Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 20

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 20

–**–**–

احان آینے کے سامنے کھڑا تیارہورہا تھا جب وہ باتھ سے باہر آٸی۔۔۔۔
احان ۔۔۔ وہی رات والا ٹرایوزر شرٹ۔۔۔ اور اس پہ بڑی سی شال کو اپنے گرد ڈالے وہ۔۔۔ اس کے پاس کھڑی تھی۔۔۔
احان نے بالوں میں برش چلاتے اس کی طرف دیکھا۔۔۔ پر کوٸی جواب نہیں دیا۔۔۔۔
وہ اب بالوں میں برش چلا رہا تھا۔۔۔
احان میں ہاسپٹل ۔۔۔ میں یہ کپڑے نہیں پہن کے جا سکتی۔۔۔
وہ پریشان سی شکل بنا کرکھڑی تھی۔۔۔۔
تم سے کس نے کہہ دیا تم جا رہی ہو۔۔۔۔۔۔ہاسپٹل۔۔۔۔۔ وہ مزے سے اپنے اوپر۔۔۔ سینٹ کا چھڑکاٶ کر رہا تھا۔۔۔۔
کیا مطلب۔۔۔۔ ہانیہ کی گھٹی سی آواز ابھری تھی۔۔۔۔ اسے اپنے کانوں پر یقین نہیں آیا۔۔۔۔
مطلب یہ۔۔۔۔ مسز احان حیدر۔۔۔۔ کہ آپ جاب نہیں کریں گے۔۔۔ گھر میں ہی۔۔۔ رہو گی۔۔۔۔ وہ مصنوعی۔۔۔۔ سی۔۔۔ مسکراہٹ چہرے پر سجا کر اس کی طرف مڑا تھا۔۔۔۔ اور اس کے گال کو پکڑ کر۔۔۔۔ اتنی زور سے کیھنچا کہ۔۔۔ اس کی آہ۔۔۔ نکل گٸی۔۔۔۔
مگر احان ۔۔۔
اس کی آنکھوں ۔۔۔ میں گال کھچنے کی تکلیف سے زیادہ اس بات کی دکھ کے آنسو تھے۔۔۔کہہ احان اب اسے جاب بھی نہیں کرنے دے گا۔۔۔۔
وہ ان سنی کرتا باہر چلا گیا تھا۔۔۔۔۔..
کیوں وہ کیوں نہیں جاۓ گی۔۔۔۔ حیدر کو سن کر غصہ آ گیا تھا۔۔۔۔۔
پہلے تو تم کل یہ کپڑے۔۔۔۔ اسے۔۔۔ بچی کو کیوں تنگ کر رہے تم۔۔۔۔ حیدر کا بس نہیں چل رہا تھا اس کا دماغ درست کر دیتے۔۔۔۔ پر اب وہ وہی بیس سال والا احان نہیں تھا۔۔۔۔۔۔ جو دب جایا کرتا تھا۔۔۔۔
تو کیا ہوا۔۔۔ ہماری کلاس میں سب لڑکیاں ایسے ہی کپڑے پہنتی ہیں۔۔۔ مجھے پسند ہیں ایسے کپڑے۔۔۔۔ وہ ڈھٹاٸی سے کمینی سی ہنسی ہنسا تھا۔۔۔۔۔
ہاسپٹل جانا چاہتی تو چلی جاۓ۔۔۔ مجھے چھوڑ دے۔۔۔ جوس کا گلاس منہ کو لگاتے ہوۓ لاپرواہی کے انداز میں کہا۔۔۔۔
ہانیہ کا دل دھک سے رہ گیا۔۔۔۔ تڑپ کربابا کی طرف دیکھا۔۔۔۔
بابا مجھے نہیں جانا۔۔۔۔ اس نے روہانسی شکل بنا کر کہا۔۔۔۔۔
ہن۔ن۔ن۔ن۔ ڈرامہ۔۔۔ احان نے ناک پھلا کر۔۔۔ ہانیہ کی طرف دیکھا تھا۔۔۔۔
وہ کٹ کر رہ گٸی تھی۔۔۔۔ تیزی سے وہاں سے اٹھ کر کمرے میں آگٸی۔۔۔۔
احان۔۔ کو پتا تھا ۔۔۔ کہ وہ۔۔۔ کتنی اچھی ڈاکٹر ہے۔۔۔ اور اسے اپنے پروفیشن سے کتنا لگاٶ ہے۔۔۔۔
کتنی دیر وہ یوں ہی روتی رہی۔۔۔ پھر کچھ خیال زہن میں آنے سے وہ اٹھی تھی۔۔۔۔
قلم اور کاغز لے کر وہ بیٹھی اور اپنی ساری دکھ بھری داستان۔۔۔ احان سے اپنی محبت کی تڑپ سب کچھ لکھ ڈالا۔۔۔۔ کاغز کو فولڈ کر کے بیڈ کی سایٸڈ ٹیبل پر رکھا اور باہر چلی گٸی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمنا کی کال پر اس کی آنکھ کھلی تھی۔۔۔ اس نے ہاسپٹل سے اسے کال کی تھی۔۔۔
آپا آپ آج بھی نہیں آٸیں۔۔۔۔ اماں کے اوپریٹ کا آپ نے کہا تھا۔۔۔۔ تمنا کی پریشان سی آواز ابھری۔۔۔۔۔
اوہ۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے پریشان سی ہو کر سر پرہاتھ رکھا۔۔۔ شام کے پانچ بج رہے تھے۔۔۔ اس نے گھڑی پر نظر ڈالی۔۔۔
اچھا رکو میں کچھ کرتی ہوں۔۔۔
وہ بیڈ سے نیچے اتری اور تیزی سے بابا کےکمرے کی طرف بڑھی۔۔۔۔
وہ ہونٹوں کو بے چینی سے کچلتی بابا کے سامنے کھڑی تھی۔۔۔
میں جاتا ہوں ۔۔۔۔ ہاسپٹل۔۔۔احان کرے گا۔۔۔ ان کا اوپریٹ تم پریشان نا ہو۔۔۔۔
حیدر نے پیار سے ہانیہ کے سر پر ہاتھ رکھا۔۔۔۔
وہ اثبات میں سر ہلا کر رہ گٸی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ساجدہ نے دھیرے سے آنکھیں کھولی تھیں۔۔ اور سامنے کھڑے حیدر کو دیکھ کر دھک سی رہ گٸی۔۔۔۔
سارا لمحہ اسکی آنکھوں کے آگے سے گزر گیا تھا۔۔۔۔
حیدر۔۔۔ نزیر کو جیل بھجوانےکے بعد اس کے پاس بھی آۓ تھے۔۔۔۔
ہانیہ نے مجھے تمہیں جیل بھجوانے سے منع کر دیا ۔۔۔ اس نے رپورٹ درج کراتے ہوۓ تمھارا زکر نہیں کیا۔۔۔۔
صرف اس بچی کی وجہ سے تم جیسی مکار کا مامعلا اللہ کے حوالے کرتا ہوں۔۔۔۔
اب اس پر کسی قسم کی کوٸی آنچ نہیں آنی چاہیے۔۔۔۔ اب وہ میری پناہ میں ہے۔۔۔۔ حیدر وحید کی پناہ میں۔۔۔۔
ساجدہ کی روح تک کانپ گٸی آج دس سال بعد بھی وہ اس بارعب شخص کو بھولی نہیں تھی۔۔۔
ڈرو مت آج پھر میں ہانیہ کے کہنے پر ہی آیا ہوں۔۔۔۔ وہ بچی جس پر تم نے ظلم کے پہاڑ توڑ رکھے تھے۔۔۔۔
وہ آج تمھیں تکلیف سے باہر نکالنے کے لیے میری منتیں کر رہی تھی۔۔۔۔
ساجدہ کے ہونٹ کانپنے لگے آنکھوں میں پانی آ گیا تھا۔۔۔۔ اس نے اپنے دونوں ہاتھ جوڑ کر۔۔۔ حیدر کی طرف دیکھا۔۔۔۔
تم میری مجرم نہیں۔۔۔ ہانیہ کی ہو کیونکہ وہ آج تک اس کی سزا بھگت رہی ہے۔۔۔۔
حیدر کا لب ٶ لحجہ آج بھی بہت سخت تھا۔۔۔
پھر تمنا کی طرف منہ کر کے کہا۔۔۔پرسوں اوپریٹ ہے۔۔۔ تمھاری اماں کا۔۔۔
ضرورت کی ساری چیزیں لے آیا ہوں میں ۔۔۔ پھر بھی کچھ چاہیے تو بتا دو مجھے۔۔۔ انھوں نے تمنا کے سر پر ہاتھ رکھ کے کہا۔۔۔۔
اس نے نفی میں سر ہلا دیا۔۔۔۔۔۔
حیدر نے احان سےبات کر لی تھی۔۔۔ اسے بس یہ کہا تھا وہ مدد کر رہے ہیں کسی کی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات کو احان بہت لیٹ آیا تھا۔۔۔ تھکا سا۔۔۔ وہ کمرے میں بیڈ پر سورہی۔۔ تھی۔۔۔ وہ بیٹھے بیٹھے سو رہی تھی۔۔۔ اس کا مطلب اسکا انتظار کرتے کرتے سوٸی تھی۔۔۔ ایک ہاتھ سے ٹاٸی کی ناٹ ڈھیلی کرتا اور دوسرے ہاتھ سے کوٹ۔۔۔ بیڈ پر اچھلتا وہ آگے بڑھا۔۔۔۔
کوٹ کو بیڈ پر اتنی زور سے مارنے کا مقصد۔۔۔ ہانیہ کو جگانا تھا۔۔۔۔
لیکن وہ ٹس سے مس نہ ہوٸی۔۔۔۔
پھر واش روم کا دروازہ ایسے دھماکے سے بند کیا۔۔۔۔ وہ بہت زور کی آواز تھی۔۔۔ ہانیہ دبک کر اٹھی تھی۔۔۔۔
نواب ۔۔۔ احان حیدر تشریف لا چکے تھے۔۔۔ وہ سیدھی ہوٸی۔۔۔۔
گھڑی کی طرف نظر گٸی۔۔۔۔ دو بجا رہی تھی۔۔۔۔
بڑے موڈ میں محترم بیڈ کی طرف آۓ تھے۔۔۔۔ ماتھے پر بل۔۔۔
صوفے پر چلو۔۔۔۔ تھاکان کی وجہ سے احان کی آواز اور بھاری ہو گٸی تھی۔۔۔
وہ ۔۔۔۔ معصوم سی شکل بناتی ہوٸی اٹھی۔۔۔ اس کے پاس آٸی اور آج جو کاغز لکھتی رہی تھی۔۔ اس کے آگے کیا۔۔۔۔
یہ کیا ہے۔۔۔۔ ناگواری سے دیکھا۔۔۔ تھاکاوٹ ۔۔۔ چہرے سے صاف ظاہر تھی۔۔۔۔
میری سچاٸی۔۔۔۔ اتنی معصوم سی صورت بنا کر کہا۔۔۔۔
اس نے اس کے ہاتھ سے کاغز پکڑا۔۔۔ اور ساتھ پڑی ڈسٹ بن میں غصے سے پیھنک دیا۔۔۔۔
ہانیہ روہانسی ہو گٸی تھی۔۔۔
وہ بڑے آرام سے بیڈ پر ڈھیر تھا۔۔۔
اسکا دل کیا اس کے سر پہ ہی کچھ دے مارے۔۔۔ کم سے کم جان تو لو۔۔۔ کہہ میں نے کیوں کیا تھا ایسا۔۔۔
اٹھی اور کوڑے دان سے کاغز اٹھایا۔۔۔ اور میز کے دراز میں رکھ دیا۔۔
پھر ساری رات اس ظالم کو بیٹھی دیکھتی رہی۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: