Zeest k Hamrahi Novel by Huma Waqas – Last Episode 23

0
زیست کے ہمراہی از ہما وقاص – آخری قسط نمبر 23

–**–**–

وہ مسکراتے مسکراتے ایک دم پیچھے ہوٸی تھی۔۔۔۔
اور احان کے سینے پر مکے کی شکل میں ہاتھ باندھ کے مارنا شروع ہو گٸی تھی۔۔۔۔
اوہ۔۔۔۔ اوہ۔۔۔ کیا ہوا۔۔۔۔۔ احان مار کھاتے ہوۓ ہنس رہا تھا۔۔۔۔
ہوا کیا بتا تو دو۔۔۔ آرام سے مار کھاٶں گا۔۔۔۔ وہ اپنے بازوٶں کو منہ کہ آگے کر کے مسلسل اس کے ھاتھوں کو روک رہا تھا جو بری طرح مار رہے تھے اسے۔۔۔
مریم مسیج کیوں کرتی آپکو۔۔۔۔ بتاٸیں۔۔۔۔ ہانیہ غصے اور خفگی میں اور پیاری لگ رہی تھی۔۔۔۔۔
اوہ۔۔۔۔۔۔اچھا۔۔۔۔۔ اچھا۔۔۔۔ احان ۔نے مسکراہٹ دباتے ہوۓ اسے پاس کیا۔۔۔۔ بازو سے پکڑ کر۔۔۔۔۔
مسز احان۔۔۔۔ وہ کرتی ہے۔۔۔۔ یہ بھی دیکھنا تھا میں نے کبھی اس کے کسی مسیج کا جواب دیا۔۔۔۔۔
وہ کرتی ہے تو کرنے دو۔۔۔۔۔ احان نے اس کے بازو پکڑ کر اپنی کمر کے گرد گھما دیے۔۔۔۔
وہ ابھی بھی خفا سی شکل بنا کر کھڑی۔تھی۔۔
ویسے۔۔۔۔ احان نے شرارت سے اپنے کان کو کھجایا۔۔۔
اس بیچاری کا بھی کیا قصور ہے۔۔۔۔ ۔۔ تمھارا ہیزبنڈ۔۔۔ ہے ہی ایسا۔۔۔کوٸی بھی ہوش کھو دے اپنے۔۔۔
تم نے بھی تو کھو دیے تھے جب پہلی دفعہ میرے گھر میں آٸی تھی چھپ کر۔۔۔ اور پھر میری خوبصورتی دیکھ کر تمھاری نیت خراب ہو گٸی وہیں رک گٸی۔۔۔۔ احان پوری طرح شرارت کے موڈ میں تھا۔۔۔۔
ہانیہ ۔۔۔پھر سے مارنا شروع ہو گٸی تھی۔۔۔۔ پتا ہے نا کتنا ستایا آپ نے مجھے۔۔۔۔ وہ آنکھوں میں پانی بھر کر کہہ رہی تھی۔۔۔۔
اچھا ۔۔۔ چلو۔۔۔ تم جو سزا دو مجھے قبول ہے۔۔۔۔ احان نے پیار سے دیکھتے ہوا کہا۔۔۔۔
سوچ لیں۔۔۔ اب وہ بھی شرارت کے موڈ میں تھی۔۔۔۔
اوہ۔۔۔کہہ کر تو دیکھو۔۔۔ جانِ احان۔۔۔ ۔۔ احان نے لہک کر کہا۔۔۔۔
تو ٹھیک ہے۔۔۔۔ وہ مسکراہٹ چھپا رہی تھی۔۔۔۔
تو پھر۔۔۔ احان ۔۔۔ آپ کی سزا۔۔ یہ ہے ۔۔ کہ ۔۔آج آپ۔۔۔ صوفے پہ سوٸیں گے۔۔۔ اور میں بیڈ پر۔۔۔۔ وہ بچوں کی طرح کمر کے پیچھے ہاتھ باندھ کر ہل رہی تھی۔۔۔۔۔ آنکھیں شرارت سے چمک رہی تھی۔۔۔۔
نو۔۔۔۔ نو۔۔۔نو۔۔۔نو۔۔۔احان زور زور سے نہیں میں سر ہلا رہا تھا۔۔۔ یہ ظلم نہیں کر سکتی تم۔۔۔
۔احان اس کی طرف بڑھا۔۔۔۔ تھا۔۔۔ وہ ھنستی ہوٸی آگے بھاگی تھی۔۔۔۔
وہ ڈر کر بیڈ پہ چڑھ گٸی تھی۔۔۔۔ دونوں ھنس رہے تھے۔۔۔ بھاگنے سے سانس پھول گیا تھا۔۔۔۔
لیکن آنکھوں میں ایک دوسرے کے لیے بے پناہ پیار تھا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے اپنے ضبط پہ ناز تھا سرِ بزم رات یہ کیا ہوا
مری آنکھ کیسے چھلک گئی مجھے رنج ہے یہ برا ہوا
مری زندگی کے چراغ کا یہ مزاج کوئی نیا نہیں
ابھی روشنی ابھی تیرگی، نہ جلا ہوا نہ بجھا ہوا
مجھے جو بھی دشمنِ جاں ملا وہی پختہ کارِ جفا ملا
نہ کسی کی ضرب غلط پڑی، نہ کسی کا تیر خطا ہوا
مجھے آپ کیوں نہ سمجھ سکے کبھی اپنے دل سے بھی پوچھئے
مری داستانِ حیات کا تو ورق ورق ہے کھلا ہوا
جو نظر بچا کے گزر گئے مرے سامنے سے ابھی ابھی
یہ مرے ہی شہر کے لوگ تھے مرے گھر سے گھر ہے ملا ہوا
ہمیں اس کا کوئی بھی حق نہیں کہ شریکِ بزمِ خلوص ہوں
نہ ہمارے پاس نقاب ہے نہ کچھ آستیں میں چھپا ہوا
مرے ایک گوشہ فکر میں، میری زندگی سے عزیز تر
مرا ایک ایسا بھی دوست ہے جو کبھی ملا نہ جدا ہوا
مجھے ایک گلی میں پڑا ہوا کسی بدنصیب کا خط ملا
کہیں خونِ دل سے لکھا ہوا، کہیں آنسوؤں سے مٹاہوا
مجھے ہم سفر بھی ملا کوئی تو شکستہ حال مری طرح
کئی منزلوں کو تھکا ہوا، کہیں راستے میں لٹا ہوا
ہمیں اپنے گھر سے چلے ہوئے سرِ راہ عمر گزر گئی
کوئی جستجو کا صلہ ملا، نہ سفر کا حق ہی ادا ہوا
ہانیہ۔۔۔ ساجدہ کے پاس کھڑی ہوٸی تھی۔۔۔۔
ساجدہ کے جڑے ہاتھ۔۔۔ آنسوٶں سے تر آنکھیں۔۔۔۔
ہانیہ نے آہستہ سے ساجدہ کے ھاتھوں کو پکڑ کر نیچے کر دیا۔۔۔۔
مانا آپ نے مجھ پر بہت ظلم کیۓ۔۔۔۔ لیکن ۔۔۔ یہ سب میری زندگی۔۔۔ میں ہونا تھا۔۔۔ کیوں کہ۔۔۔ یہ لکھا جا چکا تھا۔۔۔۔
دراصل۔۔ کبھی جب ہمیں لگتا ہے۔۔۔ کہ ۔۔ ہماری زندگی میں جو ہو رہا ۔۔یہ سب نہیں ہونا چاہیے تھا۔۔۔۔ لیکن وہ تو ہونا ہوتا ہے۔۔۔
کل تک میں بھی یہی سوچتی رہی ۔۔۔ کہ میرے ساتھ اللہ نے کبھی کچھ اچھا نہیں کیا۔۔۔۔
لیکن آج یقین ہو گیا۔۔۔ اللہ جو کرتا ہے ۔۔۔ وہ ہمارے حق میں بہتر ہوتا ہے۔۔۔۔
وہ ہلکے سے مسکراٸی تھی۔۔۔۔
میں نے آپکو معاف کیا۔۔۔۔ بلکہ اسی دن کر دیا تھا۔۔ جب اللہ نے بابا کو فرشتہ بنا کے۔۔۔۔ میری زندگی میں بھیجا۔۔۔۔
آپ پریشان نا ہوں ۔۔۔ میں نے بابا سے بات کی ہے۔۔۔ ہم بہادر کو تلاش کریں گے۔۔۔۔۔ انشااللہ مل جاۓ گا وہ۔۔۔۔
وہ ساجدہ کو تسلی دے کر۔۔۔۔ تمنا ۔۔۔۔۔فاطمہ ۔۔۔۔۔ اور زری کی طرف مڑی تھی۔۔۔۔۔
ان سب کو گلے لگایا۔۔۔۔۔ حیدر اور احان پاس کھڑے مسکرا رہے تھے۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مما۔۔۔۔۔مما۔۔۔۔ میسم کب سے کھڑا اس کی جان کھا رہا تھا۔۔۔
وہ کچن میں جلدی سے کام ختم کر وا ۔۔۔ رہی تھی۔۔۔ آج اس نے اور احان نے ویکنڈ ناٸٹ انجواۓ کرنی ہوتی ۔۔۔ موی دیکھنی ہوتی۔۔۔۔ باتیں کرنی ہوتی۔۔۔۔
بیٹا۔۔۔۔ بابا۔۔۔ ہیں نا روم میں۔۔۔۔ جاٶ نا ان کے ساتھ لیٹو جا کر۔۔۔۔ اس نے چڑ کر کہا۔۔۔
رانی جلدی سےختم کرو نا ۔۔ رکھو سب ۔۔۔ وہ اپنی نگرانی میں رات کو سب صاف کرواتی تھی۔۔۔
آپ کے ساتھ ہی سونا۔۔۔۔ وہ رونا شروع ہو گیا تھا۔۔۔
بلکل باپ جیسا ضدی کہیں کا۔۔۔۔ چلو۔۔۔۔ وہ اسکا ننھا سا ہاتھ پکڑ کر کمرے میں آٸی۔۔۔۔ تو جناب آرام سے۔۔۔ مزے ۔۔۔ سے ٹانگیں پھیلا کے بیڈ پر لیٹے ہوۓ ٹی وی دیکھ رہے تھے۔۔۔۔
احان ۔۔۔ یار اتنا تو کیا کریں۔۔۔۔ میسم کو ساتھ نہیں سلا سکتے۔۔۔۔ میری جان کھا رہا جا کر۔۔۔۔ آپ کا بھی ہے یہ بیٹا۔۔۔۔
بلکل بلکل۔۔۔۔ ادھر آ۔۔ میرے ہیرو۔۔۔ وہ سیدھا ہوا تھا۔۔۔۔۔
یار یہ خود گیا تھا باہر ۔۔۔میں اسے روکتا رہا۔۔۔ تم نے لڈلا جو اتنا رکھا ہوا۔۔۔۔
اجاٶ۔۔۔۔ پھر ۔۔۔ موٶی سٹارٹ کروں میں۔۔۔
اچھا کون سی ہے۔۔۔۔ ہانیہ نے میسم کو بستر میں لیٹاتے ہوۓ پوچھا۔۔۔۔
بڑی ہی ڈفرنٹ سٹوری یار۔۔۔۔۔ احان کی آنکھوں میں شرارت آ گٸی تھی۔۔۔۔ وہ ایسے ہی اسے تنگ کرتا رہتا تھا۔۔۔
ایک معصوم سا لڑکا گھر میں ۔۔۔ اکیلا ہوتا۔۔۔۔ وہاں اس کے گھر ایک چڑیل آ جاتی۔۔۔۔ آتی تو اس کا خون پینے۔۔۔ پر اسکا دل آجاتا اس پر۔۔۔۔ ابھی اس کی بات پوری نہیں ہوٸی تھی کہہ۔
ہانیہ نے تکیہ اٹھا کر احان کو مارنا شروع کر دیا۔۔۔۔ وہ احان کو مار رہی ۔۔۔ تھی۔۔۔ احان نے دوسرا تکیہ اٹھا لیا تھا۔۔۔ اب دونوں ایک دوسرے کو مار رہے تھے۔۔۔۔ میسم خوش ہو کر بیڈ پر اچھل رہا تھا۔۔۔۔ ۔۔ تالیاں بجا رہا تھا۔۔۔۔۔
ہیرو آجا بابا ساتھ۔۔۔ احان نے میسم کو چھوٹا تکیہ اٹھاتے دیکھا تو کہا۔۔۔۔
نو۔۔۔۔ مما۔۔۔۔۔ وہ ہانیہ کے ساتھ مل کر احان کو مارنے لگا تھا۔۔۔۔۔
تینوں کے قہقے باہر سے گزرتے حیدر کی گہری مسکراہٹ کا سبب بن گیے تھے۔۔۔۔۔۔

–**–**–
ختم شد
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: