔۔ وہ روۓ جارہی تھی۔۔۔ شکر ادا کر رہی تھی۔۔۔۔ ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ریحم کے ساتھ آسکریم پارلر میں بیٹھا تھا۔۔۔
وہ بار بار ریحم کی طرف دیکھ رہا تھا۔۔۔۔ ہونٹوں پہ ہلکی سی مسکراہٹ تھی۔۔۔۔ انکھوں میں شرارت تھی۔۔۔۔
ریحم کے گال تپنے لگے تھے۔۔۔۔
کیا ہے کیوں دیکھے جا رہے ہو ایسے۔۔۔ ریحم خفگی سے بولی۔۔۔۔ ..
احان کو اسے تنگ کرنے میں مزہ۔آ رہاتھا۔۔۔ اس نے اپنی مسکراہٹ کو دباتے ہوۓ کہا۔۔۔ ناک پہ اسکریم لگی ہے تمھارے۔۔۔
کیا فوراََ ریحم۔ اپنا ناک صاف کر نے لگی تھی۔۔۔۔
پھر دونوں کا ایک ساتھ قہقہ گونجا تھا۔۔۔۔۔
چلیں اب ۔۔۔ کچھ دیر بعد ریحم نے کلاٸی پہ بندھی گھڑی کی طرف دیکھتے ہوۓ کہا۔۔۔
مما کو شک ہو رہا تھوڑا تھوڑا۔۔۔ ریحم نے ناز سے احان کو کہا۔۔۔
اس لیے چلتے ہیں اب۔۔۔ وہ بیگ کوکندھے پہ ڈالتی ہوٸی اٹھی تھی۔۔ اس کی اونچی سی پونی لہرا کے آگے آٸی تھی۔۔۔۔
احان دل پکڑ کر رہ گیا اسکی اس ادا پہ۔۔۔۔
اس نے بیگ گھما کے شرارت سے احان کے مارا تھا۔۔۔۔ اٹھ جاٶ اب۔۔۔۔
وہ پھر بھی ڈھیٹ بنا پیار بھری نظروں سے بس اسے دیکھے جا رہا تھا۔۔۔۔
اٹھ جاٶ نا اب۔۔۔۔ ریحم اسکا بازو پکڑ کر زبردستی اٹھا رہی تھی اسے۔۔۔۔
پہلے پرامس کرو رات کو فون پہ بات ہو گی۔۔۔۔ وہ پوری طرح شرارت کے موڈ میں تھا۔۔۔۔
اچھا بابا اٹھیک ہے۔۔۔ ریحم ۔۔۔ مسکرا دی تھی۔۔۔۔ وہ پیارا بھی تو اتنا لگ رہا تھا۔۔۔
جب وہ کالج سے باہر ریحم کو ملنے آتا تو لڑکیاں اس کی ایک جھلک دیکھنے کو ایک دوسرے کو دھکے دینے لگتی تھی۔۔۔ اور اسکی قسمت پہ رشک کرتی تھیں۔۔۔
وہ مسکراتے ہوۓ اٹھا۔۔۔ اور دونوں ایک ساتھ قہقے لگاتے ہوۓ۔۔۔ آسکریم پارلر سے باہر آگۓ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ آج ہاسپٹل کے لیے لیٹ ہو گٸی تھی۔۔۔۔
تیز تیز وہ سیڑھیاں چڑھ رہی تھی۔۔۔ وہ پہلے ہی بوکھلاٸی ہوٸی ۔۔ تھی کہ موڑ مڑتے ہی وہ کسی مظبوط جسم سے ٹکراٸی تھی۔۔۔ وہ بری طرح لڑ کھڑاٸی تھی۔۔۔ جس سے وہ ٹکرٸی تھی اس نے بازو سے پکڑ کر بڑی مشکل سے اسے بچایا تھا۔۔۔
ہانیہ نے نظر اٹھا کے اوپر دیکھا۔۔۔ سامنے۔۔ احان کھڑا تھا۔۔۔
اوہ۔۔۔۔ اس کا دل دھک سے رہ گیا۔۔۔۔
آپ ہر وقت اتنی حواس باختہ کیوں رہتی ہیں۔۔۔ بارعب آواز میں پوچھا گیا۔۔۔
ننھے ننھے پسینے کے قطرے اس کے ماتھے پہ نمودار ہو گۓ تھے۔۔۔
ایک تو وہ بے رحم اتنا قریب تھا۔۔ اوپر سے اسکے کپڑوں سے ابھرتی ہوٸی خشبو۔۔۔ ہانیہ کا دل عجیب طریقے سے دھڑکنے لگا تھا۔۔۔ آج خوف کے بجاۓ دل۔۔ کسی اور ہی دھن میں دھڑک رہا تھا۔۔۔
اوہ ۔۔ میرے اللہ۔۔۔ اس نے دل کو سنبھلنے کی تلقین کی اور وہ تھا کہ آج اس معصوم کی کوٸی بات بھی ماننے کو تیار ہی نہیں تھا۔۔ ہوتا بھی کیسے۔۔۔ جو سامنے کھڑا تھا۔۔۔ وہ شخص وہ تھا۔۔ جس کے نام کے ساتھ وہ اتنے برسوں سے بندھی تھی۔۔۔
جو اس کے روح۔۔ دل۔۔۔۔وجود ۔ ہر چیز کا مالک تھا۔۔۔۔
وہ جس کے لیے اتنے برسوں سے اس نے اپنے جزبات سنبھال کے رکھے۔۔۔۔
جتنی وہ دلکش تھی۔۔۔ تو کتنے قدم تھے جو اس کی طرف بڑھے تھے۔۔۔ لیکن اس کے دل پہ تو بس اک ہی شخص راج کرتا تھا۔۔۔
احان حیدر۔۔۔ اسکا شوہر۔۔۔۔ ۔۔
احان نے غور سے اسکا چہرہ دیکھا۔۔۔ کوٸی حور جتنی حسین تھی وہ لڑکی۔۔۔ پر بیوقوف کتنی تھی۔۔۔
احان نے اپنے دل کو سرزنش کیا۔۔۔
اور آگے بڑھ گیا۔۔۔
وہ دھڑکتے دل اور لرزتے جسم کے ساتھ سیڑھیاں چڑھنے لگی۔۔۔
سٹاف روم میں داخل ہوٸی تو۔۔ سعدیہ اور دیبہ کسی بات پر قہقہ لگا رہی تھیں لیکن اسکی حالت دیکھ کے دونوں خاموش ہو گٸی تھی۔۔۔۔
تمھیں کیا ہوا۔۔ دیبا نے تھوڑا پریشان ہو کر پوچھا۔۔۔۔
وہ چپ رہی اسے تو خود ابھی سمجھ نہیں آ رہی تھی اسے ہوا کیا ہے۔۔۔
اوکے ۔۔ اوکے۔۔۔ مجھے سمجھ آ گٸی ۔۔۔ اسکا سامنا آج پھر ۔۔۔ اس کھڑوس ۔۔۔ ڈاکٹر احان سے ہوا ہوگا ضرور ۔۔۔
یہ ایسے ہی ہو جاتی ان کو دیکھ کے۔۔۔۔ سعدیہ۔۔۔ دیبا کے ھاتھ پہ ھاتھ مار کے ہنس رہی تھی۔۔۔
اے لڑکی۔۔۔ کچھ اور تو نہیں ہے۔۔۔ دیبا نے شوخ سے انداز میں اسکی طرف دیکھا۔۔۔ اس نے دیبا کی طرف دیکھا تو اس نے آنکھ ماری شرارت سے۔۔۔۔ اور دونوں پھر قہقہ لگانے لگی۔۔۔
ہانیہ نے ڈر کے ارد گرد دیکھا۔۔ کہ کسی نے سنا تو نہیں۔۔۔
چپ کرو بدتمیزو۔۔۔ ویسے ہی پتہ تو ہے۔۔۔ کتنی دفعہ ان کے غصے کا شکار ہو چکی ہوں۔۔۔ اس نے خفگی سے منہ بنا کر کہا۔۔
۔۔ ویسے ایک بات ہے۔۔۔ دیبا نے ٹھنڈی آہ بھرتے ہوۓ بات کی تہمید باندھی۔۔۔۔
جس طرح کے ڈاکٹر احان ہیں مجھے نہیں لگتا اس بندےنے کبھی کسی کو پسند کیا ھو گا یا پیار کیا ہوگا۔۔۔۔
تم لوگوں کو کیا خبر۔۔۔ اس نے کسی کو پسند بھی کیا تھا۔۔ اور وہ اس سے پیار بھی کرتا تھا۔۔۔۔ ہانیہ نے دل میں سوچا۔۔۔ اور اب پھر اس کے چہرے پہ اداسی کا راج تھا۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: