Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Episode 22

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – قسط نمبر 22

–**–**–

صبح جب وہ ہاسپٹل کے لیے تیار ہو ا تو وہ کہیں بھی نہیں تھی۔۔۔ کمرے کا دروازہ اس نے ابھی بھی اندر سے لاک کر رکھا تھا۔۔۔۔ ۔۔۔
وہ تھوڑی دیر کمرے کے دروازے کے سامنے کھڑا رہا۔۔۔ پھر ہاسپٹل چلا گیا۔۔۔۔
آج اس نے اس عورت کی ہارٹ سرجری کرنی تھی جس کا بابا نے کہا تھا۔۔۔
وہ کوریڈور سے ہوتا ہوا۔۔۔ آپریشن تھیٹر کی طرف جا رہا تھا جب اس لڑکی پر نظر پڑی تھی۔۔۔ وہ شاٸید اس عورت کی بیٹی تھی۔۔۔
وہ پاس سے گزر گیا تھا۔۔۔
سنو بات سنو۔۔۔ تمنا نے پاس کھڑی نرس سے کہا۔۔۔ یہ ڈاکٹر ہانیہ کیوں نہیں آرہی ہیں۔۔۔۔
نرس ہنس پڑی۔۔۔۔ یہ جو ابھی اندر گۓ ہیں نا ڈاکٹر احان ۔۔۔۔ ان سے شادی ہوٸی ہے کچھ دن پہلے ان کی۔۔۔۔
یہ وہ ہیں۔۔۔۔ احان حیدر۔۔۔۔ تمنا کی آنکھیں چمک اٹھی تھی۔۔۔
احان آپا کے لیے بلکل درست انتخاب ہے آپکا اللہ۔۔۔۔۔ اس نے آسمان کی طرف دیکھا۔۔۔۔
ساجدہ کا اوپریٹ چل رہا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ساحل پہ کھڑے ہو تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا غم چلے جانا۔۔۔۔۔ میں ڈوب رہا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ابھی ڈوبا تو نہیں ہوں۔۔۔
اے وعدہ فراموش میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تجھ سا تو نہیں ہوں۔۔۔
ہر ظلم تیرا یاد ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بھولا تو نہیں ہوں۔۔۔۔
چپ چاپ سہی مصلحتِِ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وقت کے ہاتھوں۔۔۔۔ مجبور سہی وقت سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہارا تو نہیں ہوں۔۔۔
کتنا درد کتنی تکلیف تھی اس کے دل میں۔۔۔۔
وہ پتھر تھا۔۔ وہ پتھر ہے ہانیہ۔۔۔۔ وہ کبھی۔۔۔۔ اس ہانیہ کو نہیں چاہے گا۔۔۔ کبھی نہیں۔۔۔۔ آنسو تھے۔۔۔ کہ تھمنے کا نام نہیں لے رہے تھے۔۔۔۔ دل کر رہا تھا نوچ ڈالے احان کا منہ۔۔۔
بس اب اور نہیں۔۔۔۔ اتنی محبت کی تم سے ۔۔۔ اس کا یہ صلہ۔۔۔
بابا ۔۔۔ اسے حیدر شدت سے یاد آ رہے تھے۔۔۔۔
احان باہر سلیم کو آوازیں دے رہاتھا۔۔۔ پھر اس کو بلانا شروع کر دیا۔۔۔۔ ہانیہ۔۔۔ ہانیہ۔۔۔
وہ اس کے کمرے کا دروازہ پیٹ رہا تھا۔۔۔۔ وہ چپ کر کے گھٹنے میں سر دے کر بیٹھی رہی۔۔۔۔
فوراََ کھولو۔۔۔۔۔۔۔۔دروازہ۔۔۔۔۔ دھاڑنے والے انداز میں کہا۔۔۔
بھاڑ میں جاٸیں آپ۔۔۔۔ ہانیہ اسی کے انداز میں چیخی تھی۔۔۔۔
با ہر خاموشی ہو گٸی تھی۔۔۔۔
خود ہی تو کہا تھا۔۔۔ مجھےاپنی شکل نا دیکھانا۔۔۔۔ اب خود ہی۔۔۔ بلانا شروع کر دیا۔۔۔ پھر سے میری کوٸی تزلیل ہی کرنی ہو گی۔۔۔۔
اسے نہیں خبر کب اسے نیند آٸی تھی کب وہ سوٸی تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ بابا کی اس جاننے والی عورت کو دیکھنے کے لیے آیا تھا ۔۔۔ اوپریٹ کامیاب رہا تھا۔۔۔ اب ساجدہ کو ہوش آیا تھا۔۔۔۔
وہ پاس کھڑا۔۔۔ اس کا ڈسکرپشن دیکھ رہاتھا کہ اچانک احان کی نظر اس پر پڑی تو اس نے دونوں ہاتھ معافی کی شکل میں جوڑے ہوۓ تھے۔۔۔۔۔
یہ۔۔۔یہ۔۔۔ کیا کر رہی آپ۔ ۔۔ احان نے پریشانی اور حیرانی کے ملے جلے تاثر سے۔۔۔ ساجدہ کی طرف دیکھا۔۔۔
اور پھر پیچھے بیٹھی تمنا کی طرف۔۔۔۔
ہانیہ کو بلا دو۔۔۔ اسے کہو ۔۔۔ مجھے معاف کر دے۔۔۔۔ ساجدہ سے بولنا مشکل ہو رہا تھا۔۔۔
ہانیہ۔۔۔ آپ ۔۔۔آپ ۔۔۔کیسے جانتی اسے اور کیا معافی۔۔۔۔۔
ساجدہ بولتی جا رہی تھی۔۔۔ اور وہ۔۔۔ ہونق بنا سب سن رہا تھا۔۔۔۔
پھر تمنا بولنا شروع ہوٸی کہہ کیسے اس نے ہانیہ کو گھرسے باہر بھگایا تھا۔۔۔
اس پر پہاڑ ٹوٹ رہے تھے حقیقت کے۔۔۔۔ سب کچھ اس کی ہر مجبوری آشکار ہو رہی تھی۔۔۔۔
وہ سکتے کے عالم کھڑا ساجدہ ہی کی زبانی اس کے ظلم سن رہا تھا جو وہ ہانیہ پر کرتی رہی تھی۔۔۔۔ ۔
اور پھر حیدرکا ان کے گھر آنا۔۔۔ نزیر کا پکڑے جانا۔۔۔۔۔
تمنا رو رہی تھی۔۔۔ اور ہانیہ کی ہر ایک بات بتا رہی تھی۔۔۔۔
خدا کا واسطہ بیٹا۔۔۔۔ ہانیہ کو کہو۔۔۔ مجھے معاف کر دٕے۔۔۔ بس ایک دفعہ ۔۔۔۔
وہ خاموشی سے باہر نکلتا چلا گیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ گھر پہنچا تو مکمل خا موشی تھٕی۔۔۔۔
وہ چپ چاپ اپنے کمرے میں آیا۔۔۔۔ دل عجیب سا ہو رہا تھا۔۔۔۔ وہ بیڈ کی ساٸیڈ ٹیبل میں سے۔۔۔ ہانیہ کا وہ خط نکال رہا تھا جو اس دن اس نے غصے میں پھینک دیا تھا۔۔۔۔
کیا کیا نہیں تھا ہانیہ کے دل میں وہ پڑھتا جا رہا تھا۔۔ اور آنسو۔۔۔ اس کے گلے میں اٹکتے جا رہے تھے۔
کوٸی ایسا پل نہیں تھا ۔۔۔ جس میں اس نے احان سے محبت نا کی ہو۔۔۔
اوہ ۔۔۔ یہ میں کیا کر بیٹھا۔۔۔۔۔ اسے سمجھ نہیں آ رہی تھی۔۔۔۔۔
وہ خود کو کیا سزا دے۔۔۔۔
جس طرح محبت کے سمندر کے چاروں اور ایک دم سے دیوار بنی تھی۔۔۔ اسی طرح ڈھیتی جا رہی تھی۔۔۔۔
اب تو دل میں شرمندگی کے ساتھ ۔۔ محبت کا سمندر ٹھاٹھیں مار رہا تھا۔۔۔۔
کاغز کو اسی طرح فولڈ کر کے اس نے۔۔ دراز میں رکھ دیا تھا۔۔۔۔
پھر آہستہ سے بوجھل قدم اٹھاتا اسکے کمرے کے بلکل سامنے آیا تھا۔۔
ہانیہ۔۔۔ ہانیہ۔۔۔۔ اس نے آواز لگاٸی تھی۔۔۔ آج نا تو آواز میں سختی تھی اور نا ہی وہ نفرت۔۔۔۔
میں دروازہ نہیں کھولوں گی۔۔۔۔
وہ ااندر سے بولی تھی۔۔۔ احان کے ہونٹوں پر مسکراہٹ پھیل گٸی تھی۔۔۔۔
پھر اس نے آواز لگاٸی۔۔۔۔
بابا۔۔۔۔ بابا۔۔۔ وہ نہیں کھول رہی۔۔۔ دروازہ۔۔۔
اتنا کہہ کر وہ دروازے کے پیچھے کھڑا ہو گیا تھا۔۔۔۔
ہانیہ نے کچھ دیر خاموشی دیکھی پھر دروازہ کھول کر باہر آ گٸی تھی۔۔۔۔ وہ باہر آ کر آگے آٸی تھی۔۔۔ ارد گرد دیکھا۔۔۔ بابا آ گۓکیا۔۔۔ پھر اپنی چپل پہننے کے لیے واپس پلٹی تو زور سے احان سے ٹکراٸی۔۔۔ جس نے بڑی مشکل سے تھاما تھا اسے۔۔۔۔۔
کیا مسٸلہ ہے تمھارا۔۔۔۔ کل سے اندر گھس کے بیٹھی ہو۔۔۔۔
احان نے مصنوعی غصہ دکھایا۔۔۔۔
وہ بے چین سی ہو کر اپنا ھاتھ چھڑانے لگی تھی۔۔۔
چلو کمرے میں۔۔۔۔ احان با مشکل اپنی ہنسی چھپا رہا تھا۔۔۔۔
نہیں جانا مجھے۔۔۔ آپ مجھے غلط سمجھتے ہیں ۔۔۔ غلط ہی کرنا چاہتے۔۔۔۔
ہاں تو۔۔۔ میرا حق ہے ۔۔۔ جس طرح سے بھی لوں۔۔۔ مصنوعی خفگی دکھاٸی۔۔۔۔
پلیز چھوڑیں مجھے ۔۔۔۔ وہ روہانسی ہو گٸی تھی۔۔۔
نہیں ۔۔۔ چلو ۔۔ کمرے میں۔۔۔۔ احان نے اسے اوپر اٹھا لیا تھا۔۔۔۔
افف۔ف۔ف۔ف احان اتاریں مجھے۔۔۔احان نے اسے ایک ہی جھٹکے میں اٹھا کر کندھے پر ڈال لیا تھا۔۔۔۔
احان۔۔۔۔ وہ ڈر گٸ تھی۔۔۔۔ احان اپنے کمرے کی طرف جا رہا تھا۔۔۔۔
اسے بیڈ پہ گرا کہ وہ پلٹا اور دروازہ لاک کر لیا کہ اب دوبارہ باہر نا نکل جاۓ۔۔۔
احان ۔۔۔یہ۔۔۔ یہ۔۔۔ کیا کر رہے آپ۔۔۔۔ اسے لگ رہا تھا احان کے سر سے ابھی پرسوں والا خمار ہی نہیں اترا۔۔۔
وہی ۔۔۔۔ جو۔۔ ۔۔۔ ادھورا رہ گیا تھا۔۔۔۔
احان میرے قریب مت آۓ گا۔۔۔۔ وہ اچھل کر بیڈ سےنیچے اتری تھی۔۔۔
احان کو دل ہی دل میں ہنسی آ رہی تھی۔۔۔۔
یہ ہے تمھاری محبت۔۔۔ تم تو بڑے دعوے کرتی تھی محبت کہ۔۔۔
کہاں ہے سب۔۔۔ وہ شرارت سے اس کے پاس آیا تھا۔۔۔
یہ محبت نہیں ہوتی احان ۔۔۔ وہ واقعی پریشان ہو گٸی تھی۔۔۔
اچھا۔۔۔۔ تو پھر کونسی ہوتی محبت۔۔۔ احان نے کمر سے پکڑ کر اسے اپنے ساتھ لگایا۔۔۔۔
احان ۔۔۔پلیز۔۔۔ اس نے اچانک احان کی طرف دیکھا تھا۔۔۔ وہ مسکرارہا تھا۔۔۔ وہی شرارت۔۔۔ وہ ہی محبت کا سمندر لیے ہوۓ آنکھیں۔۔۔۔ وہ حیرانی سے دیکھ رہی تھی اسے۔۔۔۔
اور وہ اس کے بالوں کو پیچھے کر رہا تھا جو گردن کو چھوتے ہوۓ آگے آ گیے تھے۔۔۔
وہ حیران سی اور پریشان سی تھی۔۔۔ اسے دیکھے جا رہی تھی۔۔۔۔
کیا اب نظر لگاٶ گی۔۔۔ احان نے شرارت سے نچلا ہونٹ دانتوں کے نیچے دبایا۔۔۔
یہ سب۔۔۔ یہ ۔۔کیسے۔۔۔وہ ابھی بھی اس کایا پلٹ کو سمجھ نہیں پاٸی تھی۔۔۔۔
احان اس کے پیروں میں بیٹھ گیا تھا۔۔۔۔۔۔ ایک گھٹنا نیچے لگا کے۔۔۔۔
ہانیہ۔۔۔۔ مجھے معاف کر دو۔۔۔۔
اس نے ہانیہ کے ہاتھ کو تھاما ہوا تھا۔۔۔۔
احان ۔۔۔۔۔ اس کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو تھے۔۔۔۔
احان اٹھ جاٸیں نہ۔۔۔۔ وہ تو ایسی ہی تھی۔۔۔۔ نرم دل ۔۔۔ کسی پر غصہ نا کرنے والی۔۔۔۔ پیار کی مورت تھی وہ۔۔۔۔ اسکا احان پرآیا ہوا غصہ ایک دم سے اتر گیا تھا۔۔۔۔
اسکا احان آج دو حصوں میں بٹا ہوا احان نہیں تھا۔۔۔۔ وہ ماضی اور حال دو کشتی میں سوار مسافر نہیں تھا۔۔۔۔۔
وہ صرف اسکا احان تھا۔۔۔۔
وہ احان کے سینے سے لگی ہوٸی تھی۔۔۔۔ اور اسکے مضبوط بازوٶں کے حصار میں اس کی زیست کی ساری تھکان اتر رہی تھی۔۔۔۔ سارے کرب۔۔۔ ساری تکلیفیں۔۔۔۔
آج وہ لڑکی اس کے پہلو میں تھی۔۔۔ جو اس کے لیے خدا کے تحفے کی طرح اتری تھی۔۔۔۔ وہ عام لڑکی نہیں تھی۔۔۔ وہ انمول تھی۔۔۔۔ اسکی نا صرف صورت پیاری تھی۔۔۔ بلکہ۔۔۔ اسکا دل بھی۔۔۔ اتنا ہی پاک ۔۔۔ اور محبت سے بھرا ہوا تھا۔۔۔۔
اس نے دھیرے سے ۔۔۔ ہانیہ کے کان میں سرگوشی۔۔۔ کی ۔۔۔ آٸی لو۔۔۔ یو۔۔۔۔
مجھے یہ تو بتا دیں ۔۔۔ یہ سب کیسے ہوا۔۔۔۔ وہ خوشگوار حیرت سے پیچھے ہو کر احان کو دیکھ رہی تھی۔۔۔۔
ہاں تو بتا دوں گا۔۔۔۔ صبح تمہیں ہاسپٹل جانا ہے نا پھر بتاٶں گا۔۔۔ احان اپنے ھاتھ کو الٹا کر کے۔۔۔ انگلیاں اس کے گالوں پر پھیر رہا تھا۔۔۔۔
اچھا ۔۔۔۔ٹھیک ہے۔۔۔۔ وہ کچھ پر سوچ انداز میں بولی۔۔۔۔
اور پھر احان کی طرف پیار سےدیکھا۔۔۔۔ نچلا ہونٹ دانتوں میں دبا کر ہنسی روکنے کی کوشش کی۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: