Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 21

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 21

–**–**–

وہ سو کر اٹھا تو وہ بیڈ کی ساٸیڈ پہ سو رہی تھی۔۔۔ ہمیشہ۔۔۔ دوپٹے میں اپنے سراپے کو چھپاۓ رکھنے والی ہانیہ آج اس کی وجہ سے ٹرایوزر شرٹ نما۔۔۔ اس لباس کو زیب تن کۓ ہوۓ لیٹی ہوٸی تھی۔۔۔۔۔۔
لمحے بھر کے لیے تو نظر ہی نہں ہٹا پایا تھا۔۔۔۔ صبح صبح اسکا حسن اور تروتازہ سا لگ رہا تھا۔۔۔۔ ایسی بچوں جیسی چمکتی جلد۔۔۔۔ بڑی سی پلکیں۔۔۔۔ لیکن شاٸید وہ رات کو بھی روتی رہی تھی۔۔۔۔ انکھوں سے لے کر گالوں تک کاجل کی لکیر سی بن گٸی تھی۔۔۔۔
کاش یہ ایسی نا ہوتی۔۔۔۔ جیسی یہ ہے۔۔۔۔ اس نے اپنے دل میں سوچا۔۔۔۔ ایسے جیسے ابھی اس کے حسن نے نفرت کی دیوار کی ایک اینٹ گرا دی ہو۔۔۔۔ وہ اسے سوتا چھوڑ کر واش روم میں گھس گیا۔۔۔
باہر نکلا تب بھی وہ بے سرھ ویسے ہی سو رہی تھی۔۔۔۔
وہ پاس آ گیا تھا۔۔۔۔ گیلا ٹاول ہانیہ کے منہ پر رکھ دیا۔۔۔۔
وہ ایک دم اٹھی تھی۔۔۔ احان شرٹ پہن رہا تھا۔۔۔۔
وہ تھوڑی سی خجل ہوٸی۔۔۔
صرف زبردستی زندگی میں گھسنا ہی آتا ہے آپکو۔۔۔۔ وہ شرٹ کے بٹن لگا رہا تھا۔۔۔۔
کوٸی فکر نہیں میری۔۔۔۔
کیا چاہیے آپکو۔۔ وہ اس کی اتنی سی عناٸیت پر ہی کھل اٹھی تھی۔۔۔
گڈ۔۔۔۔ احان کو اس کی فرمابرداری کی ایکٹنگ سے چڑ ہوٸی
فلحال تو تم یہ کرو ۔۔۔ کہ اٹھو میرے بستر سے۔۔۔۔
وہ بڑے روکھے لہجے میں بولا تھا۔۔ بابا کسی سیمنار کے سلسلے میں کراچی جا رہے۔۔۔۔ تو تم اپنا بوریا بستر سمیٹو۔۔۔ اور ایک ہفتے کے لیے اس کمرے سے اپنی شکل گم کرو۔۔ ۔۔۔
احان کو ڈر سا پڑ گیا تھا۔۔۔ جس حالت میں وہ اس کو صبح دیکھ چکا تھا ۔۔۔ دل کی حالت بیمان ہونے کا بہت خدشہ تھا۔۔۔ اور اس مکار حسینہ کے اگے گھٹنے نہیں ٹِکنا چاہتا تھا۔۔۔۔
وہ چپ سی کھڑی رہی۔۔۔۔ ساری رات تمہیں دیکھتے رہنے سے سکون ملتا تھا احان حیدر۔۔۔تم جب سوۓ ہوتے ہو مجھے میرے احان لگتے ہو۔۔۔ لیکن جب اٹھ جاتے ہو تو ریحم کے احان لگتے ہو۔۔۔۔
وہ دل میں سوچ رہی تھی۔۔۔۔۔خاموشی سے اٹھ کر باہر چلی گٸی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
احان رات کو جلدی گھر آ گیا تھا۔۔۔۔ وہ لاونچ میں کرتا شلوار پہنے بڑے آرام سے ٹی وی دیکھنے میں مصروف تھی۔۔۔
جیسے ہی اسے دیکھا تھوڑا حیران ہوٸی ۔۔۔
آپ آ گۓ۔۔۔۔ مسکراتی ہوٸی وہ احان کے پاس آٸی تھی۔۔۔۔
آیا ہوں تو تمھارے سامنے کھڑا ہوں۔۔۔۔ بیزاری سے جواب ملا۔۔۔۔
وہ اپنی چیزیں وہیں رکھ کر شاٸید تھکا زیادہ تھا لیٹ گیا۔۔۔۔
احان کی آنکھ لگ گٸی تھی۔۔۔۔ وہ اس کے پاس آ کر کھڑی ہوٸی تھی۔۔۔
کہ اسکے فون پر ایک مسیج ٹون آٸی۔۔۔۔
ڈاکٹر مریم کا نام سکرین پر مسیج کے ساتھ وہ با آسانی پڑھ سکتی تھی۔۔۔۔
پتہ نہیں دل میں کیا آیا کہ فون اٹھا کر مسیج کھول لیا۔۔
ہیونگ۔۔۔ گڈ ۔۔۔ ٹاٸم ود یو۔۔۔۔ کل بھی۔۔۔ آپ کے ساتھ ہی شفٹ ہے میری۔۔۔۔ سی یو۔۔۔
مریم کے مسیج نے جیسے اس کے تن بدن میں آگ لگا دی تھی۔۔۔۔
وہ کھڑی پہلے تو احان کو دیکھتی رہی۔۔۔ پھر تیزی سے کمرے کی طرف گٸی۔۔۔تھی۔۔۔ایک غیر محرم لڑکی اس کے لیے اتنا کچھ کر رہی ۔۔۔۔ میں تو اس کی بیوی ہوں۔۔۔
ہانیہ نے جینز نکالی۔۔۔ اور ساتھ۔۔۔۔ چھوٹی والی ٹی شرٹ جو پہلے تو اس نے چھپا دی تھی کہ احان کہیں یہ نا پہننے کو کہہ دیں اسے۔۔۔۔
نہا کے گیلے بالوں کو ڈراٸر کیا ۔۔۔ پینٹ شرٹ پہنی۔۔۔۔ بالوں کو سلیقے سے کھلا چھوڑا۔۔۔ ہلکا سا میک اپ کیا۔۔۔ پرفیوم گردن پر چھڑکتے ہوۓ اس نے اپنے آپ کو دیکھا۔۔۔۔۔
وہ غضب ہی تو ڈھا رہی تھی۔۔۔۔ چھوٹی سی تنگ سی شرٹ تھی۔۔۔ جو بمشکل پیٹ سے تھوڑا سا نیچے آ رہی تھی۔۔۔۔
پتہ نہیں آج کس بات کا غصہ تھا۔۔۔ کہ اسے اپنا آپ کمفرٹیبل لگ رہا تھا۔۔۔۔ اور وہ ریحم اور مریم کی طرح کسی غیر محرم کے لیے یہ سب نہیں کر رہی تھی۔۔۔۔ احان اسکا سب کچھ تھا۔۔۔
وہ بیڈ پہ بیٹھ کر اس کے اٹھنے کا انتظار کرنے لگی۔۔۔۔
احان کی آنکھ کھلی تو وہ اکیلا ہی تھا وہاں۔۔۔
اٹھ کر کمرے میں آیا۔۔۔ ہانیہ فوراََ کھڑی ہوٸی تھی۔۔۔۔ ابھی تک جو خودکو بہت پراعتماد تصور کر رہی تھی۔۔۔ اب احان کو سامنے دیکھ کر سارا کچھ ہوا ہو گیا تھا۔۔۔۔
اسے لگ رہا تھا ٹانگوں سے جان نکلے گی۔۔۔ اور وہ ڈھیر ہو جاۓ گی یہاں۔۔۔۔ انکھیں اب اوپر اٹھانی مشکل ہو گٸی تھی۔۔۔۔
وہ اسے دیکھ کر رک ہی تو گیا تھا۔۔۔۔وہ ایسی ہی تو حسین لگ رہی تھی۔۔ ہوش تو اڑنے تھے۔۔۔۔ دوپٹے میں جو چھپارہتا تھا۔آج سامنے تھا۔دلکش سراپا۔ ۔۔۔ اسکا دماغ گھومانے کے لیے کافی تھا۔۔۔
وہ اس سے نظر نہیں ہٹا پا رہا تھا۔۔۔۔ بڑی مشکل سے خود پہ قابو پاتے ہوۓ وہ اس کے پاس آیا تھا۔۔۔۔
خیر یت۔۔۔۔ وہ اس کے بلکل سامنے کھڑا تھا۔۔۔۔
ہانیہ نے خاموشی سے سر ہلایا۔۔۔۔
تمہیں کچھ کہاتھا صبح میں نے۔۔۔۔وہ مسلسل اس کے سراپے کو دیکھ رہا تھا۔۔۔
وہ پھر بھی خاموش رہی۔۔۔۔
ایک تو وہ سو کر اٹھا تھا۔۔۔۔ اوپر سے وہ ہوش اڑا رہی تھی۔۔۔
احان حیدر یہ جال ہے۔۔۔۔ دل کے کسی کونے سی آواز آٸی تھی۔۔۔۔۔۔
تم کتنی دوغلی ہو نا ہانیہ۔۔۔ وہ اس کے بلکل پاس کھڑا تھا۔۔۔۔
جھٹکے سے اسکا ہاتھ پکڑا تھا ۔۔۔ لیکن گرفت محبت والی تو نہیں تھی۔۔۔۔ہانیہ نے تکلیف سے دیکھا اس کی طرف۔۔۔
آہ۔۔۔۔ درد سے۔۔۔ کراہنے لگی تھی۔۔۔
تم وہ دوپٹہ سر پر سجا کر۔۔۔ وہ جو پارساٸی کا ڈھونگ کرتی رہی اتنا عرصہ۔۔۔ وہ اس کے بالوں کو دوسرے ہاتھ سے آہستہ آہستہ۔۔۔چھیڑ رہا تھا۔۔۔۔
احان میرا ہاتھ چھوڑیں مجھے درد ہو رہا ہے۔۔۔۔ ہانیہ کی تکلیف بڑھ رہی تھی کیونکہ وہ شاٸید اپنے جزبات قابو کرنے کی ساری سزا۔۔۔ ہانیہ کے ہاتھ کو دے رہا تھا۔۔۔۔
اصل حقیقت تو تمھاری یہی نکلی نہ۔۔۔۔ دوغلی ہو تم۔۔۔
ہانیہ کا دل کٹ کر رہ گیا اس کی بات پر۔۔۔۔اس نے کیا سوچا تھا۔۔۔ پر یہ شخص اس کی اور تزلیل کرنے پر تلہ ہوا تھا۔۔۔۔۔۔
ساری خواہش سب کچھ ایک دم ختم ہو گیا تھا۔۔۔۔
میں ایسی نہیں ہوں ۔۔۔ احان۔۔۔۔ پہلی دفعہ وہ احان پر چیخی تھی۔۔۔۔
سنا۔۔۔۔۔ آپ نے۔۔۔ میں۔۔۔ ایسی نہیں ہوں۔۔۔۔۔۔چھوڑیں مجھے۔۔۔۔چھوڑیں وہ ایک دم سے طیش میں آ گٸی تھی۔۔۔۔
احان کو اور غصہ آ گیا تھا۔۔۔۔ نہیں چھوڑتا کیا کر لو گی تم۔۔۔۔ احان نے جھٹکا دیا تھا۔۔۔ وہ زور سے اس ٹکراٸی تھی۔۔۔۔
آپ مجھے غلط سمجھتے ہیں۔۔۔۔ اسنے احان کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کرکہا…
اچھا۔۔۔۔ کیا ہو پھر تم۔۔۔۔ آج تم جو یہ سب کر کے میرے سامنے کھڑی ہو۔۔۔اس نے طنزیہ انداز میں کہا۔۔
آپ میرے شوہر ہیں ۔۔۔ احان۔۔۔۔ اس نے روہانسی شکل میں کہا۔۔۔۔
زبردستی کا شوہر۔۔۔۔قریب ہو کے اس کے کان میں زہر اگلا۔۔۔۔
ہانیہ کا دل جل کے رہ گیا۔۔۔
ویسے زبردستی کا شوہر ہوں۔۔۔۔ پیار تو نہیں ۔۔۔ ہاں البتہ زبردستی تو کر سکتا ہوں۔۔۔ احان اسکے چہرٕے کے قریب اپنا چہرا لے کر گیا تھا۔۔۔۔
ہانیہ کو اسکی بات سن کر زمین میں گڑ جانے جیسا احسا س ہوا۔۔۔ اس نے دوسرے ہاتھ سے ایک زناٹے دار تھپڑ احان کے منہ پر رکھا تھا۔۔۔ پھر وہ رکی نہیں تھی۔۔۔ بھاگتی ہوٸی کمرے سے نکلی تھی۔۔۔ اور احان وہیں کھڑا رہ گیا تھا۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: